جوہری تنازع، عالمی طاقتیں ایران کے سامنے جْھک گئیں: نیتن یاھو
تازہ ترین : 1

جوہری تنازع، عالمی طاقتیں ایران کے سامنے جْھک گئیں: نیتن یاھو

مقبوضہ بیت المقدس(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔ 15 جون۔2015ء)اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاھو نے الزام عاید کیا ہے کہ عالمی طاقتیں ایران کے ساتھ اس کے متنازع جوہری پروگرام پر جاری مذاکرات و حتمی شکل دینے کے لیے ایران کی منشاء کے مطابق چل رہی ہیں تاکہ 30 جون کو طے شدہ ڈیڈ لائن کے اندر اندر معاہدہ ممکن بنایا جا سکے۔ان کا کہنا ہے کہ عالمی طاقتیں ایران کے تابع ہوچکی ہیں اور تہران کے خطرے سے بھرپور جوہری پروگرام کے معاملے میں غیرمعمولی پسپائی کا مظاہرہ کر کے تہران کو جوہری ہتھیاروں کے حصول کا موقع دے رہی ہیں۔

العریبہ نیٹ کے مطابق اسرائیلی وزیراعظم نے ایران سے مذاکرات کے بجائے جوہری پروگرام کی وجہ سے پابندیوں کا شکنجہ مزید سخت کرنے کا مطالبہ کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ کی نگرانی میں ایران کی مشکوک جوہری تنصیبات کا معائنہ سخت کیا جانا چاہیے۔ وزیراعظم ہاؤس کی جانب سے جاری ایک بیان میں نیتن یاھو کا کہنا تھا کہ مذاکرات کا عمل ایران کو ان وسائل کے حصول سے روکنے میں مدد گار نہیں ہو سکتا جو جوہری ہتھیاروں کی تیاری کا ذریعہ بن سکتے ہیں۔

معاہدے کی شکل میں اگر ایران پر عاید عالمی اقتصادی پابندیاں اٹھ گئیں تو تہران نہ صرف جوہری ہتھیاروں کے حصول کی کوششیں تیز کردے گا بلکہ خطے میں ایران نواز گروپوں کی مالی معاونت کے راستے بھی کھل جائیں گے۔بنجمن نیتن یاھو کا یہ بیان عبرانی ریڈیو پر نشر کیا گیا جس میں اْنہوں نے کہا کہ "عالمی طاقتوں کی جانب سے ایران سے مذاکرات کے سلسلے میں جو رپورٹس سامنے آ رہی ہیں وہ افسوسناک ہیں کیونکہ بہ ظاہر عالمی طاقتیں ایرانی عناد کے سامنے غیرمعمولی پسپائی کا مظاہرہ کررہی ہیں۔" تاہم اسرائیلی وزیراعظم نے سوائے تنقید کے اس حوالے سے کوئی ثبوت نہیں دیا کہ آیا عالمی طاقتیں کس طرح ایران کے سامنے پسپا ہورہی ہیں ۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 15/06/2015 - 14:38:26

متعلقہ عنوان :

اپنی رائے کا اظہار کریں