غلامانہ سوچ کے حامل تبدیلی نہیں لاسکتے‘ملک میں بہت بڑا انتشار دیکھ رہا ہوں،ہم ..
تازہ ترین : 1

غلامانہ سوچ کے حامل تبدیلی نہیں لاسکتے‘ملک میں بہت بڑا انتشار دیکھ رہا ہوں،ہم سب کو اس انتشارسے بچنا چاہیے۔نوازشریف

غلامانہ سوچ کے حامل تبدیلی نہیں لاسکتے‘ملک میں بہت بڑا انتشار دیکھ ..
اسلام آباد(اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔17 اپریل۔2018ء) مسلم لیگ(ن)کے قائد نواز شریف نے کہا ہے کہ وہ لوگ کیا تبدیلی لائیں گے جن کی سوچ غلامانہ ہے،سب کو گارنٹی دیتا ہوں کہ جیت اورہماری اور عوام کی ہوگی۔منگل کو احتساب عدالت میں صحافیوں سے گفتگوکرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ چاہتا ہوں کہ پاکستان کیلئے سب مل کرآگے چلیں،ہم سب کودرگزرکرکے آگے چلنے کی ضرورت ہے۔

انہوں نے کہا کہ ملک کے وسیع ترمفاد کیلئے ہم نے درگزرکیا دھرنا درگزرکیا، سمجھوتا نہیں کیا لیکن ملک کی بہتری کیلئے درگزر کیا،اب دوسری طرف سے بھی درگزر ہونا چاہیے۔۔نواز شریف نے کہا کہ زبان بندی والے دور اب نہیں رہے،آپ کسی کی زباں بندی نہیں کرا سکتے اگر یہی صورت حال رہی تو مستقبل میں بہت بڑا انتشار دیکھ رہا ہوں،ہم سب کو اس انتشارسے بچنا چاہیے۔

سابق وزیراعظم نے کہا کہ قانونی حدود میں رہتے ہوئے احتجاج سب کا حق ہے،جو بھی انسانی حقوق اور ظلم کیخلاف بات کر رہا ہے ہم اس سے متفق ہیں ،یہ چند لوگوں کا نہیں 22 کروڑ عوام کا ملک ہے۔ عدالتی فیصلے میں بتایا جائے عدلیہ کے خلاف بات کرنے کا کیا مطلب ہے؟ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ سیکورٹی کا خود بندوبست کرتا ہوں، میری حفاظت اللہ کے ہاتھ میں ہے، عوام کی بات نہ سنی گئی تو بڑے پیمانے پر انتشار دیکھ رہا ہوں۔

انہوں نے کہا کہ مجھے چھوڑ کر جانے والے میرے تھے ہی نہیں، دنیا بدل گئی ہے ہمیں بھی بدلنا ہوگا، ہمیں پرانی غلطیاں نہیں دہرانا چاہئیں۔۔نواز شریف نے کہا کہ وزارت عظمیٰ پھولوں کی سیج نہیں، منتخب حکومتوں نے تاریخ کے بڑے فیصلے کیے، ایٹمی دھماکے بھی مکمل طور پرسویلین حکومت کا فیصلہ تھا۔سابق وزیر اعظم نے کہا کہ 2013ءمیں ہم نے رائیونڈ روڈ کشادہ کرنے کا حکم دیا جو نیب کیس بن گیا،1990ءمیں موٹر وے شروع ہوئی اس پربھی ریفرنس بننا چاہیے، ایٹمی دھماکے کیے اس پر بھی میرے خلاف ریفرنس بنا دیں۔

ملک میں غیر مہذب پابندیاں نہیں لگائی جاسکتیں، لوگوں کی زبان بندی کی گئی، میری بھی زبان بندی کی گئی، یاد رکھیں جتنی مرضی زبان بندی کرلیں جیت ہماری ہوگی۔۔نواز شریف نے یہ بھی کہا کہ آج جتنے محب وطن ہیں وہ غدار ہیں، میں چاہتا تھا کہ سب مل کر چلیں، جو در گزر کیا اس پر افسوس نہیں، ہم نے درگزر کیا سمجھوتہ نہیں کیا، دوسری طرف بھی در گزر کرنا چاہیے تھا، افسوس کہ ملک میں دھرنے کرائے گئے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 17/04/2018 - 14:00:08

اس خبر پر آپ کی رائے‎

متعلقہ عنوان :