وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کھادوں پر ٹیکس میں کمی ‘ سرکاری ملازمین کے کنوینس ..
تازہ ترین : 1

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا کھادوں پر ٹیکس میں کمی ‘ سرکاری ملازمین کے کنوینس الائونس اور صنعتوں کے فروغ کے حوالے سے سینٹ کی مجموعی طور پر 42 سفارشات کی کلی اور جزوی طور پر منظوری کا اعلان

ٹیکس ریلیف کی ملک کی 70 سالہ تاریخ میں مثال نہیں ملتی، پٹرول‘ ڈیزل پر 30 ارب روپے کا کوئی اضافی ٹیکس نہیں لگایا گیا، پٹرولیم لیوی کی اپر حد میں اضافہ قانونی تقاضا تھا، ملک میں غربت کے خاتمے کے لئے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے فنڈز تین گنا بڑھا دیئے گئے ہیں بجٹ تجاویز کو بہتر بنانے اور رہنمائی پر اپوزیشن سمیت تمام ارکان کے شکرگزار ہیں گریڈ ایک تا 16 کے دیر تک کام کرنے والے ملازمین کے کنوینس الائونس میں 50 فیصد اضافہ ،کم آمدن والوں کے لئے 25 لاکھ روپے تک کے مکان کے ٹیکس میں 50 فیصد کمی، نان فائلر پر 40 لاکھ روپے تک کی جائیداد خریدنے کی حد کو بڑھا کر 50 لاکھ کیا جارہا ہے وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل کا قومی اسمبلی میں بجٹ پر بحث سمیٹتے ہوئے اظہار خیال

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 مئی2018ء) وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے کھادوں پر ٹیکس میں کمی ‘ سرکاری ملازمین کے کنوینس الائونس اور صنعتوں کے فروغ کے حوالے سے سینٹ کی مجموعی طور پر 42 سفارشات کی کلی اور جزوی طور پر منظوری کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمارا مقصد ملک کا مالیاتی استحکام اور جمہوریت کا فروغ ہے‘ غریب اور کم آمدنی والے افراد کے لئے ٹیکسوں میں جو ریلیف دیا گیا ہے ملکی تاریخ میں اس کی مثال نہیں ملتی‘ بجٹ میں زرعی شعبے اور کاشتکاروں کی فلاح و بہبود کے لئے بھی تاریخی اقدامات اٹھائے گئے ہیں۔

منگل کو قومی اسمبلی میں وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے بجٹ 2018-19ء پر بحث کو سمیٹتے ہوئے کہا کہ بجٹ تجاویز کو بہتر بنانے اور رہنمائی پر اپوزیشن سمیت تمام ارکان کے شکرگزار ہیں‘ اس ایوان کے منتخب اراکین کو مالیاتی تجاویز پر رائے دینے کا حق حاصل ہے۔ انہوں نے سندھ کے وزیراعلیٰ کی طرف سے تین ماہ کا بجٹ پیش کرنے پر شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ سمجھ سے بالاتر ہے کہ انہوں نے تین ماہ کا بجٹ کیوں پیش کیا اور تین ماہ بعد تنخواہوں میں اضافے کے حوالے سے ملازمین کیا کریں گے۔

انہوں نے کہا کہ بلوچستان کے وزیراعلیٰ نے ایک ماہ کا بجٹ پیش کیا ہے ہم ان کے بھی شکرگزار ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا مقصد ملک کی فلاح اور جمہوریت کا استحکام ہے۔ انہوں نے کہا کہ سینٹ کی سفارشات ہمارے لئے بے حد قابل احترام ہیں ہم چیئرمین سینٹ اور سینٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کے چیئرمین فاروق ایچ نائیک سمیت تمام ایوان بالا کے ارکان کا شکریہ ادا کرتے ہیں جنہوں نے جماعتی وابستگیوں سے بالاتر ہو کر157 سفارشات تیار کرکے ہمیں ارسال کیں۔

ان سفارشات میں سی108 کا تعلق پی ایس ڈی پی سے تھا جسے منصوبہ بندی کمیشن کو بھجوا دیا گیا ہے اور باقی 49 سفارشات میں سے 42 سفارشات کلی اور جزوی طور پر منظور کرلی گئی ہیں۔ حکومت نے بجٹ میں ہر شعبہ زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد کو ٹیکس میں جو ریلیف دیا ہے اس کی ملک کی 70 سالہ تاریخ میں مثال نہیں ملتی۔ پٹرول‘ ڈیزل پر 30 ارب روپے کا کوئی اضافی ٹیکس نہیں لگایا گیا۔

