ایون فیلڈ ریفرنس : مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے واجد ضیا ءپر جرح مکمل کر لی
تازہ ترین : 1

ایون فیلڈ ریفرنس : مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے واجد ضیا ءپر جرح مکمل کر لی

ایون فیلڈ ریفرنس : مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے واجد ضیا ءپر جرح مکمل ..
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔17 اپریل۔2018ء) ایون فیلڈ ریفرنس میں مریم نواز اور کیپٹن(ر)صفدر کے وکیل امجد پرویز نے 5 ویں روز سربراہ جے آئی ٹی واجد ضیا ءپر جرح مکمل کر لی،احتساب عدالت نے مریم نواز اور کیپٹن صفدر کے وکیل امجد پرویز کی جانب سے جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاءپر جرح مکمل ہونے کے بعد کیس کی مزید سماعت 20 اپریل تک ملتوی کر دی جبکہ عدالت نے نیلسن اور نیسکول کی دستاویزات کوعدالتی ریکارڈ کا حصہ بنانے کیلئے نیب پراسیکیوٹر مظفرعباسی کی جانب سے دائر درخواست پر 20 اپریل کو فریقین کے دلائل طلب کر لئے جبکہ عزیزیہ سٹیل ملز ریفرنس میں جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاءکوبیان ریکارڈ کرانے کیلئے 23اپریل کو طلب کر لیا ہے۔

احتساب عدالت کے جج محمد بشیر نے نیب ریفرنسز کی سماعت کی۔ استغاثہ کے گواہ واجد ضیا ءنے بی وی حکام کو لکھے گئے تین ایم ایل اے عدالت میں پیش کر دئیے۔ واجد ضیا نے احتساب عدالت میں اپنے بیان میں کہا نیلسن ، نیسکول کی تصدیق شدہ دستاویزات ، بینی فشری کا ایڈریس ، رجسٹرڈ ڈائریکٹر ، نامزد ڈائریکٹر اور شیئر ہولڈر کی تفصیلات مانگیں لیکن ایم ایل اے کا جواب آج تک موصول نہیں ہوا۔

واجد نے عدالت کو بتایا کہ جے آئی ٹی نے بی وی آئی حکام کو تین ایم ایل اے لکھے، پہلا ایم ایل اے 20مئی 2017، دوسرا 31 مئی 2017جبکہ تیسرا ایم ایل اے 23 جون 2017کو لکھا گیا ، یہ بات درست نہیں کہ بی وی آئی نے جے آئی ٹی کے 31مئی 2017کے ایم ایل اے کو مسترد کر دیا تھا۔گواہ واجد ضیا نے عدالت کو بتایا کہ 31مئی کے ایم ایل اے میں دستاویزات کی کنفرمیشن، ویری فکیشن اور سرٹیفکیشن کی درخواست نہیں کی گئی تھی ، جے آئی ٹی نے 23 جون 2017کے ایم ایل اے میں غلطی سے 31مئی کے ایم ایل اے کو مستردہ شدہ لکھا ، بی وی آئی حکام کی طرف سے 16جون 2017کو ای میل پر جواب دیا گیا، جے آئی ٹی نے بی وی آئی کی 16جون 2017کی ای میل کو رپورٹ کا حصہ نہیں بنایا۔

احتساب عدالت نے مریم نواز اور کیپٹن صفدر کے وکیل امجد پرویز کی جانب سے جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاءپر جرح مکمل ہونے کے بعد کیس کی مزید سماعت 20 اپریل تک ملتوی کر دی جبکہ عدالت نے نیلسن اور نیسکول کی دستاویزات کوعدالتی ریکارڈ کا حصہ بنانے کیلئے نیب پراسیکیوٹر مظفرعباسی کی جانب سے دائر درخواست پر 20 اپریل کو فریقین کے دلائل طلب کر لئے جبکہ عزیزیہ سٹیل ملز ریفرنس میں جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاءکوبیان ریکارڈ کرانے کیلئے 23اپریل کو طلب کر لیا ہے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 17/04/2018 - 16:29:07

اس خبر پر آپ کی رائے‎

متعلقہ عنوان :