عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا اوراگر بنائیں گے تو جوابدہ ہونا پڑیگا،عدالتوں کا ..
تازہ ترین : 1

عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا اوراگر بنائیں گے تو جوابدہ ہونا پڑیگا،عدالتوں کا کام ڈیڈ لائن دینا نہیں ہوتا‘ رانا مشہود خان

عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا اوراگر بنائیں گے تو جوابدہ ہونا پڑیگا،عدالتوں ..
لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 13 جنوری2018ء) صوبائی وزیر سکولز ایجوکیشن رانامشہود احمد خاں نے کہا ہے کہ عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا اوراگر بنائیں گے تو جوابدہ ہونا پڑے گا،عدالتوں کا کام ڈیڈ لائن دینا نہیں ہوتا، قصور واقعے کا ملزم عدالت کے 36گھنٹوں کا پابند نہیں ،وزیر اعلیٰ پنجاب نے قصور واقعہ کے حوالے سے صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ اور میری سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دیدی ہے جوعوام کو ایسے گھنائونے واقعات سے متعلق آگاہی دینے کے حوالے سے ٹھوس اقدامات کرے گی،تبدیلی کا نعرہ لگانے والے خان صاحب نے خود اپنے نعرے کو دفن کر دیا ہے کیونکہ چیئرمین پی ٹی آئی نے شیروانی اور سہرے کے بعد اب پیر مرشد کا کھیل شروع کردیا ہے۔

وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کے ٹیلنٹ ہنٹ پروگرام کے تحت پنجاب بھر کے سکولوں میں یونین کونسل، تحصیل ، ضلع اور صوبائی سطح پر خادم رسول ؐنعت و قرآت و سیرت نبویؐ تقریری مقابلے منعقد کرائے جارہے ہیں ان مقابلوں میں پرائمری، سکینڈری ، ایلیمنٹری اور ہائرسکینڈری سکولوں کے لاکھوں بچے نذرانہ عقیدت پیش کریں گے۔وہ ہفتے کو ڈائریکٹوریٹ جنرل پبلک ریلیشنز میں پریس کانفرنس سے خطاب کر رہے تھے ۔

صوبائی وزیر نے کہا ہے کہ ان مقابلوں میں حصہ لینے والوں کو سرٹیفکیٹس دیئے جائیں گے جبکہ نمایاںپوزیشن حاصل کرنے والے طلبا و طالبات میں کیش پرائزز تقسیم کئے جائیں گے۔18جنوری کو ایک پر وقار تقریب میں صوبائی سطح پر اول پوزیشن حاصل کرنے والے ونرز کو ایک ایک لاکھ روپیہ، دوئم پوزیشن حاصل کرنے والے ونرز میں 75،75ہزار روپے اورسوئم پوزیشن حاصل کرنے والوں میں 50،50ہزار روپے کے نقد انعامات دیئے جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ کے ٹیلنٹ ہنٹ پروگرام کے تحت پنجاب بھر کے سکولوں میںزیور تعلیم سے آراستہ ہونے والے طلباء و طالبات میں مقابلہ نعت ، قرات و سیرت نبویؐ منعقد کروانے کا مقصد بچوں کو دین سے آگاہی دینا اوران میں مذہبی جذبات اجاگر کرنا ہے ۔انہوںنے کہا کہ قصو ر سانحہ پر پوری قوم دکھی ہے،اس واقعہ کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے۔وزیر اعلیٰ شہباز شریف کی ہدایت پر اس گھنائونے فعل کے ذمہ داروں کومنطقی انجام تک پہنچانے کیلئے تشکیل دی جانے والی جے آئی ٹی اپنا کام کر رہی ہے۔

مقتول بچی کے والد کے کہنے پر جے آئی ٹی کا سربراہ بھی تبدیل کر دیا گیا ہے۔قصور واقعہ کے ذمہ داران کی جلد سے جلدگرفتاری کیلئے وزیر اعلیٰ پنجاب نے پانچ اضلاع کی تفتیشی ٹیموں کو قصور میں تعینات کر دیا ہے۔فرانزک ٹیم جدید آلات کے ذریعے اپنے فرائض سر انجام دے رہی ہے۔انشاء اللہ تعالیٰ بچی کا قاتل جلد پکڑا جائے گا۔انہوں نے بتایا کہ وزیر اعلیٰ پنجاب نے قصور واقعہ کے حوالے سے صوبائی وزیر قانون رانا ثناء اللہ اور میری سربراہی میں ایک کمیٹی تشکیل دے دی ہے جوعوام کو ایسے گھنائونے واقعات سے متعلق آگاہی دینے کے حوالے سے ٹھوس اقدامات کرئے گی۔

اس حوالے سے معلوماتی لٹریچر سلیبس میں شامل کرنے کا بھی عندیہ دیا۔ انہوں نے کہا کہ بچے ہمارا سرمایہ ہیںان کی سکیورٹی ہمارا فرض ہے۔ صوبائی وزیر رانا مشہود نے کہا کہ کچھ منفی عناصر کی جانب سے سیاسی دکان چمکائی جا رہی ہے۔میری میڈیا کے نمائندوں کے ذریعے سب سے درخواست ہے کہ قصور سانحہ پر سیاست نہ کریں بلکہ ایسے سفاک درندوں کو بے نقاب کرنے میں حکومت کا ساتھ دیں۔

نجی ٹی وی کے مطابق وزیر سکولزایجوکیشن نے کہا کہ سیاسی معاملات پر رائے دینا عدلیہ کا کام نہیں ، عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا،اگر بنائیں گے تو جواب دہ ہونا پڑے گا۔ عدلیہ کا کوئی لاڈلا نہیں ہوتا اوراگر بنائیں گے تو جوابدہ ہونا پڑے گا،عدالتوں کا کام ڈیڈ لائن دینا نہیں ہوتا، قصور واقعے کا ملزم عدالت کے 36گھنٹوں کا پابند نہیں ، عدلیہ کو اپنے فیصلوں میں آئین و قانون کے تابع رہ کر بولنا چاہیے ،سوموٹو لینے والی عالی شان عدلیہ نے مال روڈ پر احتجاج پر پابندی لگا رکھی ہے جبکہ 17جنوری کو ایک جماعت نے مال روڈ پر احتجاج کا اعلان کر رکھا ہے، ہم مال روڈ جلسے پر عدالت کے سوموٹو کے منتظر ہیں۔

انہوںنے عمران خان کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ تبدیلی کا نعرہ لگانے والے خان صاحب نے خود اپنے نعرے کو دفن کر دیا ہے، کیونکہ شیروانی اور سہرے کے بعد اب چیئرمین پی ٹی آئی نے پیر مرشد کا کھیل شروع کردیا ہے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 13/01/2018 - 21:16:34

اس خبر پر آپ کی رائے‎

متعلقہ عنوان :