پارلیمنٹ مردہ گھوڑوں کا اصطبل ، تنہا جمہوریت کے منتخب قبرستان میں اذان دے رہا ..
تازہ ترین : 1
پارلیمنٹ مردہ گھوڑوں کا اصطبل ، تنہا جمہوریت کے منتخب قبرستان میں اذان ..

پارلیمنٹ مردہ گھوڑوں کا اصطبل ، تنہا جمہوریت کے منتخب قبرستان میں اذان دے رہا ہوں ‘ شیخ رشید

لاہور( اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 26جنوری 2014ء) پاکستان عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید احمد نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ مردہ گھوڑوں کا اصطبل ہے ،میں تنہا جمہوریت کے منتخب قبرستان میں اذان دے رہا ہوں ، عوام کو میرے سمیت تمام اراکین اسمبلی کے گریبان پکڑ کر گھسیٹنا چاہیے تاکہ ہمیں اپنی ذمہ داریوں کا احساس ہو سکے ، قومی اداروں کے سربراہان کی تعیناتی میں دلہن وہ جو پیا من بھائے کی پالیسی اپناتے ہوئے معیار کی بجائے وفاداری کو ترجیح دی گئی ہے ،بیڈ گورننس میں پاکستان دنیا بھر میں پہلے نمبر پر آ چکا ہے ۔

ایک انٹر ویو میں شیخ رشید نے کہا کہ نواز شریف کی کابینہ میں موجود آٹھ وزیر اور سو کے قریب اراکین پرویز مشرف کے ساتھی رہے ہیں ، حدیبیہ پیپر ملز کا کیس لڑنے والوں کو اٹارنی جنرل لگادیا گیا ہے ۔ میں نواز شریف سے کہہ چکا ہوں کہ آپ ہمیشہ اپنی اکثریت کے وزن سے گھر گئے ہیں ۔ شیخ رشید نے کہا کہ بھارت سے دوستی کی پینگیں بڑھانے کی باتیں ہو رہی ہیں لیکن میرا دعویٰ ہے کہ بھارت کبھی بھی معاشی اور سیاسی طور پر پاکستان کو مضبوط نہیں دیکھنا چاہتا وہ پاکستان کے مستقبل کو گروی رکھنا چاہتا ہے اور ایسے میں کشمیر بنے گا پاکستان کے نعرے صرف نعرے ہی رہ جائیں گے۔

انہوں نے کہا کہ آنے والے دنوں میں چور اور چوکیدار کوئلے سے بجلی بنانے کے منصوبے کا افتتاح کرنے جارہے ہیں۔ اگر میں اپوزیشن لیڈر ہوتا تو پھر دیکھتا اپوزیشن کیسے حکومت کو ہر معاملے میں ”ساتھ ہیں “ کے تعاون کی یقین دہانی کراتی ۔ انہوں نے کہا کہ صرف چار ووٹوں سے اپوزیشن لیڈر بننے سے رہ گیا لیکن آج بھی تنہا جمہوریت کے منتخب قبرستان میں اذان دے رہا ہوں ۔

میں نے اکیلے قومی اسمبلی میں حکومت کو آگے لگایا ہوا ہے لیکن میں پھر بھی اپنی کارکردگی سے مطمئن نہیں ۔ عوام کو میرے سمیت تمام اراکین اسمبلی کے گریبان پکڑ کر گلیوں میں گھسیٹنا چاہیے تاکہ ہمیں اپنی ذمہ داریوں کا احساس ہو اور عوام کے لئے عملی طور پر کچھ کیا جا سکے ۔ انہوں نے کہا کہ میرے علاقے میں عوامی فلاح کے منصوبوں کو اس لئے مکمل نہیں کیا جارہا کہ وہاں کی عوام نے (ن) لیگ کو ووٹ نہیں دیا ۔

مجھے چندا مانگنا نہیں آتا لیکن اب ایسا لگتا ہے کہ راولپنڈی میں ماں او ربچے کے ہسپتال کی تکمیل کیلئے تحریک انصاف والوں کی طرح چندا مانگنا پڑے گا ۔انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم محمد نواز شریف آٹھ ماہ میں صرف اسمبلی سے ووٹ لینے آئے جبکہ اسکے بعد انہوں نے اسمبلی کا چہرہ نہیں دیکھا۔ نواز شریف کو تو اتنا نہیں پتہ کہ سینیٹ کا دروازہ کس طرف کھلتا ہے ۔

مزید متعلقہ خبریں پڑھئیے‎ :

وقت اشاعت : 26/01/2014 - 15:21:23

قارئین کی رائے :

اپنی رائے کا اظہار کریں