پاکستان ابتداء ہی سے وفاقی ملک تھا، جب بھی صوبائی خود مختاری یا اپنے وسائل پر کنڑول ..
تازہ ترین : 1

پاکستان ابتداء ہی سے وفاقی ملک تھا، جب بھی صوبائی خود مختاری یا اپنے وسائل پر کنڑول کی بات کی گئی تو انہیں غدار قرار دیا جانے لگا،

رضاربانی بد قسمتی سے مرکزیت پسند سوچ رکھنے والوں نے اس حقیقت کو دبانے کی کوشش کی اور اپنی جڑیں ہی کھوکھلی کر دی گئیں ہمیں تاریخ سے سبق سیکھنا اور آگے بڑھنا ہوگا ، وفاق اندرونی اور بیرونی طور پر ایسے دوراہے پر کھڑا ہے جہاں بنیادی فیصلے کرنے ہونگے، آج ہم جس نہج پر کھڑے ہیں وہاں ملک اداروں کے مابین تصادم کا متحمل نہیں ہو سکتا،چیئرمین سینٹ کا سیمینار سے خطاب

پاکستان ابتداء ہی سے وفاقی ملک تھا، جب بھی صوبائی خود مختاری یا اپنے ..
اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 11 اگست2017ء) چیئرمین سینیٹ میاں رضاربانی نے کہا ہے کہ پاکستان ابتداء ہی سے ایک وفاقی ملک تھالیکن جب بھی صوبائی خود مختاری یا اپنے وسائل پر کنڑول کی بات کی گئی تو انہیں غدار قرار دیا جانے لگا۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار پاکستان کا ادارہ برائے پارلیمانی خدمات (PIPS)میں پاکستان کی پارلیمان کے 70 سالہ تقریبات کے سلسلے میں منعقدہ ایک سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔

چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ یہ ایک حقیقت ہے کہ پاکستان ایک کثیر السانی اور کثیر الا گروہی ملک ہے ۔تاہم بد قسمتی سے مرکزیت پسند سوچ رکھنے والوں نے اس حقیقت کو دبانے کی کوشش کی اور اپنی جڑیں ہی کھوکھلی کر دی گئیں ۔ میاں رضاربانی نے کہا کہ تنوع سے ہی اتحاد و یگانگت پیدا ہوتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اگر ثقافتوں کو پھلنے پھولنے کا موقع دیا جائے تو پاکستانی ثقافت اُبھرے گی ۔

میاں رضاربانی نے کہا کہ اشرافیہ کو یہی نظام پسند تھا تاکہ ایسے شہری پیدا کیے جائیں جن کو اپنی تاریخ کا علم نہ ہو اور اشرافیہ اپنے اقتدار کو طول دے سکے ۔شرکاء سے خطاب کرتے ہوئے میاں رضاربانی نے کہا کہ نصاب کی کتابوں میں بھی تاریخ کو توڑ مروڑ کر پیش کیا گیا اور تاریخ کے وہ حصے جن کا تعلق عوام کی جدوجہد سے تھا کو مسخ کیا گیا ۔ چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ قائد اعظم ؒنے پاکستان کا جو تصور پیش کیا تھا وہ فلاحی ریات کا تصور تھا انہوں نے جمہوری ،وفاقی اور ترقی پسندانہ سوچ رکھنے والی ریاست کا تصور دیا ۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں تاریخ سے سبق سیکھنا ہوگا اور آگے بڑھنا ہوگا کیونکہ وفاق اندرونی اور بیرونی طور پر ایسے دوراہے پر کھڑا ہے جہاں بنیادی فیصلے کرنے ہونگے ۔ایک جمہوری ، وفاقی اور پارلیمانی پاکستان ہی عوام کا فیصلہ ہے ۔ میاں رضاربانی نے خبردار کیا کہ آج ہم جس نہج پر کھڑے ہیں وہاں ملک اداروں کے مابین تصادم کا متحمل نہیں ہو سکتا آئین میں ریاستی اداروں کے حدود کا تعین کیا گیا ہے اور ہر ادارہ اپنی آئینی حدود کے اندر رہتے ہوئے اگر اپنا کردار خوش اسلوبی سے ادا کرے تو ملک ترقی کرے گا۔

انہوں نے بین الاادارہ جاتی ڈائیلاگ کی ضرورت پر بھی زور دیا اور کہا کہ اداروں کے مابین چپقلش کی وجہ سے پاکستان آگے نہیں بڑھ پا رہا تاہم ڈائیلاگ کے ذریعے تحفظات کو دور کیا جا سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ علاقائی صورتحال بھی کافی نازک ہے جبکہ اندرونی سطح پر دہشت گردی ، عدم توازن اور دیگر دوسرے مسائل کا سامنا ہے اور عام شہری کو اس کے حقوق نہیں مل رہے جنہیں حل کرنے کا وقت آگیا ہے ۔

نوجوانوں پر زور دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک کی نوجوان نسل پر بھاری ذمہ داری عائد ہوتی ہے ۔انہوں نے اس اُمید کا اظہار کیا کہ ہم اپنے عزم اور حوصلے کی بنیاد پر ملک کو مسائل سے نکال کر ترقی کی شاہراہ پر گامزن کریں گے ۔ مختلف سوالوں کے جواب دیتے ہوئے چیئرمین سینیٹ نے کہا کہ جمہوری اداروں اور جمہوری روایات کو ملک میں مضبوط نہیں ہونے دیاگیا جبکہ پاکستان کے تصور کو بھی تبدیل کیا گیا اور اس طرح سے ترجیحات بھی تبدیل ہو گئیں اور اختیارات کو اپنے ہاتھ میں لینے کی غرض سے سیاسی اداروں اور سیاستدانوں کی کردار کشی کی گئی ۔ سیمینار میں بڑی تعداد میں مختلف مکتبہ ہائے فکر،طلبا ، سول سوسائٹی کے نمائندوں اور نوجوانان نے شرکت کی ۔ ۔۔۔۔۔اعجاز خان

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 11/08/2017 - 21:42:56

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں