مولانا فضل الرحمان کے تحفظات کو شہباز شریف کی ملاقات میں دور کردیا گیاہے ، پرویز ..
تازہ ترین : 1
مولانا فضل الرحمان کے تحفظات کو شہباز شریف کی ملاقات میں دور کردیا ..

مولانا فضل الرحمان کے تحفظات کو شہباز شریف کی ملاقات میں دور کردیا گیاہے ، پرویز رشید ، نواز شریف بھی ان سے ملاقات کرینگے کیونکہ سیاست میں کبھی بھی دروازے بند نہیں ہوتے ،ملک میں 26ہزار مدارس ہیں جنہیں ہم سے چھین لیا گیا انہیں واپس لینگے اور ملک کو نظریاتی بنیادوں پر اس کی شناخت دینگے ،افغانستان سے معاملات بہتری کی جانب بڑھ رہے ہیں جو دونوں ملکوں میں دہشتگردی کے خاتمے کی نوید ہے ،وفاقی وزیر اطلاعات،لال مسجد کے سابق خطیب مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر سے زیادہ طاقتور نہیں اگر ان کیخلاف کارروائی ہوسکتی ہے تو مولانا عبدالعزیز بھی کارروائی سے نہیں بچ پائینگے ، ہم بندوق والوں سے الجھ رہے ہیں فی الحال ہم بندوق والوں سے ہی نمٹیں گے ، تقریر کرنے والوں سے نمٹینے کی باری بعد میں آئیگی ، عمران خان کو جوڈیشل کمیشن کے قیام کی صورت میں شادی کا تحفہ دینگے ، ان کی جانب سے بجلی کا بل ادا کرنا شادی کے بعد ایک مثبت پیش رفت ہے ، سیمینار سے خطاب، میڈیا سے گفتگو

اسلام آباد( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔10 جنوری۔2015ء )وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات سینیٹر پرویز رشید نے کہا ہے کہ مولانا فضل الرحمان کے تحفظات کو وزیراعلیٰ شہباز شریف کی ملاقات میں دور کردیا گیاہے ، شہباز شریف کی ملاقات کے بعد وزیر اعظم نواز شریف بھی ان سے ملاقات کرینگے کیونکہ سیاست میں کبھی بھی دروازے بند نہیں ہوتے ،ملک میں 26ہزار مدارس ہیں جنہیں ہم سے چھین لیا گیا انہیں واپس لینگے اور ملک کو نظریاتی بنیادوں پر اس کی شناخت دینگے ،افغانستان کے ساتھ معاملات بہتری کی جانب بڑھ رہے ہیں جو دونوں ملکوں میں دہشتگردی کے خاتمے کی نوید ہے ،لال مسجد کے سابق خطیب مولانا عبدالعزیز مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر سے زیادہ طاقتور نہیں اگر ان کیخلاف کارروائی ہوسکتی ہے تو مولانا عبدالعزیز بھی کارروائی سے نہیں بچ پائینگے ، ہم بندوق والوں سے الجھ رہے ہیں فی الحال ہم بندوق والوں سے ہی نمٹیں گے ، تقریر کرنے والوں سے نمٹینے کی باری بعد میں آئیگی ، عمران خان کو جوڈیشل کمیشن کے قیام کی صورت میں شادی کا تحفہ دینگے ، ان کی جانب سے بجلی کا بل ادا کرنا شادی کے بعد ایک مثبت پیش رفت ہے ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے ساؤتھ ایشین فری میڈیا ایسوسی ایشن (سیفما) کے زیر انتظام منعقدہ سیمینار سے خطاب اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔

انہوں نے کہا کہ ملک سے دہشتگردی کو ختم کرنے کیلئے تمام تر ممکنہ اقدامات کررہے ہیں اس حوالے سے جو بھی تجاویز سامنے آئینگی اس کا خیر مقدم کرینگے اب ملک میں تبدیلی کا عمل شروع ہوچکا ہے تبدیلی موسم کی طرح ہی ہوتی ہے اور سولہ دسمبر کے بعد موسم تبدیل ہوچکا ہے اور آنے والے دنوں میں پاکستان ماضی کے پاکستان سے مختلف ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان میں قیام امن کیلئے ضروری ہے کہ خطے کے دیگر ممالک کے ساتھ بہتر تعلقات قائم کئے جائیں افغانستان کے ساتھ معاملات پر بات چیت سولہ دسمبر سے پہلے ہی شروع ہوچکی تھی اور اب ان معاملات میں پیش رفت ہورہی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اس خطے میں تین ارب لوگ بستے ہیں جن کی زندگیوں کا دارومدار رویوں پر ہے ہم امید کرتے ہیں کہ رویوں میں جو تبدیلی شروع ہوچکی ہے یہ مستقبل میں خوش آئند ثابت ہو ۔ ہم نے دہلی ، تہران ، ترغزستان،قازقستان سمیت دیگر کے ساتھ بھی تعلقات کو خوشگوار بناناہے تاکہ خطے میں تیز تر ترقی کے عمل میں ہم بھی شریک ہوسکیں ۔ انہوں نے مدارس اور انتہا پسندوں کے حوالے سے ماضی میں حکومتی تعلقات پر بات کرتے ہوئے کہا کہ شاید ماضی میں وہ نظریات جو ایک خاص سوچ رکھنے والوں کے ہیں وہ ہماری ضرورت تھے اور اب یہ ہماری ضرورت نہیں رہے پہلے ہم دنیا سے کٹے رہے بیجنگ، دہلی اور واشنگٹن کو بھی ہم سے شکایات تھیں اب گلے شکوے دور ہورہے ہیں اور یہ تعاون کی سیاست آگے بڑھتی رہے گی ۔

انہوں نے کہا کہ ملک میں 26ہزار مدارس ہیں جنہیں ہم سے چھین لیا گیا تھا اس اقدام سے درحقیقت ملک بھی ہم سے چھین لیا گیا اب ان مدارس کو واپس لینگے اور اپنا ملک بھی واپس آجائیگا ۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب حکومت نے لشکر طیبہ سمیت تمام کالعدم تنظیموں پر پابندی پر سختی سے عمل شروع کردیا ہے ۔ پسماندہ ترین علاقوں میں ان کی ڈسپنسریاں موجود تھیں جنہیں ختم کرنے کی بجائے انہیں حکومتی قبضے میں لے لیا گیا ہے تاکہ ان تنظیموں کے ذریعے وہاں پر سماجی کاموں کا سلسلہ جاری رہ سکے اگر ان کے کاموں کو روک دیا جائے گا تو پھر تاثر یہ ابھرے گا یہ کالعدم تنظیمیں ٹھیک تھیں اور حکومت غلط تھی لہذا ہم اس تاثر کو نہیں ہونے دینا چاہتے ۔

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید کا کہنا تھا کہ عمران خان کو شادی پر مبارکباد پیش کرتا ہوں انہیں جوڈیشل کمیشن کا تحفہ دینگے انہوں نے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ پی ٹی آئی کے ساتھ جاری مذاکرات میں اہم پیش رفت ہوئی ہے اور دونوں اطراف سے لچک دکھائی گئی ہے اور اب جلد ہی قوم کو بھی خوشخبری دینگے ۔ وفاقی وزیر اطلاعات ونشریات نے کہا کہ ہم فی الوقت ہم تقریر کرنے والوں کے ساتھ نہیں لڑنا چاہتے کیونکہ اس وقت بندوق والوں سے جنگ جاری ہے اور ایک وقت میں ایک ہی محاذ پر لڑنا چاہیے ایسے لوگ جو اپنی تقاریر کے ذریعے معاشرے میں گمراہی پھیلا رہے ہیں ان کیخلاف بعد میں کارروائی کی جائیگی ۔

مولانا عبدالعزیز کی گرفتاری کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ ان کی طرف سے دی جانے والی دھمکیاں افسوسناک ہیں اس حوالے سے قانون اپنا راستہ خود اختیار کریگا اگر ملک میں مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر بھی کارروائی سے نہیں بچ سکا تو مولانا عبدالعزیز مشرف سے زیادہ طاقتورنہیں ہیں۔ اس سے قبل سیفما پروگرام میں امتیاز عالم نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں تنگ نظری ، فرقہ پرستی کیخلاف کھڑے ہونے کا وقت آچکا ہے ہم یہ نہیں کہتے کہ مذہبی لوگوں کو سسٹم سے نکال دیں لیکن ان مذہبی لوگوں نے جو نظریات کو غلط رنگ دیا ہے اسے ٹھیک کرنے کی ضرورت ہے ۔

انتہا پسندی مدارس میں بھی ہے کالج اور یونیورسٹیوں میں بھی ہے ہمیں سب انتہا پسند اداروں کیخلاف کارروائی کرنا ہوگی ۔ انہوں نے ضرب عضب کے حوالے سے کہا کہ فوجی آپریشن میں عام اور بڑے دہشتگرد مارے جا رہے ہیں یہ کارروائیاں پورے ملک میں ھیلا دینی چاہیں اور پسند اورناپسندکی تفریق کو ختم کردینا چاہیے ۔ فرحت اللہ بابر نے کہا کہ ملک میں کالعدم تنظیموں کیخلاف کارروائی ناگزیر ہے بظاہر حکومت ان کیخلاف صف آرائی کا دعویٰ کرتی ہے لیکن پنجاب حکومت لشکر طیبہ کیلئے سافٹ کارنر رکھتی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ آئینی ترمیم کا معاملہ آسان نہیں تھا تاہم ملکی استحکام اور دہشتگردی کے خاتمے کیلئے ہم راضی ہوئے ۔ میجر جنرل ریٹائرڈ طلعت مسعود نے کہا کہ اصل جنگ نظریات کی ہے جسے آسانی سے تبدیل نہیں کیا جاسکتا اس جنگ میں اہم عنصر تعلیم ، میڈیا ، علاقائی ماحول شامل ہے ان میں تبدیلی لانا ہوگی ہمیں تقریباً دس برس تک نظریات کی تبدیلی کی جنگ لڑنا ہوگی مدارس کے ساتھ ساتھ دیگر ادارں میں بھی اصلاحات لانی ضروری ہیں ۔ ضیاء الدین نے کہا کہ ایسے عناصر جو دہشتگردی میں ملوث ہیں ان کی فنڈنگ کو روک کر ان کیخلاف کارروائی کی جانی چاہیے جبکہ دہشتگردی کے خاتمے کیلئے پاکستان افغانستان میں لوگوں کی آمدورفت کے حوالے سے بھی ٹھوس اقدامات ناگزیر ہیں ۔

وقت اشاعت : 10/01/2015 - 08:51:41

اپنی رائے کا اظہار کریں