پٹرولیم لیوی کی اپر حد میں اضافہ قانونی تقاضا تھا۔ ملک میں غربت کے خاتمے کے لئے بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کے فنڈز تین گنا بڑھا دیئے گئے ہیں۔ جب ہم آئے تھے تو بیت المال کا بجٹ دو ارب روپے تھا جو اب چھ ارب روپے ہو چکا ہے اور آئندہ مالی سال میں دس ارب روپے تک بڑھا دیا گیا ہے۔ ملک میں بجلی کے صارفین کو سستی بجلی کی فراہمی کے لئے 150 ارب روپے کی سبسڈی دی جارہی ہے۔

حکومت کی بہتر پالیسیوں کی وجہ سے ملکی برآمدات تیزی سے بڑھ رہی ہیں۔ مارچ میں برآمدات 24 فیصد اور اپریل میں 18 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ درآمدات میں مسلسل کمی لا رہے ہیں ‘ اپریل میں ملکی برآمدات صرف دو فیصد بڑھی ہیں۔ جب ہم نے حکومت سنبھالی تو ملک میں اٹھارہ اٹھارہ گھنٹے کی لوڈشیڈنگ تھی‘ پانچ سالوں میں حکومت نے 12230 میگاواٹ بجلی کا اضافہ کیا۔

گردشی قرضوں کا سلسلہ ختم کرنے کے لئے اقدامات کئے اور آنے والے دو ہفتوں میں گردشی قرضے مزید کم کرنے کے لئے اقدامات کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اپوزیشن نے ملکی قرضوں کے حوالے سے جو بات کی ہے تو میں وضاحت کرنا چاہتا ہوں کہ یہ قرضے بجلی کی پیداواری صلاحیت بڑھانے اور ملکی انفراسٹرکچر بہتر بنانے کے لئے استعمال کئے گئے ہیں۔ وزیر خزانہ نے کہا کہ برآمدات بڑھانے کے لئے وزیراعظم کی خصوصی ہدایت پر نیا برآمدی پیکج دے رہے ہیں۔

بجٹ میں پہلے ہی 24 ارب روپے اس پیکج کے لئے مختص کئے گئے ہیں مزید ضرورت پڑی تو سپلیمنٹری گرانٹ سے مزید رقم فراہم کی جائے گی۔ آئی ٹی کے شعبے کے لئے مراعات کا اعلان کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ آئی ٹی خدمات پر کیش ایوارڈ کا اجراء کر رہے ہیں۔ وفاقی دارالحکومت میں آئی ٹی پر سیلز ٹیکس کی شرح 15 فیصد سے کم کرکے پانچ فیصد کی جارہی ہے۔ صوبوں کو بھی اس حوالے سے اقدامات کرنے کا کہا جارہا ہے۔

ملک میں زراعت کے شعبے کو ترقی دینے کے لئے مزید اقدامات کر رہے ہیں۔ تمام کھادوں پر ٹیکس کی شرح کم کرکے دو فیصد کردی گئی ہے۔ کھیتوں میں جپسم کی کمی پوری کرنے کے لئے برآمدات پر 20 فیصد ڈیوٹی عائد کی جارہی ہے تاکہ ملکی جپسم کی صنعت کو تقویت ملے۔ سرکاری ملازمین کے لئے مراعات کا اعلان کرتے ہوئے وزیر خزانہ نے کہا کہ گریڈ ایک سے گریڈ 16 تک کے ملازمین کے لئے دیر تک کام کرنے والے ملازمین کے کنوینس الائونس میں 50 فیصد اضافہ کیا جارہا ہے۔

کم آمدن والوں کے لئے 25 لاکھ روپے تک کے مکان کے ٹیکس میں 50 فیصد کمی کی جارہی ہے۔ نان فائلر پر 40 لاکھ روپے تک کی جائیداد خریدنے کی حد کو بڑھا کر 50 لاکھ کیا جارہا ہے۔ ماچس سازی کی صنعت کے لئے سیلز ٹیکس کے استثنیٰ کا اعلان کیا جارہا ہے تاکہ کاروباری سرگرمیوں کو فروغ ملے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 15/05/2018 - 13:20:11

اس خبر پر آپ کی رائے‎