آصف زرداری اور الطاف حسین میں ٹیلی فونک رابطہ ہوا، مفاہمت اوربہترورکنگ ریلیشن ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مارچ

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
تاریخ اشاعت: 2015-03-18
پچھلی خبریں -

کراچی

تلاش کیجئے

آصف زرداری اور الطاف حسین میں ٹیلی فونک رابطہ ہوا، مفاہمت اوربہترورکنگ ریلیشن پراتفاق ،ایم کیوایم کی سندھ حکومت میں شمولیت سے متعلق امورپربھی بات چیت ،پیپلزپارٹی کے ارکان سندھ اسمبلی کی ایم کیو ایم کی سندھ حکومت میں شمولیت کے حوالے سے پارٹی کے فیصلے کی حمایت ، ایم کیو ایم اور پیپلزپارٹی خوشی اور غم کے ساتھی ہیں،سینیٹ انتخابات میں ایم کیو ایم نے پیپلزپارٹی کا بھرپور ساتھ دیا ہے ،آج ایم کیو ایم پر کڑا وقت ہے اس کڑے وقت میں پیپلزپارٹی ایم کیو ایم کو تنہا نہیں چھوڑے گی ، آصف زرداری،پیپلزپارٹی نے ایم کیو ایم کو سندھ حکومت میں شامل ہونے کی باضابطہ دعوت دی ہے اب بال ایم کیو ایم کے کورٹ میں ہے دیکھنا یہ ہے کہ ایم کیو ایم اپنے فیصلے سے کب آگاہ کرتی ہے ،پارٹی کے شریک چیئرمین نے ایم کیو ایم سے باضابطہ بات چیت کے لیے وزیر اعلیٰ سندھ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی ہے جو ایم کیو ایم سے رابطہ کرکے سندھ حکومت میں شمولیت کے حوالے سے بات چیت کرے گی،سابق صدر کا ظہرانے سے خطاب

کراچی ( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔18 مارچ۔2015ء ) پاکستان پیپلزپارٹی کے ارکان سندھ اسمبلی نے ایم کیو ایم کی سندھ حکومت میں شمولیت کے حوالے سے پارٹی کے فیصلے کی حمایت کی ہے ۔سابق صدر اور پاکستان پیپلزپارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ ایم کیو ایم اور پیپلزپارٹی خوشی اور غم کے ساتھی ہیں ۔سینیٹ انتخابات میں ایم کیو ایم نے پیپلزپارٹی کا بھرپور ساتھ دیا ہے ،آج ایم کیو ایم پر کڑا وقت ہے اس کڑے وقت میں پیپلزپارٹی ایم کیو ایم کو تنہا نہیں چھوڑے گی ۔

پیپلزپارٹی نے ایم کیو ایم کو سندھ حکومت میں شامل ہونے کی باضابطہ دعوت دی ہے اب بال ایم کیو ایم کے کورٹ میں ہے دیکھنا یہ ہے کہ ایم کیو ایم اپنے فیصلے سے کب آگاہ کرتی ہے ۔پارٹی کے شریک چیئرمین نے ایم کیو ایم سے باضابطہ بات چیت کے لیے وزیر اعلیٰ سندھ کی سربراہی میں کمیٹی قائم کردی ہے جو ایم کیو ایم سے رابطہ کرکے سندھ حکومت میں شمولیت کے حوالے سے بات چیت کرے گی ۔ان خیالات کااظہار انہوں نے منگل کو بلاول ہاوٴس میں پیپلزپارٹی کے ارکان سندھ اسمبلی کے اعزاز میں دیئے گئے ظہرانے سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔

ظہرانے میں وزیرا علیٰ سندھ سید قائم علی شاہ ،شیری رحمن ،فریال تالپور ،صوبائی وزراء اور پیپلزپارٹی کے ارکان سندھ اسمبلی نے شرکت کی ۔ظہرانے میں سیاسی صورت حال ، کراچی امن و امان ،پیپلزپارٹی کے بانی قائد ذوالفقار علی بھٹو کی برسی اور سندھ میں بلدیاتی انتخابات کے حوالے سے غور و خوض کیا گیا ۔ظہرانے میں 4اپریل کو گڑھی خدا بخش میں ہونے والے جلسے کی تیاریوں کا جائزہ بھی لیا گیا ۔پیپلزپارٹی کے ذرائع نے بتایا کہ ظہرانے میں پارٹی کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری نے تمام ارکان سندھ اسمبلی کو مخاطب کرتے ہوئے پوچھا کہ اگر ایم کیو ایم کو سندھ حکومت کا حصہ بنایا جائے تو آپ کی رائے کیا ہے ۔

اس پر طہرانے کے شرکاء خاموش رہے،جس پر آصف علی زرداری نے کہا کہ کیا اسے ہاں ہی سمجھا جائے ۔کوئی بولے نہ بولے نادر مگسی آپ تو بولیں ۔ میں نے جو فیصلہ کیا ہے اس حوالے سے آپ کیا کہتے ہیں ؟میرنادر مگسی نے کہا کہ میں ایم کیو ایم کو پسند نہیں کرتا ۔تاہم سینیٹ الیکشن کے موقع پر متحدہ سے جو کمٹمنٹ ہوئی ہے وہ پوری ہونی چاہیے ۔اسی اثناء کلثوم چانڈیو نے کہا کہ آپ شریک چیئرمین ہیں ،جو فیصلہ آپ کا ہے وہ فیصلہ ہمارا ہے ۔

آصف علی زرداری نے کہا کہ سینیٹ کے انتخابات میں ایم کیو ایم سمیت جن جماعتوں نے ہمارا ساتھ دیا ہے ہم ان کے ساتھ مفاہمتی پالیسی کو برقرار رکھیں گے اور اتحاد کا سلسلہ آئندہ بھی جاری رہے گا ۔انہوں نے کہا کہ سینیٹ کے انتخابات میں سندھ

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

18-03-2015 :تاریخ اشاعت