سیاسی قوتوں نے یکجہتی کا مظاہرہ نہ کیا تو ہوسکتا ہے قوم دو ہزار اٹھارہ کا الیکشن ..
تازہ ترین : 1
سیاسی قوتوں نے یکجہتی کا مظاہرہ نہ کیا تو ہوسکتا ہے قوم دو ہزار اٹھارہ ..

سیاسی قوتوں نے یکجہتی کا مظاہرہ نہ کیا تو ہوسکتا ہے قوم دو ہزار اٹھارہ کا الیکشن نہ دیکھ سکے ،

مولانا فضل الرحمن سیاسی جماعتیںسپیکر کے ذریعے حادثے کو ٹالنے کی کوشش میں ہیں، امریکہ اور بھارت کے مفادات ایک ہیں، امریکہ سیاہی کی بجائے خون سے سرحدوں کی نئی لکیریں کھینچ رہا ہے، سی پیک کی سزا پاکستان کو دی جارہی ہے، عدالتی فیصلوں سے سیاسی عدم استحکام آیا ،کشمیری 70سال ایک مشکل سے گزرے رہے ہیں، کشمیریوں کو اقوام عالم، اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل نے دیا،امریکہ نئی صدی میں نئی جغرافیائی تقسیم چاہتا ہے جو امریکی مفادات کے تابع ہوں ، افغانستان، شام، عراق، یمن کی صورت میں اور اب سعودی عرب اور افریقی ممالک پر یہ خطرات منڈلا رہے ہیں،ہمارے نیوکلیئرپروگرام کوتباہ کرنے کی منصوبہ بندی ہورہی ہے،فاٹا کا خیبرپختونخوا سے انضمام ہونا چاہیے یا نہیں اس پراختلاف رائے ہے، ہم پاکستان کے آئین ، جمہوریت، پارلیمنٹ کے ساتھ ہیں، جمہوری عمل نہیں رکنا چاہیے، مفاہمت کی بنیاد پر سیاست آگے بڑھانی چاہیے، ہر جماعت سخت موقف اختیار کر رہی ہے آئندہ الیکشن کے بعد ان کی حکومت بن جائے جمعیت علماء اسلام(ف) کے سربراہ و چیئرمین کشمیر کمیٹی مولانا فضل الرحمن کا نیشنل پریس کلب میں میٹ دی پریس سے خطاب

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 14 نومبر2017ء) جمعیت علماء اسلام(ف) کے سربراہ و چیئرمین کشمیر کمیٹی مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ اگر سیاسی قوتوں نے یکجہتی کا مظاہرہ نہ کیا تو ہوسکتا ہے قوم دو ہزار اٹھارہ کا الیکشن نہ دیکھ سکے سیاسی جماعتیںسپیکر کے ذریعے حادثے کو ٹالنے کی کوشش میں ہیں اور اگر ایسا حادثہ ہوبھی گیا تو بھی ہم جمہوریت کے ساتھ ہیں، امریکہ اور بھارت کے مفادات ایک ہیں امریکہ سیاہی کی بجائے خون سے سرحدوں کی نئی لکیریں کھینچ رہا ہے اس کے لئے وہ مسلم ملکوں میں اندرونی سیاسی عدم استحکام پیدا کررہا ہے جس کے لئے سی پیک کی سزا پاکستان کو دی جارہی ہے عدالتی فیصلوں سے سیاسی عدم استحکام آیا ،کشمیری 70سال ایک مشکل سے گزرے رہے ہیں اور ہندوستان ہے کہ اس ہٹ دھرمی کا سلسلہ ارتکاب کر رہا ہے، کشمیریوں کو اقوام عالم، اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل نے دیا، راہ حق انہیں دینے کو تیار نہیں، گزشتہ 15,16سے امریکیوں کی ترجیحات کو دیکھ بھی رہے ہیں اب بھی کوئی ان کی ترجیحات کو نہ سمجھے، تو وہ امت مسلمہ کی راہبری کا حقدار نہیں، امریکہ نئی صدی میں نئی جغرافیائی تقسیم چاہتا ہے جو امریکی مفادات کے تابع ہوں ، افغانستان، شام، عراق، یمن کی صورت میں اور اب سعودی عرب اور افریقی ممالک پر یہ خطرات منڈلا رہے ہیں،ہمارے نیوکلیئرپروگرام کوتباہ کرنے کی منصوبہ بندی ہورہی ہے،ہماری امداد بند اوربھارت کودی جا رہی ہے، فاٹا کا خیبرپختونخوا سے انضمام ہونا چاہیے یا نہیں اس پراختلاف رائے ہے، ہم پاکستان کے آئین ، جمہوریت، پارلیمنٹ کے ساتھ ہیں، جمہوری عمل نہیں رکنا چاہیے، مفاہمت کی بنیاد پر سیاست آگے بڑھانی چاہیے، ہر جماعت سخت موقف اختیار کر رہی ہے آئندہ الیکشن کے بعد ان کی حکومت بن جائے، خدا نہ کرنے قوم 2018 الیکشن نہ دیکھ سکے۔

