پاناما کیس سے کچھ نہیں نکلے گا ،ْ کیا وزیراعظم کے بچوں کو اپنا کاروبار کر نے کا ..
تازہ ترین : 1

پاناما کیس سے کچھ نہیں نکلے گا ،ْ کیا وزیراعظم کے بچوں کو اپنا کاروبار کر نے کا کوئی حق نہیں اکرم شیخ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 16 نومبر2016ء)پاناما لیکس کے کیس میں وزیر اعظم نواز شریف کے بچوں کے وکیل و سینئر قانون دان اکرم شیخ نے کہا ہے کہ انہوں نے انتہائی باریک بینی سے پاناما کیس کا جائزہ لیا ہے اور ان کی یہ رائے ہے کہ اس میں سے کچھ نہیں نکلے گا ،ْمیاں شریف کی الثانی گروپ میں کی گئی سرمایہ کاری ان کے بڑے پوتے کو مے فیئر فلیٹس کی شکل میں منتقل ہوئی ،ْ حسین نواز بہت ہی تابعدار نوجوان ہے جس نے اپنے دم پر سٹیل کے کاروبار میں کمال کیا ہے ،ْ چیف جسٹس کی شیخ رشید کو کہی گئی بات کا ایک پہلو یہ بھی ہے کہ انہیں سیاست میں نہیں ہونا چاہیے تھا۔

ایک انٹرویومیں اکرم شیخ نے کہاکہ میرا بیٹا اور حسین نواز کلاس فیلو رہے ہیں وزیر اعظم کے بچے مجھے اپنے بچوں کی طرح عزیز ہیں۔وزیر اعظم کے دونوں بچے اوور سیز پاکستانی ہیں جو جدہ اور لندن میں اپنا کاروبار کرتے ہیں ،ْکیا انہیں کاروبار کرنے کا کوئی حق نہیں اور کیا انہیں اس بات کی سزا دی جا رہی ہے کہ وہ وزیر اعظم کے بچے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ عمران خان کی جانب سے عدالت میں جمع کرائے گئے کاغذات کا کوئی سر پیر نہیں ہے اس لیے انہیں غیر ضروری سمجھتے ہیں، ان کاغذات میں صرف دو چار پیپرز میں فلیٹس کا ذکر ہے۔

میں نے ہر اینگل سے اور پوری باریک بینی سے کیس کا جائزہ لیا ہے جس کے بعد میری رائے ہے کہ مے فیئر فلیٹس میں سے کچھ نہیں نکلے گا۔اکرم شیخ نے کہاکہ پاکستان سے آج تک ایک پیسہ بھی باہر نہیں گیا اور نہ ہی یہ کوئی ثابت کرسکا ہے میاں شریف نے الثانی فیملی کے کاروبار میں 12 ملین کی سرمایہ کاری کر رکھی تھی اور ان کے انتقال کے بعد ان کے بڑے پوتے حسین نواز کو یہ رقم مے فیئر فلیٹس کی شکل میں منتقل ہوگئی ،ْحسین نواز بہت ہی تابعدار نوجوان ہے جس نے اپنے دم پر سٹیل کے کاروبار میں کمال کیا ہے اگر وزیر اعظم کے بچے پاکستان آجاتے تو ہر روز سکینڈلز سامنے آتے اس لیے شریف فیملی نے انہیں ان کی دنیا میں ہی رہنے دیا۔

انہوں نے مے فیئر فلیٹس کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ مے فیئر فلیٹس التانی گروپ نے 1993-94 میں خریدے ، دنیا کی تمام ملٹی بلین ڈالر کمپنیاں ٹیکس ہیونز میں رجسٹرڈ ہیں۔ میاں شریف نے التانی گروپ سے فلیٹس رہنے کیلئے لیے جن کا وہ کرایہ اور یوٹیلٹی بلز ادا کرتے تھے۔ میاں شریف کے انتقال کے بعد الثانی گروپ نے 2006 میں حسین نواز کو بیئریئر شیئرز دے دئیے ،ْاس کے بعد مریم کو ان فلیٹس کا ٹرسٹی بنادیا گیا جس کا صرف حسین نواز کے انتقال کے بعد وراثت کی شرعی طور پر تقسیم کا اختیار ہے ،ْیہ قومی مفاد میں نہیں ہے کہ الثانی فیملی کو متنازعہ بنا کر پاکستان کو سفارتی طور پر تنہا کرنے کی بھارتی خواہش پوری کردی جائے ،ْاکرم شیخ نے شیخ رشید کے بارے میں چیف جسٹس کے ریمارکس کے حوالے سے تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ چیف جسٹس صاحب نے جب شیخ رشید سے کہا کہ آپ کو وکیل ہونا چاہیے تھا تو اس پر وہ بہت زیادہ خوش ہوگئے حالانکہ اسی بات کا یہ پہلو بھی نکلتا ہے کہ شیخ رشید کو سیاست میںنہیں ہونا چاہیے تھا۔

وقت اشاعت : 16/11/2016 - 16:19:22

اپنی رائے کا اظہار کریں