یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کی نجکا ری کے لئے دانستہ ادارے کو خسارے میں لے جا نے کا ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید قومی خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
پچھلی خبریں -

اسلام آباد

اسلام آباد شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:58:14 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:58:15 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:58:18 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:58:19 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:59:54 وقت اشاعت: 18/01/2017 - 10:59:56 اسلام آباد کی مزید خبریں

تلاش کیجئے

یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن کی نجکا ری کے لئے دانستہ ادارے کو خسارے میں لے جا نے کا انکشا ف ، کارپوریشن کے تمام سنیئر افسران کو قبل از وقت یا جبری ریٹائر کروانے کیلئے چند با اثربیوروکریٹس نے خفیہ منصوبہ بنایا ، منصوبے سے وزیر اعظم اور وفاقی وزیر خزانہ کو بھی بے خبر رکھا گیا، ذرائع

اسلام آباد( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔31 مارچ۔2015ء )عوام کو اشیائے ضروریہ ارزاں نرخوں پر فراہمی کے قومی ادارے یوٹیلٹی سٹورز کارپوریشن (یو ایس سی ) کو حکمت عملی کے تحت خسارے میں لے جاکر اس کی نجکاری اور متبادل کے طور پر نئے افسران تعینات کرکے کارپوریشن کے تمام سنیئر ترین افسران کو قبل از وقت یا جبری ریٹائر کروانے کیلئے چند با اثربیوروکریٹس نے خفیہ منصوبہ بنایا ہے اور اس منصوبے سے وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف اور وفاقی وزیر خزانہ سینیٹر اسحاق ڈار کوبے خبر رکھا گیا ہے۔

مصدقہ ذرائع نے بتایا ہے کہ مذکورہ منصوبے کے تحت پہلے یوٹیلٹی سٹورز پر فروخت ہونے والی چینی پر سبسڈی ختم کرائی گئی جس کے بعد کارپوریشن کی ماہانہ مجموعی سیل تقریبا ڈھائی ارب روپے کم ہوگئی جس کا مقصد کارپوریشن کو خسارے میں لے جاکر زیاد ہ تر دور افتادہ علاقوں میں واقع دو سے ڈھائی ہزار سٹورز بند اور چار سے پانچ ہزار ملازمین کو فارغ کرکے نجکاری کی راہ ہموار کرنا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ سیل کی گرتی ہوئی صورت حال کو پیش نظر رکھتے ہوئے چینی اور چند دیگراشیائے ضروریہ پر سبسڈی کی بحالی کیلئے گزشتہ سال اکتوبر،نومبر میں سمری اقتصادی رابطہ کمیٹی (ای سی سی ) کی منطوری کیلئے پیش کرنے کا عمل شروع کیا گیامگر تاحال سمری پیش نہیں کی گئی جس کے باعث سیل کو کم رکھ کر

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

31-03-2015 :تاریخ اشاعت