الطاف حسین پاکستانی عوام کو تشدد اور نفرت پر ا کسا رہے ہیں۔ ایم کیو ایم مافیا کی ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ فروری

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
تاریخ اشاعت: 2015-02-11
پچھلی خبریں -

اسلام آباد

اسلام آباد شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:05 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:06 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:09 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:16 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:11:11 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:11:13 اسلام آباد کی مزید خبریں

تلاش کیجئے

الطاف حسین پاکستانی عوام کو تشدد اور نفرت پر ا کسا رہے ہیں۔ ایم کیو ایم مافیا کی پارٹی کے طور پر جانی جاتی ہے، پاکستان تحریک انصاف نے برطانوی ہائی کمشنر کو کھلا خط لکھ دیا ،برطانوی حکومت اپنے شہری کی غیر قانونی سرگرمیوں کا نوٹس لے ، الطاف حسین کے خلاف کارروائی کی جائے،خط میں مطالبہ، ایم کیو ایم نے عمران خان کے خلاف امریکی سفیر رچرڈ اولسن کے نام خط لکھ دیا،لاس اینجلس کے کیرون وائٹ فیصلے پر عمل درآمد کرایا جائے،مطالبہ

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔ 11فروری۔2015ء) پاکستان تحریک انصاف نے برطانوی ہائی کمشنر کو کھلا خط لکھ دیا جس میں کہا گیا ہے الطاف حسین پاکستانی عوام کو تشدد اور نفرت پر ا کسا رہے ہیں۔ ایم کیو ایم مافیا کی پارٹی کے طور پر جانی جاتی ہے۔ خط تحریک انصاف کی سیکرٹری اطلاعات شیریں مزاری کی جانب لکھا گیا ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق منگل کے روز پاکستان تحریک انصاف کی سیکرٹری اطلاعات شیریں مزاری کی جانب سے الطاف حسین کے خلاف برطانوی ہائی کمشنر فلپ بارٹن کوکھلا خط لکھا گیا ہے۔

جس میں لکھا گیا ہے کہ ایم کیو ایم صحافیوں اور سیاسی شخصیات کے قتل میں ملوث ہے ایم کیو ایم کا مسلح و نگ موجود ہے جو لوگوں کو قتل کرتا ہے ان سے بھتہ وصول کرتا ہے۔ اوران کو ڈراتا دھمکاتا ہے جس کی وجہ سے شہری ایم کیو ایم سے خوفزدہ ہیں الطاف حسین کی پارٹی مافیا کی پارٹی کے طو رپر مانی جاتی ہے الطاف حسین عوام کو تشدد اور نفرت پر اکسا رہا ہے کئی دہائیوں سے کراچی کے شہریوں کو خوفزدہ کر رکھا ہے الطاف حسین اس کیلئے برطانوی سرزمین استعمال

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11-02-2015 :تاریخ اشاعت