شامی اپوزیشن میں شمولیت کے الزام میں اسرائیلی عرب نوجوان کو قید
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مارچ

تلاش کیجئے

شامی اپوزیشن میں شمولیت کے الزام میں اسرائیلی عرب نوجوان کو قید

مقبوضہ بیت المقدس (اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔25 مارچ۔2015ء)اسرائیل کی ایک مقامی عدالت نے شامی صدر بشارالاسد کیخلاف سرگرم اپوزیشن کی نمائندہ فوج میں شمولیت کے لیے غیر قانونی طریقے سے شام کا سفر کرنے کی پاداش میں ایک عرب نڑاد اسرائیلی نوجوان کو گیارہ ماہ قید کی سزا کا حکم دیا ہے۔تفصیلات کے مطابق اسرائیلی عدالت کے ایک ذریعے کا کہنا ہے کہ ملزم 21 سالہ یوسف نصراللہ کا تعلق مقبوضہ فلسطین کے قلنسو قصبے سے ہے۔

وہ پچھلے سال اردن کے راستے شام میں اپوزیشن کے ہمراہ لڑں ے کے لیے دمشق کا سفرکرچکا ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ نصرا للہ 19 اپریل 2014ء کو شام میں داخل ہوا لیکن وہ اپوزیشن کے بجائے شامی فوج کے ہتھے چڑھ گیا جہاں اسے دوران راست وحشیانہ تشدد کا نشانہ بنایا جاتا رہا۔ شامی فوج نے اسے اسرائیل کے فوجی اڈوں کے بارے میں اہم معلومات بھی حاصل کیں۔ ملزم نے اسرائیلی عدالت کو بتایا کہ شامی فوج نے اسے 12 دسمبرکو رہا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

25-03-2015 :تاریخ اشاعت