صحافیوں کے تحفظ کیلئے جلد پروٹیکشن بل اسمبلی سے منظور کیا جائے گا، سپیکر قومی ..
تازہ ترین : 1

صحافیوں کے تحفظ کیلئے جلد پروٹیکشن بل اسمبلی سے منظور کیا جائے گا، سپیکر قومی اسمبلی

دوران ڈیوٹی شہید ہو جانے والے صحافیوں کی فیملیوں کو سہارا دینے کیلئے حکومت انڈونمنٹ فنڈ قائم کرے گی ٗ تعزیتی ریفرنس سے خطاب

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔12 اگست ۔2016ء)سپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے کہا ہے کہ صحافیوں کے تحفظ کیلئے جلد پروٹیکشن بل اسمبلی سے منظور کیا جائے گا، دوران ڈیوٹی شہید ہو جانے والے صحافیوں کی فیملیوں کو سہارا دینے کیلئے حکومت انڈونمنٹ فنڈ قائم کرے گی، مشکلات کے حل کیلئے وزارت اطلاعات ڈیڈیکیٹ سینئر افسر تعینات کرے گی۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے پارلیمانی رپورٹنگ کرنے والے صحافیوں کی نمائندہ تنظیم پی آر اے کے زیر اہتمام کوئٹہ واقعہ میں شہید ہونے والے نجی چینلز کے کیمرہ مینوں کی یاد میں تعزیتی ریفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ ریفرنس سے پی آر اے کے صدر صدیق ساجد، سینئر صحافی حاجی نواز رضا اور اینکر پرسن حامد میر نے بھی خطاب کیا اور صحافیوں کو درپیش مشکلات کے حل کیلئے ٹھوس اقدامات کا مطالبہ کیا۔

اس موقع پر سیکرٹری اطلاعات صباء محسن بھی موجود تھیں۔ سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے کہا کہ شہید صحافیوں کیلئے تعزیتی ریفرنس کا انعقاد ایک خوش آئند نئی روایت ہے، صحافیوں کے مسائل میرے مسائل ہیں، اس کمیونٹی کی سہولیات اور مشکلات کو کم کرنے کیلئے ہر ممکنہ اقدام اٹھاؤں گا، اس مقصد کیلئے صحافی میرے پاس آئیں یا نہ آئیں مگر میں خود ان کے پاس جاؤں گا، میرا ان سے ایک مضبوط رشتہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ صحافیوں کی بہتری اور تحفظ کیلئے رواں اجلاس میں پروٹیکشن بل قومی اسمبلی سے منظور کرائیں گے، اس مقصد کیلئے صحافی برادری کے نمائندوں کے ساتھ ساتھ اپوزیشن کی تمام پارلیمانی پارٹیوں کا اجلاس بلاؤں گا۔ انہوں نے کہا کہ تحریری طور پر مجھے بتا ئیں کہ کیا کیا معاملات حل طلب ہیں، ہم طے شدہ فریم ورک میں ان کو حل کرائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ حادثات کا شکار ہونے والے صحافیوں اور دوران ڈیوٹی شہادت پا جانے والے صحافیوں کیلئے ایک انڈونمنٹ فنڈ قائم کریں گے جس کیلئے خود وزیراعظم سے بات کروں گا۔ انہوں نے کہا کہ صحافی مشکل حالات میں فرائض انجام دیتے ہیں مگر افسوس ہے کہ کیمرہ کی انشورنس ہوتی ہے مگر اس کو چلانے والے انسان کی نہیں، ای ایف یو سے بات کریں گے کہ صحافیوں کی انشورنس کیلئے خصوصی پیکیج جاری کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ میں صحافیوں سے بھی کہوں گا کہ وہ ذمہ دارانہ صحافت کو فروغ دیں۔ سیاستدان اور صحافی محض ایک دوسرے پر الزامات کی بجائے ثبوت کے ساتھ بات کریں گے تو معاشرہ ترقی کرے گا۔ انہوں نے کہا کہ صحافیوں کے اندر بہتر رپورٹنگ کے فروغ کیلئے صوبوں میں پارلیمانی کوریج کرنے والے صحافیوں کو وفاق میں مدعو کیا جائے گا جبکہ وفاق کے صحافیوں کو صوبوں میں بھجوایا جائے گا، نیشنل سطح کی ورکشاپ کا انعقاد کیا جائے گا، پپس کے ذریعے آگاہی سیشن کریں گے۔ بعد ازاں انہوں نے شہید صحافیوں کیلئے دعائے مغفرت بھی کرائی۔

وقت اشاعت : 12/08/2016 - 20:44:33

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں