سابق چیف جسٹس کی پنشن اور مراعات کی تفصیلات سینٹ میں پیش نہ کرنے پر ایوان بالا ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ مارچ

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
تاریخ اشاعت: 2015-03-04
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

تلاش کیجئے

سابق چیف جسٹس کی پنشن اور مراعات کی تفصیلات سینٹ میں پیش نہ کرنے پر ایوان بالا میں (آج ) اٹارنی جنرل طلب، کیا سپریم کورٹ کو معلومات فراہم نہ کرنے پر استثنیٰ حاصل ہے،چیئرمین سینٹ ، ایوان بالا قانونی ماہرین کو ایوان میں طلب کرکے ان سے آئینی رابطے کیلئے تجاویز لے سکتا ہے،وفاقی وزیر قانون

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔4 مارچ۔2015ء) سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس کی پنشن اور مراعات کی تفصیلات سینٹ میں پیش نہ کرنے پر ایوان بالا میں (آج بدھ) اٹارنی جنرل کو طلب کرلیا گیا اور چیئرمین سینٹ نے ریمارکس دیتے ہوئے کہاکہ کیا سپریم کورٹ کو معلومات فراہم نہ کرنے پر استثنیٰ حاصل ہے؟ وفاقی وزیر قانون پرویز رشید نے کہا کہ ایوان بالا قانونی ماہرین کو ایوان میں طلب کرسکتا ہے اور ان سے آئینی رابطے کیلئے تجاویز لے سکتا ہے۔

منگل کے روز سینٹ کے اجلاس میں چیئرمین سینٹ نیئر حسین بخاری نے اپنی آبزرویشن میں کہا کہ 6 مرتبہ سپریم کورٹ کو خط لکھ چکے ہیں کہ سپریم کورٹ کے سابق چیف جسٹس کی پنشن اور مراعات سے متعلق ایوان بالا کو معلومات فراہم کی جائیں مگر ٹال مٹول سے کام لیا جارہا ہے۔ کیا سپریم کورٹ پارلیمنٹ کو جوابدہ نہیں ہے؟ جس پر وفاقی وزیر قانون پرویز رشید نے کہا کہ حکومت کو اٹارنی جنرل کو طلب کئے جانے اور آئینی رائے لینے پر کوئی اعتراض نہیں۔

انہوں نے بتایا کہ سابق چیف جسٹس کو دی جانے والی مراعات پنشن اور مراعات سے متعلق رپورٹ کو ایوان

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

04-03-2015 :تاریخ اشاعت