شوہر اور سسرالی جسم فروشی کے لئے زبردستی دبئی بھیجنا چاہتے تھے، بسما کا دوران ..
تازہ ترین : 1
شوہر اور سسرالی جسم فروشی کے لئے زبردستی دبئی بھیجنا چاہتے تھے، بسما ..

شوہر اور سسرالی جسم فروشی کے لئے زبردستی دبئی بھیجنا چاہتے تھے، بسما کا دوران تفتیش انکشاف

لاہور(اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 6مارچ 2014ء) جوہر ٹاؤن میں غربت سے تنگ آکر اپنے بچوں کو قتل کرنے والی ماں سے تفتیش کے دوران انکشاف ہوا ہے کہ اس کا شوہر اور سسرال والے اسے جسم فروشی کے لئے زبردستی دبئی بھیجنا چاہتے تھے۔

لاہور کےعلاقے جوہر ٹاؤن میں اپنے بچوں کو قتل کرنے والی خاتون بسما سے دوران تفتیشن انکشاف ہوا ہے کہ اس کا شوہر اور سسرال والے خواتین سے جسم فروشی کا کام کرانے والے گھناؤنے دھندوں میں ملوث ہیں جب کہ شوہر اور سسرالیوں کی جانب سے اسے بھی جسم فروشی کے لئے زبردستی دبئی بھیجنے کی کوشش کی گئی تھی جب کہ دونوں بچوں کو پیدائش سے قبل اسقاط حمل کے ذریعے ضائع کرنے کی کوشش بھی کی گئی۔

تفتیشی ذرائع کے مطابق شوہر کے رویئے سے تنگ آکر بسما نیند کی گولیاں کھانے کی عادی ہوچکی ہے جب کہ سسرال میں بیٹی کے ساتھ ناروا سلوک پر دلبرداشتہ ہوکر بسما کی والدہ نے ایک برس قبل خودکشی کرلی تھی۔ تفتیشی ٹیم کا کہنا ہے کہ بسما اپنے بچوں کو یاد کرکے تھوڑی تھوڑی دیر بعد دھاڑیں مار کر رونے لگتی ہے اور اپنے بچوں کی قبروں پر لے جانے کا مطالبہ کرتی ہے۔ بسما کا کہنا ہے کہ بچوں کو مار کر اس نے بہت بڑا ظلم کیا اس سے بہتر تھا کہ شوہر کو مار دے دیتی ۔

وقت اشاعت : 06/03/2014 - 17:51:21

قارئین کی رائے :

  • yasir afzaal Says : 11/03/2014 - 14:42:27

    jo is ne kya is ki saza is kol mil gae aulad ko kho dene ki ab ye saari zindagi is soch me roz roz marti rahe gi

    Reply to this comment
  • فاطمہ کی رائے : 07/03/2014 - 16:48:10

    اس کو سزا ہونی چہے اس میں بچوں کا کیا کسور تھا یہ سب ڈرامے ہوتے ھیں بچوں کو مرنے سی کیا اس کے خاوند نے اس سے ناجایز کام کروانے بند کر دےا تھے

    اس رائے کا جواب دیں
  • MiAN MUHAMMAD SIKANDAR Says : 07/03/2014 - 14:26:57

    This mother is innocent.Her husband should be penalized for what h did and created such disastrous circumstances.

    Reply to this comment
  • محمد سلطان انڈیا کی رائے : 07/03/2014 - 09:37:18

    السلام علیکم و و۔۔اصل مجرم تو گھر والے ہی ہے۔لیکن کیا کرے ،ہماری عدلیہ بھی بکی ہوئی ہے،گھرکے سارے افراد کی پکڑ ہونی چاہئے تاکہ آئندہ کوئی ایسا گھناونی قدم اٹھاتے ہوئے سو بار سوچے

    اس رائے کا جواب دیں
  • عمران کی رائے : 07/03/2014 - 08:48:38

    غربت انسان کو کفر تک لے جا تی ہے۔ اسے چا ہیئے تھا کہ خدا سے دعا کر تی ،خدا ضرور اآ سانی پیدا کر تا اس کے لیے اور اس کے بچو ں کے لیئے۔

    اس رائے کا جواب دیں
  • shabbir ahmad chohadry Says : 07/03/2014 - 07:05:12

    nsha hram hy is sy hr soort bchna chahiey pta nhin kyon is ka chihra dakh k trs aata hy isy zulm kia pr is py zulm itna hua hy k maan hoty hoey apny bchon ki bhok na brdasht kr ski or un masomon ki bhok hmasha k liey mita di

    Reply to this comment
  • Haroon ur Rasheed Says : 06/03/2014 - 21:44:58

    So sad Ase Husband our Susraliyon ko kari se kari saza milni chy.

    Reply to this comment
  • ریحان سعید کی رائے : 06/03/2014 - 18:33:53

    بہت افسوس ہوا اور اس عورت سے ہمدری ہے۔ اس سے جو ھو گیا وہ اس پر پشیمان ھوتی رہے گی۔

    اس رائے کا جواب دیں
  • GHULAMRASHID KHAN KOHATI Says : 06/03/2014 - 18:31:10

    IS BECHARI KA QASOOR NAHI HE .IS KE HUSBAND KO 30GLI MARNI CHAHEYE.JO ITNA BE GHERAAT HE.

    Reply to this comment
  • shabbir ahmad chohadry Says : 06/03/2014 - 18:16:17

    nsha hram hy is sy hr soort bchna chahiey pta nhin kyon is ka chihra dakh k trs aata hy isy zulm kia pr is py zulm itna hua hy k maan hoty hoey apny bchon ki bhok na brdasht kr ski or un masomon ki bhok hmasha k liey mita di

    Reply to this comment
  • [email protected] کا shabbir ahmad chohadry کو جواب : 06/03/2014 - 22:44:12

    Kuch b ho, Islam mai Qatal ya Khud kashi dono haram hain chahay kesi he halat kio a jain. qatal b un masoomo ka kia jin ko dunia mafia ka kuch b pata nai. Is sy bacho ki bhook na bardasht hoti thi to Edhi center chali jati ya or kisi welfare ko bachy dy daiti, Pakistan mai log abi itny zalim nai huway jo kisi bhooky ko 2 roti ly kar na dain.ye orat jhooti hy sirf apna guna chupany k leay hamdardi chahti hy. Un masoomo k qatal k injam mai is orat ko umar qaid d jaye

اپنی رائے کا اظہار کریں