پی اے سی کی ذیلی کمیٹی کی پاکستان ریلوے اور نیشنل لاجسٹک سیل کے مابین ڈرائی پورٹ ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مارچ

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
- مزید خبریں

اسلام آباد

تلاش کیجئے

پی اے سی کی ذیلی کمیٹی کی پاکستان ریلوے اور نیشنل لاجسٹک سیل کے مابین ڈرائی پورٹ تنازعہ حل کرنے کی سفارش ،منافع کی عدم ادائیگی کی وجہ سے ریلوے کو2کروڑ 47لاکھ سے زائد کا نقصان پہنچا ہے ، آڈٹ رپورٹ، این ایل سی کے حکام نے منافع کی رقم دینے کی بجائے ایک سال تک ادا کی جانے والی زائد رقم واپسی کا تقاضہ کر دیا

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔18 مارچ۔2015ء) پبلک اکاؤنٹس کی ذیلی کمیٹی نے پاکستان ریلوے اور نیشنل لاجسٹک سیل کے مابین ڈرائی پورٹ تنازعہ حل کرنے کی سفارش کر دی ہے، آڈٹ رپورٹ کے مطابق معاہدے کے مطابق منافع کی عدم ادائیگی کی وجہ سے ریلوے کو2کروڑ 47لاکھ سے زائد کا نقصان پہنچا ہے ، این ایل سی کے حکام نے منافع کی رقم دینے کی بجائے ایک سال تک ادا کی جانے والی زائد رقم واپسی کا تقاضہ کر دیا کمیٹی کو بریفنگ دیتے ہوئے سیکرٹری پاکستان ریلوے نے انکشاف کہ کوئٹہ میں این ایل سی اور ریلوے کے مابین مشترکہ ڈرائی پورٹ کا معاہدہ 2002میں ایک سال کیلئے ہواجس کے مطابق دونوں ادارے منافع میں برابر کے حصہ دار ہونگے اس معاہدے کو ہر سال باہمی رضامندی کے ساتھ آگے بڑھانا تھا اس معاہدے پر مئی 2004تک عمل درآمد کیا گیا اور پاکستان ریلوے کو منافع دیا گیا مگر اس کے بعد این ایل سی نے نہ تو ریلوے کو کوئی منافع دیا اور نہ ہی معاہدے کو توسیع دی گئی جس کی وجہ سے پاکستان ریلوے کو نقصان ہورہا ہے انہوں نے بتایا کہ اس سلسلے میں کافی کوششیں

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

18-03-2015 :تاریخ اشاعت

:متعلقہ عنوان