این اے 120کے ضمنی الیکشن میں اپوزیشن جماعتوں کے لئے خطرے کی گھنٹی
تازہ ترین : 1
این اے 120کے ضمنی الیکشن میں اپوزیشن جماعتوں کے لئے خطرے کی گھنٹی

این اے 120کے ضمنی الیکشن میں اپوزیشن جماعتوں کے لئے خطرے کی گھنٹی

ن لیگ کوحلقہ میں اس وقت 52اور تحریک انصاف کو 40فیصدووٹرزکی حمایت حاصل ہے،ضمنی الیکشن میں کامیابی کے لئے مریم کو انتخابی مہم کے آخری مرحلہ میں ڈورٹو ڈورجانے کا مشورہ

 لاہور (اردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار ۔ 14ستمبر2017ء): حلقہ کو مذہبی ووٹ تحریک انصاف کے پلڑے میں چلا گیا تو نتیجہ یکسر تبدیل ہو سکتا ہے ،اداروں کی اسیسمنٹررپورٹس سے مریم نواز اور حکومتی پارٹی کے بڑوں کو آگاہ کر دیا گیا ۔سول خفیہ اداروں نے مریم نواز اور حکومتی پارٹی کے بڑوں کو حلقے این اے 120کے ضمنی الیکشن میں اپ سیٹ ہونے کا امکان کر دیا ہے ،اداروں کا اندازہ ہے کہ اس وقت ن لیگ کو 52اور تحریک انصاف کو 40فیصد ووٹرز کی حمایت حاصل ہے ، تاہم انتخابی مہم کے باقی ماندہ دنوں میں موثر مہم چلانے کے باعث یہ تناسب تبدیل ہو سکتا ہے ۔

سرکاری ذرائع جو کہ این اے 120کے بارے میں معلومات رکھتے ہیں ۔ روزنامہ اخبار92کے مطابق سویلین خفیہ اداروں نے حلقے این اے 120کے اندر دو صوبائی اسمبلی حلقوں پی پی 139اور پی پی 140اور اسکی یونین کونسلزمیں فیلڈ سروے کے نتیجہ میں اسیسمنٹ رپورٹس تیار کی ہیں جو کہ لندن میں سابق جو کہ پارٹی کے سابق سربراہ اور نا اہل ہونے والے وزیراعظم نواز شریف ،پنجاب کے چیف ایگزیکٹو مریم نواز کو پیش کر دی گئی ہیں ۔

اسیسمنٹ رپورٹس میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ تحریک انصاف جو حکومتی ووٹ کی شرح میں 12فیصد پیچھے ہے وہ اس ضمنی الیکشن میں اپ سیٹ کر سکتی ہے ۔ اگر عمران خان اور اس کے الیکشن کوآرڈینیٹر انتخابی مہم کے آخری راؤنڈ میں چند دھڑوں کو ساتھ ملانے میں کامیاب ہو گئے ہیں اور حلقے کا مذہبی ووٹ تحریک انصاف کے پلڑے میں چلا گیا تو نتیجہ یکسر تبدیل ہو سکتا ہے ۔

اسیسمنٹ رپورٹس میں حکومتی پارٹی کے کمزور سیاسی علاقوں کو بھی نشاندہی کی گئی ہے اور ان علاقوں کو گرین اور ریڈ میں تقسیم کیا گیا ہے ۔ ن لیگ کے حمایت کے علاقوں کو گرین اور تحریک انصاف کی سپورٹ پاکٹس کو ریڈ ٹیگ کیا گیا ہے جبکہ آزاد گروپ کو وائٹ اور مذہبی ووٹ پاکٹس جنہوں نے ابھی تک کسی حمایت پارٹی کا اعلان نہیں کیا ،ان کو ییلو ٹیگ کیا گیا ہے ۔

حکومتی پارٹی کو وائٹ اور ییلو ٹیگ ووٹ کو فوک کرنے کی تجویذ دی گئی ہے ۔ اپوزیشن کا ان معاملات پر جارحانہ پوائنٹ سکورنگ کرنے کے کی وجہ سے ن لیگ کئی علاقوں میں نوجوان ،خواتین ،اور دیگر ووٹرز سے ہاتھ دھو بیٹھی ہے ۔ رپورٹس میں حکومتی جماعت کو مشورہ دیا گیا ہے کہ وہ تحریک انصاف کے اندر موجود دھڑے جو کہ حلقہ این اے 120کی انتخابی مہم کا حصہ ہیں انکو اپنے ساتھ ملانے کی بھر پور کوشش کی جائے ۔

مریم نواز انتخابی مہم کے آخری مرحلہ میں ریڈ ٹیگ علاقوں میں ڈور ٹو ڈور جائیں اور خصوصا بڑے سیاسی دھڑوں ، آزادی مذہبی گروپس کو کنٹرول کرنے والوں سے براہ راست ملاقات کریں ۔ اگر وہ اپنی جماعت کو اپ سیٹ ہونے سے بچانا چاہتی ہیں ۔ حلقے این اے 120کے 17ستمبر کو ہونے والے ضمنی الیکشن کو مانیٹر کرنے کے لئے ایک وفاقی اور ایک صوبائی سویلین خفیہ ادارے میں اسپیشل سیل قائم کئے گئے ہیں جن کے پاس اضافی افسر،ماتحت عملہ اور فنڈز موجود ہیں ۔ 

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 14/09/2017 - 11:34:08

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں