وہ نہیں کرنا چاہیے جو کل کل سپریم کورٹ میں نواز شریف کررہے ہیں ،ْ عمران خان
تازہ ترین : 1

وہ نہیں کرنا چاہیے جو کل کل سپریم کورٹ میں نواز شریف کررہے ہیں ،ْ عمران خان

ملک کو عظیم بنانے کیلئے ہمیں سب سے پہلے خود کو بدلنا ہوگا ،ْبڑے فیصلے کر نے سے ڈرنے والا بڑا آدمی نہیں بن سکتا ،ْکرپشن کے کینسر کے خاتمے کے بعد ہی ملکی ادارے مضبوط ہوسکتے ہیں ،ْعدلیہ ،ْنیب، ایف بی آر اور پولیس جتنے مضبوط ہوں گے ملک اتنا ہی مضبوط ہوگا ،ْ خطاب

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 نومبر2016ء))پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ ملک کو عظیم بنانے کیلئے ہمیں سب سے پہلے خود کو بدلنا ہوگا ،ْوہ نہیں کر ناچاہیے جو آج کل سپریم کورٹ میں نوازشریف کررہے ہیں ،ْ بڑے فیصلے کر نے سے ڈرنے والا بڑا آدمی نہیں بن سکتا ،ْکرپشن کے کینسر کے خاتمے کے بعد ہی ملکی ادارے مضبوط ہوسکتے ہیں ،ْعدلیہ ،ْنیب، ایف بی آر اور پولیس جتنے مضبوط ہوں گے ملک اتنا ہی مضبوط ہوگا کنونشن سنٹر میں اسٹوڈنٹ کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے عمران خان نے چار خصوصیات بیان کیں جو انسان کو بڑا بناتی ہیں۔

وزیراعظم نواز شریف پر تنقید کرتے ہوئے عمران خان نے پہلی خصوصیت سچ بولنا بتائی۔عمران خان نے کہاکہ انسان کو سچ بولنا چاہیے اور وہ نہیں کرنا چاہیے جو آج کل سپریم کورٹ میں نواز شریف کررہے ہیں۔اس موقع پر انہوں نے آنحضرت محمدؐ کے پاس آنے والے قریشی شخص کی مثال دی کہ اسے بھی حضور اکرم ؐنے سچ بولنے کی تاکید کی تھی۔عمران خان نے کہاکہ سچے انسان کی دنیا عزت کرتی ہے اور لیڈر وہی ہوتا ہے جو حق اور سچ کی بات کرے۔

چیئرمین پی ٹی آئی کے مطابق دوسری خصوصیت جو انسان کو بڑا انسان بننے میں مدد دیتی ہے وہ خوف پہ قابو پانا ہے اور دنیا ایک گیدڑ کی عزت نہیں کرتی۔عمران خان نے کہاکہ نہ کوئی بڑا کھلاڑی بن سکتا ہے، نہ کوئی بزنس مین بڑا بن سکتا ہے جب تک وہ اپنے خوف پر قابو نہ پا لے جو لیڈر بڑے فیصلے کرنے سے ڈرتا ہے وہ بڑا آدمی نہیں بن سکتا۔طلبہ سے مخاطب ہو کر عمران خان نے تیسری اہم خصوصیت میں کا بٴْت توڑنا بتائی۔

عمران خان نے کہا کہ اپنے آپ سے باہر نکل کر اور خود غرضی پر قابو پا کر ہی انسان بڑا بن سکتا ہے ،ْ آج تک کوئی بھی آدمی اپنی ذات کی خدمت کرکے بڑا نہیں بنا۔اس موقع پر انہوں نے قائد اعظم محمد علی جناح کی مثال بھی دی کہ انہوں نے اپنے لیے نہیں بلکہ ہمارے لیے پاکستان بنایا اور اسی لیے آج دنیا ان کا احترام کرتی ہے۔عمران خان کے مطابق چوتھی عادت لوگوں میں انصاف کرنے کی عادت ہے جو ایک عام آدمی کو بڑا آدمی بناتی ہے۔

عمران خان نے طلبا کو یہ تمام باتیں دہرانے کو بھی کہا۔خطاب میں ان کا کہنا تھا کہ دو طریقوں سے پاکستان کو عظیم ملک بنایا جاسکتا ہے ،ْپہلا طریقہ ہیومن ڈیولپمنٹ ہے۔انہوں نے کہا کہ وہی قومیں آگے جاتی ہیں جو انسانوں پر پیسہ خرچ کرتی ہیں اس موقع پر انہوں نے پرویز خٹک کو مبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ خیبرپختونخوا میں سب سے زیادہ اہمیت تعلیم کو دی جارہی ہے۔عمران خان کے مطابق پاکستان کو عظیم بنانے کیلئے دوسری اہم چیز ادارے مضبوط کرنا ہے، عدلیہ، نیب، ایف بی آر اور پولیس جتنے مضبوط ہوں گے ملک اتنا ہی مضبوط ہوگا۔انہوںنے کہاکہ کرپشن کے کینسر کے خاتمے کے بعد ہی ملکی ادارے مضبوط ہوسکتے ہیں ،ْکرپشن کے خاتمے کے لیے کوشش کرتے رہیں گے ۔
وقت اشاعت : 16/11/2016 - 19:17:39

اپنی رائے کا اظہار کریں