تباہ شدہ جرمن مسافر طیارے کے معاون پائلٹ میں خودکشی کے رجحانات تھے،تفتیشی اہلکار ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل مارچ

مزید بین الاقوامی خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
تاریخ اشاعت: 2015-03-31
پچھلی خبریں -

تلاش کیجئے

تباہ شدہ جرمن مسافر طیارے کے معاون پائلٹ میں خودکشی کے رجحانات تھے،تفتیشی اہلکار

برلن (اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔31 مارچ۔2015ء) فرانس میں تباہ ہونے والے جرمن مسافر طیارے کی تحقیقات کرنے والے اہلکاروں کا کہنا ہے کہ جہاز کے معاون پائلٹ آندریاز لوبٹز میں بہت پہلے سے خودکشی کرنے کے رجحانات موجود تھے اور وہ اس کا اعلاج بھی کروا چکے تھے۔لوبٹز کو جرمن مسافر طیارے کو مبینہ طور پر جان بوجھ کر تباہ کرنے کا ذمہ دار سمجھا جا رہا ہے۔ اس حادثے کے نتیجے میں جہاز پر موجود 150 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

حکام کا کہنا ہے کہ اب تک 80 افراد کے ڈی این اے حاصل کیے جا چکے ہیں۔بی بی سی کے مطابق ڈزلڈورف میں استغاثہ کے ترجمان رالف ہیرن بروک نے بتایا ہے کہ لوبٹز نے پائلٹ بننے سے کئی سال قبل خودکشی کرنے کے رجحانات پائے جانے پر نفسیاتی علاج یا سائیکو تھراپی کروائی تھی۔ان کا مزید کہنا تھا کہ جب سے لوبٹز کو لائسنس ملا ہے اس کے بعد سے دستاویزات میں اس قسم کے کسی بھی علاج کا ذکر موجود نہیں ہے۔رالف ہیرن بروک نے بتایا ہے کہ ’ اس بات کا کوئی ثبوت نہیں ملا جس سے معلوم ہو سکے کہ معاون کپتان ایسا کچھ کرنے والے تھے جیسا بظاہر انھوں نے کیا۔



اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

31-03-2015 :تاریخ اشاعت