مشرف کیس سوچی سمجھی سازش کے تحت الجھایا جارہا ہے‘آمر کیلئے ہمدردی رکھنے والے11دسمبر ..
تازہ ترین : 1

مشرف کیس سوچی سمجھی سازش کے تحت الجھایا جارہا ہے‘آمر کیلئے ہمدردی رکھنے والے11دسمبر سے پہلے کہاں تھے؟‘ سید وسیم اختر

لاہور ( اُردو پوائنٹ تازہ ترین اخبار۔ 2 جنوری 2014ء) رکن صوبائی اسمبلی وپارلیمانی لیڈر اور امیر جماعت اسلامی پنجاب ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا ہے کہ مشرف غداری کیس کو سوچی سمجھی سازش کے تحت الجھایا کیا جارہا ہے،دومرتبہ آئین توڑنا ملک وقوم کے ساتھ سنگین مذاق کے مترادف تھا جس کا خمیازہ قوم آج تک بھگت رہی ہے، جنرل(ر)مشرف پہلے کیسز میں بھی توعدالتوں میں پیش ہوتے رہے ہیں، اب سکیورٹی کو جواز بنا کر عدالت کے ساتھ مذاق کیا جارہا ہے جس کی جتنی بھی مذمت کی جائے کم ہے، 18کروڑ عوام مشرف کو قومی مجرم سمجھتے ہیں لہٰذا انہیں اپنے کیے کی سزا ضرورملنی چاہئے۔

انہوں نے کہاکہ جمہوریت پر شب خون،عدلیہ کی آزادی پر حملہ ،لال مسجد میں معصوم بچیوں کو شہید کرنا،اکبر بگٹی کا قتل آئین پاکستان کے ساتھ کھلواڑ اور ڈاکٹر عافیہ صدیقی سمیت سینکڑوں پاکستانیوں کو امریکہ کے حوالے کرناجیسے سنگین الزامات کی طویل فہرست ہے۔آمر کے لئے ہمدردی دکھانے والے11دسمبر سے پہلے کہاں تھے؟۔آج ملک میں عدالتیں آزاداور میڈیا کی وجہ سے عوام باشعور ہوچکے ہیں۔

عوام کو گمراہ کرنے والے اپنے عزائم میں کامیاب نہیں ہوں گے۔جماعت اسلامی کے رہنما ڈاکٹر سید وسیم اختر نے مزیدکہاکہ 9/11کے بعد جو پالیسیاں مشرف نے اپنائی ان سے ملک و قوم کو ناقابل تلافی نقصان ہواہے۔دہشت گردی کی عفریت اور ڈرون حملوں کی غیر اعلانیہ اجازت کے باعث50ہزار قیمتی جانیں ضائع ہوچکی ہیں۔100ارب ڈالر کا معیشت کودھچکا لگاہے۔جنرل(ر)پرویزمشرف قومی مجرم ہے اس سے کسی قسم کی رعایت قوم کے ساتھ غداری کے مترادف ہوگی۔

وقت اشاعت : 02/01/2014 - 16:24:00

قارئین کی رائے :

  • احمد نواز کی رائے : 02/01/2014 - 17:09:06

    جناب وسیم اختر صاحب صرف مشرف آپ سب کو مجرم کیوں نظر آتا ہے۔ آپ 1999 میں جب مشرف نے نواز شریف حکومت کا تختہ اُلٹا تو ساری قوم نے مٹھائیاں بانٹی تھیں۔ جبہوریت کا راگ الاپنے والے یہ بتائیں کہ جمہوریت نے عوام کو سوائے تکلیفوں کے دیا کیا ہے۔ اس بات سے انکار نہیں ہے کہ مشرف کے خلاف قانونی کاروائی ضرور ہونی چاہئے ۔ لیکن اس میں صرف مشرف کو نہیں بلکہ اُس ساری کابینہ کو بھی قانون کے کٹہرے میں کھڑا کیا جائے اور تما حواریون / سیاست دانوں کو بھی جنہوں نے مشرف کا ساتھ دیا۔ فوج کے اُس وقت کے افسران کو بھی ٹرائل میں شامل کیا جائے ۔ صرف مشرف قابل سزا نہیں ہے اصل میں کرپٹ سیاستدان قابل سزا ہیں جن کی وجہ سے مشرف جیسے لوگوں کی حوصلہ افزائی ہوتی ہے۔

    اس رائے کا جواب دیں

اپنی رائے کا اظہار کریں