بلوچستان حکومت کا پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے سے انکار کو جرم قرار دینے کا فیصلہ ..
بلوچستان حکومت کا پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے سے انکار کو جرم قرار دینے ..

بلوچستان حکومت کا پولیو سے بچاؤ کے قطرے پلانے سے انکار کو جرم قرار دینے کا فیصلہ

پانچ سال سے کم عمر بچوں کو پولیو سے بچاوٴ کی قطرے لازمی پلانے کیلئے ویکسینیشن ایکٹ کو بلوچستان اسمبلی میں جلد پیش کیا جائے گا ایکٹ کے تحت بچوں کو پولیو سے بچاوٴ کے قطرے پلانے سے انکار کرنے والے والدین کو سزائیں بھی دی جائیں گی ہم صوبائی اسمبلی میں پولیو ویکسینیشن ایکٹ پیش کرنے کیلئے ایک مسودہ تشکیل دے رہے ہیں  سیکرٹری صحت کی تصدیق

کوئٹہ(اُردو پوائنٹ اخبار تازہ ترین۔14جون۔2015ء) بلوچستان حکومت نے انسداد پولیو کے حوالے سے مزید اقدامات کرتے ہوئے پولیو سے بچاوٴ کے قطرے پلانے سے انکار کو جرم‘ قرار دینے کا فیصلہ کیا ہے۔صوبائی محکمہ صحت کے ذرائع نے بتایا کہ صوبے میں پانچ سال سے کم عمر بچوں کو پولیو سے بچاوٴ کی قطرے لازمی پلانے کیلئے ویکسینیشن ایکٹ کو بلوچستان اسمبلی میں جلد پیش کیا جائے گا۔

اس ایکٹ کے تحت بچوں کو پولیو سے بچاوٴ کے قطرے پلانے سے انکار کرنے والے والدین کو سزائیں بھی دی جائیں گی۔بلوچستان میں محکمہ صحت کے سیکرٹری نور الحق بلوچ نے بتایا کہ ہم صوبائی اسمبلی میں پولیو ویکسینیشن ایکٹ پیش کرنے کے لئے ایک مسودہ تشکیل دے رہے ہیں۔نورالحق کے مطابق جب تک والدین کی جانب سے انکار کرنے کا سلسلہ جاری رہے گا اس وقت تک پولیو وائرس کا خاتمہ ممکن نہیں ہے۔

صوبائی سیکرٹری نے بتایا کہ ایک بچے کو پولیو کے قطرے پلانے سے انکار کرنے کی وجہ سے اس کے اطراف میں موجود 200 میٹرز تک تمام بچے اس وائرس سے متاثر ہوسکتے ہیں۔انہوں نے کہاکہ قطرے پلانے سے انکار کرنا جرم کے مترادف ہے۔خیال رہے کہ بلوچستان کے محکمہ صحت کی جانب سے کوئٹہ، قلعہ عبداللہ اور پشن کے 45 یونین کونسلز کو پولیو کے حوالے سے انتہائی خطرناک قرار دیا گیا ہے۔

صوبائی محکمہ صحت نے ان یونین کونسلز میں پولیو وائرس کے خاتمے کے لئے لیڈی ہیلتھ ورکرز کو پروگرام میں شامل کرنے کا فیصلہ بھی کیا ہے صوبائی حکام کے مطابق حکومت کی جانب سے جاری انسداد پولیو مہم کے دوران صوبے کے 90 فیصد والدین نے اپنے بچوں کو پولیو کے قطرے پلائے ہیں جبکہ 10 فیصد والدین نے انکار کیا۔نورالحق کے مطابق حکومت نے انسداد پولیو مہم کے لئے بلوچستان کے حالیہ بلدیاتی انتخابات میں کامیاب ہونے والے یونین کونسلرز سے رابطے کا فیصلہ بھی کیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’کونسلرز اس حوالے سے محکمہ صحت کے حکام سے ماہانہ ملاقاتیں بھی کرے گے۔

وقت اشاعت : 14/06/2015 - 16:42:04

اپنی رائے کا اظہار کریں