وزیر اعظم کی جانب سے ٹیکس نیٹ میں توسیع کا فیصلہ خوش آئند ہے،میاں زاہد حسین
تازہ ترین : 1

وزیر اعظم کی جانب سے ٹیکس نیٹ میں توسیع کا فیصلہ خوش آئند ہے،میاں زاہد حسین

بہت سے افراد شاہانہ زندگی گزار رہے ہیں مگر ٹیکس ادا نہیں کر رہے ،500ارب کے نئے ٹیکس لگانے سے تاجروں کی پریشانی بڑھے گی،صدر انڈسٹریل الائنس

کراچی (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 07 اگست2017ء)پاکستان بزنس مین اینڈ انٹلیکچولز فور م وآل کراچی انڈسٹریل الائنس کے صدر ،بزنس مین پینل کے سیکریٹری جنرل اور سابق صوبائی وزیر میاں زاہد حسین نے کہا ہے کہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی کی جانب سے ٹیکس نیٹ کو وسیع کرنے اور ٹیکس چوروں کے خلاف کاروائی کا فیصلہ خوش آئند ہے۔ وزیر اعظم نے پارلیمنٹ کے ممبران سمیت ہر متمول شخص کو ٹیکس نیٹ میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے کیونکہ بہت سے افراد شاہانہ زندگی گزار رہے ہیں مگر ٹیکس ادا نہیں کر رہے جس سے ملک ہمیشہ ہی اغیار کا محتاج رہتا ہے۔

انھوں نے کہا کہ ارکان پارلیمنٹ کی ٹیکس ڈائری دیکھ کر تکلیف ہوئی، ٹیکس نہیں دیں گے تو ملک کمزور ہوگا اور فوج لڑنے کے قابل نہیں رہے گی۔ انھوں نے کہا کہ حکومت نے گزشتہ سال کیلئے 3.8 فیصد خسارے کا ہدف مقرر کیا تھا مگر خسارہ جی ڈی پی کے 4.2 فیصد تک بڑھ گیا ہے جو تشویشناک ہے۔ حکومت نے معاملات سدھارنے کی کوشش کی ، بہت سے ٹیکس استثناء ختم کیئے مگر ٹیکسوں میں اضافہ نہ ہو سکا جبکہ جیسے جیسے الیکشن قریب آئے گا حکومت کیلئے سخت اقدامات اٹھانا مشکل ہوتا جائے گا۔

میاں زاہد حسین نے کہا کہ محاصل کے حالات اس قدر تشویشناک ہو گئے ہیں کہ آئی ایم ایف کو امسال پانچ سو ارب روپے کے نئے ٹیکس لگانے کی تجویز دینا پڑی جس سے کاروباری برادری کے مسائل میں اضافہ ہی ہو گا۔ انھوں نے کہا کہ خسارے میں چلنے والے اداروں کی تنظیم نو کی جائے تاکہ حکومت کے خسارے میں کمی آ سکے۔ وزیر اعظم شاہدخاقان عباسی نے کراچی کا انفراسٹرکچر اور ہائیرایجوکیشن کے معیار کو بہتر بنانے، موٹروے اورریلویزکاجدیدنظام لانے سمیت کئی فیصلے کیئے ہیں جو لائق تحسین ہیں۔ انھوں نے کہا کہ ملک میں ایل این جی لانا وزیر اعظم کا کارنامہ ہے اور امید ہے کہ انکی موجودگی میں تمام منصوبے بلا روک ٹوک مکمل ہو جائیں گے جس سے ملک میں توانائی کی صورتحال بہتر ہو جائے گی۔
وقت اشاعت : 07/08/2017 - 18:27:50

اس خبر پر آپ کی رائے‎