اسلام محبت، امن اور بھارئی چارے کا مذہب، مسلم امہ پرامن بقائے باہمی پر یقین رکھتی ..
تازہ ترین : 1
اسلام محبت، امن اور بھارئی چارے کا مذہب، مسلم امہ پرامن بقائے باہمی ..

اسلام محبت، امن اور بھارئی چارے کا مذہب، مسلم امہ پرامن بقائے باہمی پر یقین رکھتی ہے، استعماری قابض قوتوں نے اپنے زیر قبضہ علاقوں میں خود ہی باہمی امن اور ثقافتی ہم آہنگی کو تباہ کیا،

کشمیر برصغیر پاک و ہند کی تقسیم کا ایک نا مکمل ایجنڈا ہے، کشمیر اور فلسطین سمیت دہشت گردی اور شدت پسندی جیسے مسائل کا حل ہی امن کے قیام کا ضامن ہے،بین المذاہب ہم آہنگی اور ڈائیلاگ ہی مسائل پر قابو پانے کا واحد حل ہے چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی کابین الپارلیمانی تنظیم کے 137 ویں اجلاس سے خطاب

اسلام آباد ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 اکتوبر2017ء) چیئرمین سینیٹ میاں رضا ربانی نے کہا ہے کہ اسلام محبت، امن اور بھارئی چارے کا مذہب ہے اور مسلم امہ پرامن بقائے باہمی پر یقین رکھتی ہے، مختلف عقائد اور ثقافتوں کے مابین امن اور ہم آہنگی کے فروغ کا پرچار کرنے والوں کو یہ بھی یاد رکھنا ہو گا کہ استعماری قابض قوتوں نے اپنے زیر قبضہ علاقوں میں خود ہی باہمی امن اور ثقافتی ہم آہنگی کو تباہ کیا۔

روس کے شہر سینٹ پٹرس برگ میں منعقدہ 137 ویں بین الپارلیمانی تنظیم کے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے میاں رضاربانی نے کہا کہ دنیا میں آج بین العقائد ہم آہنگی اور مختلف لسانی گروہوں کے درمیان مباحثہ کے ذریعے امن کے فروغ پر زور دیا جارہا ہے ۔ تاہم مغربی استعماری قوتوں نے ثقافتوں اور لسانی گروہوں کے درمیان پائی جانے والی ہم آہنگی کو اپنے مفاد کی خاطر بگاڑنے کی کوشش کی ہے جس سے لاقانونیت اور عدم استحکام نے جنم لیا ہے ۔

بین الپارلیمانی تنظیم کے 137 ویں اجلاس میں دنیا بھر سے مختلف پارلیمانوں کے سربراہوں ، اراکین پارلیمنٹ اور مندوبین شریک ہیں۔ چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ میثاق مدینہ انسانی تاریخ کا پہلا دستوری مسودہ تھا جس میں مختلف اقوام کے مابین بقائے باہمی اور امن و بھائی چارے کا پیغام ملتا ہے اور اسلام نے بھی مفاہمت کا پیغام دیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ جب بھی اقوام عالم کے مابین غلط فہمیوں ، عدم استحکام اور عدم برداشت کی فضاء نے جنم لیا تو مختلف مذاہب اور تہذیبوں کے مابین تصادم پیدا ہوا۔

انہوں نے کہا کہ کشمیر برصغیر پاک و ہند کی تقسیم کا ایک نا مکمل ایجنڈا ہے اور کشمیر میں بھارتی افواج کے ہاتھوں ہونے والے مظالم پر عالمی براداری کی خاموشی ایک بہت بڑا سوالیہ نشان اور عالمی قوتوں کا دوہرا معیار ہے۔ میاں رضاربانی نے کہا کہ کشمیر اور فلسطین سمیت دہشت گردی اور شدت پسندی جیسے مسائل کا حل ہی امن کے قیام کا ضامن ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ بین المذاہب ہم آہنگی اور ڈائیلاگ ہی مسائل پر قابو پانے کا واحد حل ہے۔

چیئرمین سینیٹ نے شرکاء کو بتایا کہ مذہبی اور نسلی بنیادوں پر پھیلائی جانے والی نفرتیں جغرافیائی سرحدوں کو اہمیت نہیں دیتیں اور اس سلسلے میں باہمی تعاون کو مزید فروغ دینے کی اشد ضرورت ہے تاکہ اس برائی کو جڑ سے اکھاڑ پھنکا جائے ۔ چیئرمین سینیٹ نے کانفرنس میں شریک اراکین پارلیمنٹ اور مندوبین پر زور دیا کہ ہمیں ماضی سے سبق سیکھنا ہوگا اور پُر امن بقاء باہمی کو فروغ دینے کیلئے اخلاقی معیار ، قدروں اور اُصولوں پر متفق ہونا ہوگا۔

بین الپارلیمانی تنظیم کے پلیٹ فارم ہمیں آج اس بات پر اتفاق کرنا ہوگا کہ بین الاثقافتی ڈائیلاگ کی خاطر نئی راہیں ہموار کی جائیں ۔ اور یہ ڈائیلاگ جمہوری پلیٹ فارم پر کیا جائے جس کا مقصد قانون کی حکمرانی اور انسانی حقوق کی علمبرداری ہونا چاہئے۔ چیئرمین سینیٹ نے ترکی ، ایران ، چین اومان اور بیلا روس کے پارلیمانی وفود کے تباد لہ خیال کیا اور باہمی تعاون کے علاوہ خطے کی تیزی سے بدلتی ہوئی صورتحال، پارلیمانی تعاون اور ایک دوسرے کے تجربات سے فائدہ اٹھانے کیلئے پارلیمانی وفود کے تبادلوں میں تیزی لانے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ چیئرمین سینیٹ نے آئی پی یو کے فورم پر پاکستان کا موقف بھر پور انداز میں پیش کیا جس کی عالمی رہنمائوں نے داد بھی دی۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 16/10/2017 - 21:35:21

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں