سراج الحق نے پاک افغان بارڈر کے دور آفتادہ سرحدی علاقے سے شجر کاری مہم کا افتتاح ..
تازہ ترین : 1

سراج الحق نے پاک افغان بارڈر کے دور آفتادہ سرحدی علاقے سے شجر کاری مہم کا افتتاح کردیا

کلین اور گرین پاکستان ہماراہدف ہے، شجر کاری مہم کے دوران دیر میں 93لاکھ پودے لگائینگے، جنگلات کسی بھی ملک کی معیشت ،خوبصورتی میں اہم کردار ادا کرتے ہیں،امیر جماعت اسلامی

پشاور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 جنوری۔2016ء)امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ کلین اور گرین پاکستان ہماراہدف ہے ،پاک افغان بارڈر کے دور آفتادہ سرحدی علاقے سے شجر کاری مہم کا افتتاح کردیا اور اس شجر کاری مہم کے دوران دیر میں 93لاکھ پودے لگائینگے۔جنگلات کسی بھی ملک کی معیشت اور خوبصورتی میں اہم رول ادا کرتے ہیں لیکن ہمارے ہاں حکمرانوں کی غفلت اور خوبصورت پہاڑی علاقوں کو گیس کی عدم فراہمی کی وجہ سے ہمارے جنگلات تباہی کے دہانے پہنچ چکے ہیں ،سوئی گیس کی عدم فراہمی کی وجہ سے خطے کے حسن کو نقصان پہنچتا ہے جنگلات بچانے کیلئے حکومت فوری طور پر سوئی گیس کی فراہمی منصوبوں کو پائیہ تکمیل تک پہنچائے ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز اپنے آبائی حلقہ نیابت کے مختصر دورے کے دوران ثمر باغ کے علاے شنٹولہ میں شجر کاری مہم کے افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا،سینیٹر سراج الحق نے علاقے میں پودا لگاکر شجر کاری مہم کا افتتاح کیا اس موقع پر علاقہ ایم پی اے اعزازالملک افکاری،تحصیل ناظم سعید پاچامحکمہ جنگلات کے افسران سمیت علاقے کے عمائدین کی بڑی تعداد موجود تھی ،امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ جنگلات ہمارے ملک کیلئے گرین گولڈ کی حیثیت رکھتے ہیں اور ملکی معیشت کے ساتھ ساتھ ملک کی خوبصورتی کا بھی اسی سے گہرا تعلق ہے انہوں نے کہا کہ عوام اس شجر کاری مہم میں بھرپور حصہ لیں اور زیادہ سے زیادہ پودے لگائیں انہوں نے کہا کہ مرکزی سرکار کی عدم توجہی کی وجہ سے یہاں کے عوام مشکلات کے شکار ہیں اور اعزازالملک افکاری کے نوٹیفیکیشن کے اجراء میں عدالتی احکامات کے باوجود تاخیر کی وجہ سے عوام صوبائی اسمبلی نمائندگی کی اپنی آئینی حق سے محروم ہیں انہوں نے کہا کہ ہم امید کرتے ہیں کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان آئندہ پیشی پر نوٹیفیکیشن جاری کردیگی انہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی اس ملک ایسے حکومت کا قیام چاہتی ہے جس میں عوام کو اپنے آئینی حقوق ملیں گذشتہ 68سال سے ایک مخصوص طبقے نے سیاست اورجمہوریت کو یرغمال بنا کر عوام کے حقوق غصب کئے رکھے ہیں عوام کا حق بنتا ہے کہ انکو علاج ،تعلیم ،پینے کا صاف پانی ،چھت اور صحت من تفریحی ماحول میسر ہو لیکن حکمران عوام کو اپنے آئینی حقوق سے محروم رکھ کر مجرمانہ غفلت کے مرتکب ہورہے ہیں انہوں نے کہا کہ میاں محمد نواز شریف نے روضہ رسول ﷺ کے جوار میں میرے ساتھ وعدہ کیا تھا کہ وہ پاکستان میں اسلامی بینکاری شروع کرینگے اور سود جیسی لعنت سے قوم کو نجات دلائنگے ،انہوں نے یہ بھی وعدہ کیا تھا کہ وہ فحاشی و عریانی کا خاتمہ کرینگے اور اسلامی قوانین کا نفاذ کریں گے وہ قوانین جو آئین میں موجود ہیں ان پر ہی عمل درامد کرائینگے لیکن تین ماہ گذرنے کے بعد بھی انہوں نے ایک وعدہ بھی پورا نہیں کیا فحاشی و عریانی حدوں کو کراس کرگئی ہے ایسی فحاشی تو مغرب ،چائنہ و دیگرسیکولر ممالک میں بھی نہیں جو یہاں جاری ہے وہاں بھی ایک قانون ہے اور اس قانون کی وجہ سے فحاشی وعریانی کی ایسی اجازت نہیں لیکن یہاں اسلامی آئین کے ہوتے ہوئے فحاشی عروج پر ہے ایسے میں زلزلے اور قدرتی آفات ہی آئینگے آسمان سے پھولوں کی بارش نہیں ہوگی۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 11/01/2016 - 18:21:22

اپنی رائے کا اظہار کریں