برقعے کی وجہ سے حملہ آور کی شناخت نہیں ہوسکی،آئی جی سندھ
تازہ ترین : 1
برقعے کی وجہ سے حملہ آور کی شناخت نہیں ہوسکی،آئی جی سندھ

برقعے کی وجہ سے حملہ آور کی شناخت نہیں ہوسکی،آئی جی سندھ

واقعے کے بعد سے درگاہ سیل ہے، شواہد کو ضائع نہیں ہونے دیا گیا، سارا ریکارڈ محفوظ ہے، شواہد ضائع نہ ہوں،اس لئے احتیاط سے کام کر رہے ہیں،آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی میڈیا سے گفتگو

سیہون(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 17 فروری2017ء)آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے کہا ہے کہ سیہون مزار کے لئے کوئی سیکیورٹی الرٹ نہیں تھا، واقعے کے بعد سے درگاہ سیل ہے، شواہد کو ضائع نہیں ہونے دیا گیا، سارا ریکارڈ محفوظ ہے، شواہد ضائع نہ ہوں،اس لئے احتیاط سے کام کر رہے ہیں۔ آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کا کہنا ہے کہ جمعرات کی شب مزار پر 50 اہلکاروں کی ڈیوٹی ہوتی ہے،شواہد اکھٹے کرنے کے اور سیکیورٹی کامناسب انتظام کرنے کے بعد مزار کو دوبارہ کھول دیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ سیہون مزار کے لئے کوئی سیکیورٹی خطرہ نہیں تھا، سی سی ٹی وی کیمرے کام کر رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ گزشتہ ایک ہفتے سے پورا ملک دہشت گردی کی لپیٹ میں ہے۔آئی جی سندھ نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ حملہ آور برقعے میں تھا جس کی وجہ سے واضح نہیں ہوا کہ وہ مرد تھا یا عورت، اے ڈی خواجہ نے کہا کہ درگاہ سیل ہے، کوئی شواہد ضائع نہیں کیا گیا، سارا ریکاڈر محفوظ ہے، شواہد ضائع نہ ہوں،اس لئے احتیاط سے کام کر رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ نے انکوائری کی ہدایت کی ہے، اے ڈی خواجہ نے کہا کہ 40 سے 50زخمیوں کی حالت تشویشناک ہے۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

Man breaks Guinness record by stuffing 459 straws in his mouth

ایک شخص نے اپنے منہ میں 459 سٹرا رکھ کر گینیز ورلڈ ریکارڈ توڑ دیا

وقت اشاعت : 17/02/2017 - 12:04:40

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں