31دسمبر2015 تک افغان مہاجرین کی مکمل واپسی چاہتے ہیں،عبدالقادر بلوچ
تازہ ترین : 1

31دسمبر2015 تک افغان مہاجرین کی مکمل واپسی چاہتے ہیں،عبدالقادر بلوچ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 23 دسمبر 2014ء)وفاقی وزیر سیفرون عبدالقادر بلوچ نے کہا ہے کہ یو این ایچ سی آر افغان مہاجرین کی افغانستان میں آباد کاری کرے ‘31 دسمبر 2015 تک افغان مہاجرین کی واپسی کی گارنٹی نہیں دے سکتے۔منگل کو ریاستی و سرحدی امور کے وزیر عبدالقادر بلوچ نے پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ سانحہ پشاور سمیت کسی بھی خود کش حملے اور دہشتگردی میں رجسٹرڈ افغان مہاجرین ملوث نہیں،31دسمبر2015 تک افغان مہاجرین کی مکمل واپسی چاہتے ہیں،مگر واپسی کی گارنٹی نہیں دے سکتے۔

انہوں نے کہا کہ افغان جنگ میں پڑوسی کی حثیت سے مہمان نوازی کا بھرپور حق ادا کیا ہے، 30 لاکھ افغان مہاجرین اب بھی پاکستان میں موجود ہیں، جن کویونیسف کی مدد سے واپس بھجوایا جارہا ہے ،عبدالقادر بلوچ یو این ایچ سی آر کو افغان مہاجرین کی افغانستان میں آباد کاری کی تجاویز دی ہے۔قبل ازیں ایک انٹرویو میں ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہاکہ تقریباً 70 فیصد طالبان نے کبھی بھی کسی مدرسے سے تعلیم حاصل نہیں کی اور ان میں سے بیشتر کا مدرسوں سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

اگر کسی بھی مدرسے کا دہشت گردی کو فروغ دینے میں کردار پایا گیا تو اس کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ اسلام امن و آتشی کا دین ہے اور ہمارے دین میں کسی بھی معصوم شخص کو قتل کرنے کی اجازت نہیں انہوں نے کہاکہ میڈیا کا لوگوں میں دہشت گردی سے متعلق آگاہی پیدا کرنے میں اہم کردار ہے اور ہم اس اہم کردار کو سراہتے ہیں۔ وفاقی وزیر نے کہاکہ ہماری جماعت دہشت گردی کو ختم کرنے کیلئے اقدامات اٹھا رہی ہے اور ہم نے 2009ء کے سوات آپریشن میں بھی بھرپور حمایت کی تھی۔ انہوں نے کہاکہ وقت آگیا ہے کہ مل کر دہشت گردی کے ناسور کو ختم کیا جائے اور اس کا مقابلہ کیا جائے تاکہ ملک میں امن قائم ہو سکے۔

وقت اشاعت : 23/12/2014 - 17:44:29

اس خبر پر آپ کی رائے‎