ضروری ہے سیاسی جماعتیں بات کریں تاکہ خدانخواستہ کوئی حادثہ نہ ہو، سیاسی لوگوں کوایک دوسرے کوسننا چاہیے۔وہ منگل کے روز نیشنل پریس کلب میں میٹ دی پریس سے خطاب کر رہے تھے ۔ جمعیت علماء اسلام(ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمان نے کہا کہ پورا عالم اسلام اس وقت آزمائش اور کرب کے صدمے سے گزر رہا ہے، ہم اس حوالے سے سائوتھ ایشیاء کا حصہ ہیں، انڈیا اور پاکستان کے تعلقات ،پاک افغان تعلقات اور خطے کے اہم ممالک چائنہ، انڈیا، ایران، افغانستان، ہم ان سب کو درپیش صورتحال پوری قوم کیلئے نمائندگان قوم کیلئے اور مقتدر حلقوں کیلئے لمحہ فکریہ ہے، ساری مشکلات پر مستزاد ہم ملک کے اندر داخلی یکجہتی سے بھی محروم ہیں، مشترکہ اور قومی سوچ کے تحت ہم مسائل کا تجزیہ کرنے اور مشکلات سے نکلنے کے طالب بھی نہیں رہے، کشمیری 70سال ایک مشکل سے گزرے رہے ہیں اور ہندوستان ہے کہ اس ہٹ دھرمی کا سلسلہ ارتکاب کر رہا ہے، کشمیریوں کو اقوام عالم، اقوام متحدہ اور سلامتی کونسل نے دیا، راہ حق انہیں دینے کو تیار نہیں، کبھی وہ مذاکرات روک دیتا ہے، کبھی سرحدات پر کشیدگی پیدا کر دیتا ہے، کشمیر کے اندر پر تشدد اقدامات کرتا ہے، ریاستی دہشت گردی کا ارتکاب کرتا ہے اور اس وقت خطے میں ہندوستان پاکستان کے ساتھ کشیدگی پیدا کرتا ہے تو بھی سوچ سمجھ کر پیدا کرتا ہے، اس وقت خطے میں امریکہ اور ہندوستان کا مفادات مشترکہ ہیں، امریکہ چین کے نئے اقتصادی ویژن ، فلسفے کو فروغ دینے میں رکاوٹ دینا چاہتا ہے، سی پیک کی صورت میں چین کی اقتصادی سیڑھی پاکستان بنا، چنانچہ ہندوستان پاکستان کے اقتصادی سیڑھی کو تاریک بنانے کی کوشش کر رہا ہے، گزشتہ 15,16سے امریکیوں کی ترجیحات کو دیکھ بھی رہے ہیں اب بھی کوئی ان کی ترجیحات کو نہ سمجھے، تو وہ امت مسلمہ کی راہبری کا حقدار نہیں، امریکہ نئی صدی میں نئی جغرافیائی تقسیم چاہتا ہے جو امریکی مفادات کے تابع جغرافیائی لکیریں سیاست سے نہیں خون سے کھینچی جاتی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہر ملک میں عدم استحکام پیدا کرنا اور عدم استحکام پیدا کرنے کیلئے سیاسی عدم استحکام پیدا کرنا شامل ہیں، افغانستان، شام، عراق، یمن کی صورت میں اور اب سعودی عرب اور افریقی ممالک پر یہ خطرات منڈلا رہے ہیں، چند ماہ پہلے میں نے کہا تھا کہ پاکستان کو غیر مستحکم کرنے کیلئے آغاز ہمارے سیاسی داخلی بحران سے کیا جا رہا ہے، جب سیاسی بحران پیدا ہوا تو عدالتوں کے ذریعے وزیراعظم کو گھر بھیج دیا گیا، فیصلوں کے نتیجے میں ٹرمپ نے پاکستان کو دھمکی دی، پاکستانی علاقوں میں ڈرون حملوں کی دھمکیاں دی گئیں، مالی طور پر دھمکیاں بھی دی گئیں جبکہ دوسری جانب ہندوستان کو پاکستان پر حملے کیلئے جاسوسی ڈرون دیئے گئے 16سال قبل ہمیں کہا گیا تھا کہ دہشت گردی کی جنگ میں شریک نہیں ہوں گے تو ہندوستان فائدہ اٹھائے گا لیکن اب ہندوستان کے ساتھ نیوکلیئر معاہدے ہو رہے ہیں، انڈیا کو ڈرون دیئے جا رہے ہیں،کشمیریوں اور فلسطینیوں کی کاذ کو خطرے میں ڈالا جا رہا ہے،دنیا میں دہشت گردی کے حوالے سے جنگ چھیڑ دی گئی ہے اور آزادی کی تحریکوں کو دہشت گردی کے ساتھ جوڑ دیا گیا ہے، ہم دنیا کے ساتھ چلنا چاہتے ہیں لیکن دنیا ہمارے داخلی مفادات کو تسلیم کرے، اگر ہمیں انکار ہے تو صرف غلامی سے انکار ہے، ہندوستان بھونڈے طریقے سے کشمیر پر بات کرنا چاہتا ہے، ساری دنیا مذاکرات کی بات کر رہی ہے، بین المذاہب مذاکروں کی بات ہو رہی ہے، ہم دھمکیوں سے پاک مذاکرات چاہتے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں مولانا فضل الرحمان نے واضح کیا ہے کہ خدا نہ کرے کہ قوم 2018 کا الیکشن نہ دیکھ سکے،خدانخواستہ کوئی حادثہ نہ ہو جائے،سیاسی جماعتوں کوآپس میں بات کرنی چاہیے،ہماری نیوکلیئرپروگرام کوتباہ کرنے کی منصوبہ بندی ہورہی ہے،ہماری امداد بند اوربھارت کودی جا رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ فاٹا کا خیبرپختونخوا سے انضمام ہونا چاہیے یا نہیں اس پراختلاف رائے ہے۔

مولانا فضل الرحمن نے کہا کہ ہم پاکستان کے آئین ، جمہوریت، پارلیمنٹ کے ساتھ ہیں، جمہوری عمل نہیں رکنا چاہیے، مفاہمت کی بنیاد پر سیاست آگے بڑھانی چاہیے، ہر جماعت سخت موقف اختیار کر رہی ہے آئندہ الیکشن کے بعد ان کی حکومت بن جائے۔ انہوں نے کہا کہ خدا نہ کرنے قوم 2018 الیکشن نہ دیکھ سکے۔ ضروری ہے سیاسی جماعتیں بات کریں تاکہ خدانخواستہ کوئی حادثہ نہ ہو، سیاسی لوگوں کوایک دوسرے کوسننا چاہیے۔

فضل الرحمان نے کہا کہ امریکی اقدامات سے خطے میں عدم استحکام پیدا ہوگا، ہم امریکہ کی غلامی سے انکار اور دوستی کا اقرار کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہماری امداد بند اوربھارت کودی جا رہی ہے۔آج بھارت سے سول نیوکلیئرمعاہدے ہورہے ہیں، ہمارے نیوکلیئرپروگرام کو تباہ کرنے کی منصوبہ بندی ہورہی ہے۔ انہوں نے کہاکہ کہا گیا دہشتگردی کیخلاف اتحاد کا حصہ نہیں بنیں گے تو بھارت کو فائدہ دیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ بھارت نے بھونڈے انداز میں کشمیر پرمذاکرات کی بات کی ہے اور ہمیں ملک میں قومی یکجہتی کی ضرورت ہے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 14/11/2017 - 18:13:02

اپنی رائے کا اظہار کریں