سرگودھا ،سوئی گیس کے ستائے لوگوں کا سوئی گیس دفتر پر قبضہ ،کئی گھنٹے تک دھرنا ،ملازمین ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ جنوری

مزید قومی خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
تاریخ اشاعت: 2015-01-28
-

سرگودھا

تلاش کیجئے

سرگودھا ،سوئی گیس کے ستائے لوگوں کا سوئی گیس دفتر پر قبضہ ،کئی گھنٹے تک دھرنا ،ملازمین نے سروس جیبوں میں ڈال لئے جبکہ متعدد ملازمین جلوس دیکھ کر بھاگ گئے ،ن لیگ کے رکن قومی اسمبلی چوہدری حامد حمید‘ رکن صوبائی اسمبلی عبدالرزاق ڈھلوں‘ ڈاکٹر نادیہ عزیز سمیت دیگر سرکاری ملازمین بھی جلوس میں شریک ہوئے

سرگودھا (اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔28جنوری۔2015ء) سوئی گیس کے ستائے ہوئے لوگوں نے سوئی گیس آفس پر قبضہ کرلیا اور کئی گھنٹے تک دھرنا دیئے رکھا‘ ملازمین نے اپنے سروس کارڈ گلوں سے اتار کر جیبوں میں ڈال لئے جبکہ متعدد ملازمین جلوس دیکھ کر بھاگ گئے سرکاری گاڑیوں کو جلوس کی اطلاع ملنے پر دفتر سے نکال دیا گیا‘ شہر بھر میں ٹریفک کا نظام معطل‘ پاکستان مسلم لیگ ن کے رکن قومی اسمبلی چوہدری حامد حمید‘ رکن صوبائی اسمبلی عبدالرزاق ڈھلوں‘ ڈاکٹر نادیہ عزیز سمیت دیگر سرکاری ملازمین بھی حکومت کیخلاف نکلنے والے جلوس میں شریک ہوئے گزشتہ روز پاکستان الیکٹرک مینو فیکچرز ایسوسی ایشن نے سوئی گیس کی بدترین لوڈ شیڈنگ کیخلاف مکمل ہڑتال‘ ریلی‘ دھرنا کی کال دی تھی جس میں مرکزی انجمن تاجران ‘ بیکو لائٹ مینو فیکچرز‘ ٹریڈرز ‘ براس پارٹس‘ پتل ڈھلائی والے ‘ پرنٹنگ پریس اور ڈائی میکرز نے آر ایم سرگودھا محکمہ سوئی گیس کیخلاف سخت نعرے بازی کی مظاہرین نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ نااہل آر ایم کو فوری طور پر تبدیل کرکے اہل آر ایم تعینات کیا جائے اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے شرکائے ریلی نے کہا کہ سرگودھا شہر کیساتھ محکمہ سوئی گیس والے سوتیلی ماں کا سلوک کررہے ہیں عرصہ 4 ماہ سے مسلسل سوئی گیس کی بندش سے غریبوں کے چولہے بند ہوکر رہ گئے ہیں صبح کا ناشتہ اور رات کا کھانا بھی ہوٹلوں سے کھانے پر مجبور ہیں جبکہ سفید پوش لوگ اپنی عزت بچانے کیلئے سلنڈروں پر گزارہ کررہے ہیں جس پر سرگودھا کی بیکو لائٹ کیساتھ ساتھ تاجر تنظیموں نے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

28-01-2015 :تاریخ اشاعت