ایران نے یمن میں ”فیصلہ کن طوفان“ کی مذمت کردی،سعودی عرب کی قیادت میں فضائی حملے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعہ مارچ

تلاش کیجئے

ایران نے یمن میں ”فیصلہ کن طوفان“ کی مذمت کردی،سعودی عرب کی قیادت میں فضائی حملے فوری طور پر بند کیے جائیں۔ ایرانی وزیرخارجہ جواد ظریف

تہران( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔27 مارچ۔2015ء) ایران نے سعودی عرب کی قیادت میں یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کے خلاف آپریشن ''فیصلہ کن طوفان'' کو ''فوجی جارحیت'' قرار دیتے ہوئے فوری طور پر روکنے کا مطالبہ کیا ہے۔ایران کی نیم سرکاری اسٹوڈنٹس نیوز ایجنسی کی اطلاع کے مطابق وزیرخارجہ محمد جواد ظریف نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ''سعودی عرب کی قیادت میں فضائی حملے فوری طور پر بند کیے جائیں۔یہ حملے یمن کی علاقائی خودمختاری کے خلاف ہیں''۔

جواد ظریف اس وقت سوئس شہر لاسین میں ہیں جہاں وہ جوہری پروگرام کے تنازعے پر بڑی طاقتوں کے ساتھ مذاکرات کررہے ہیں۔انھوں نے بیان میں مزید کہا ہے کہ ''ہم یمن میں جاری بحران کو کنٹرول کرنے کے لیے ہر ممکن کوششیں کریں گے''۔درایں اثناء ایران کی فارس نیوز ایجنسی نے وزارت خارجہ کی ترجمان مرضیہ افخم کا یہ بیان نقل کیا ہے کہ ''ایران یمن اور اس کے عوام کے خلاف تمام فوجی جارحیت اور فضائی حملوں کا فوری خاتمہ چاہتا ہے۔

یمن میں فوجی کارروائیاں صورت حال کو مزید پیچیدہ بنا دیں گی اور ان سے بحران کے پْرامن حل کی راہیں بھی مسدود ہوجائیں گی''۔مرضہ افخم نے خبردار کیا ہے کہ سعودی عرب کی قیادت میں جارحیت خطرناک ہے اور یہ ملکوں کی خود مختاری کے احترام سے متعلق بین الاقوامی قوانین کی بھی خلاف ورزی ہے۔انھوں نے کہا کہ ''اس سے مشرق وسطیٰ

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

27-03-2015 :تاریخ اشاعت

:متعلقہ عنوان