لاہور ، این اے 122 میں مبینہ انتخابی دھاندلی کے حوالے سے کمیشن کے جج نے الیکشن ٹربیونل ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار جنوری

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
تاریخ اشاعت: 2015-01-25
پچھلی خبریں -

لاہور

تلاش کیجئے

لاہور ، این اے 122 میں مبینہ انتخابی دھاندلی کے حوالے سے کمیشن کے جج نے الیکشن ٹربیونل میں رپورٹ جمع کرا دی، این اے122 میں ایک بھی ووٹ جعلی نہیں نکلا،حلقے میں بے ضابطگیاں پائی گئیں ہیں،حتمی فیصلہ الیکشن ٹریبونل نے کرنا ہے،غلام حسین اعوان ،پولنگ کے دوران عملے نے لاپرواہی اور غفلت کا مظاہرہ کیا ، بغیر مہر بیلٹ پیپرز کو مسترد کردیا ،بیان قلمبند، تیس ہزار سے زائد کاؤنٹر فائل بیلٹ پیپرز کو ماننے یا نہ ماننے کا فیصلہ کمیشن نے الیکشن ٹربیونل پر چھوڑ دیا ،دھاندلی کے واضح ثبوت سامنے نہیں آئے‘ کلیریکل غلطی یا عملے کی لاپرواہی کے حوالے سے کہا جا سکتا ہے‘ تحقیقاتی رپورٹ میں آنے والی خامیوں کا فائدہ کسی ایک امیدوار کو نہیں دیا جا سکتا‘ الیکشن ٹریبونل کے جج کے ریمارکس

لاہور( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔25جنوری۔2015ء ) قومی اسمبلی کے حلقہ این اے 122 میں مبینہ انتخابی دھاندلی کے حوالے سے کمیشن کے جج ملک غلام حسین نے الیکشن ٹربیونل میں رپورٹ جمع کراتے ہوئے بیان قلمبند کرایا کہ پولنگ کے دوران عملے نے لاپرواہی اور غفلت کا مظاہرہ کیا ہے ، بغیر مہر بیلٹ پیپرز کو مسترد کردیا جبکہ تیس ہزار سے زائد کاؤنٹر فائل بیلٹ پیپرز کو ماننے یا نہ ماننے کا فیصلہ کمیشن نے الیکشن ٹربیونل پر چھوڑ دیا جبکہ الیکشن ٹریبونل کے جج نے کہا کہ دھاندلی کے واضح ثبوت سامنے نہیں آئے تحقیقاتی رپورٹ میں خامیوں کا فائدہ کسی ایک امیدوار کو نہیں دیا جا سکتا کیس کی سماعت 31 جنوری تک ملتوی۔

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کے این اے 122 میں دھاندلی پر الیکشن ٹربیونل کی جانب سے قائم کی جانے والی تحقیقاتی کمیشن کے جج ملک غلام حسین اعوان نے تحقیقات مکمل کرکے رپورٹ ٹربیونل میں پیش کردی اور انہوں نے اس رپورٹ پر بیان بھی قلمبند کراتے ہوئے کہا کہ این اے 122 میں پولنگ کے دوران لاپرواہی اور غفلت کا بدترین مظاہرہ کیا ہے بیلٹ پیپر کی پشت اور کاؤنٹر فائل پر پولنگ عملے کی مہر اور دسختط جو کہ قانون کے مطابق ضروری ہیں وہ بھی موجود نہیں ملک غلام حسین نے بتایا کہ جس بیلٹ پیپرز کے پیچھے مہر نہیں ہے ان کو مسترد کردیا اور جن بیلٹ پیپرز کے ساتھ کاؤنٹر فائل ہیں جن کی تعداد تیس ہزار 132ہے جن کو دھاندلی کے زمرے میں لیا جاسکتا ہے اس پر جج نے رپورٹ اور زبانی بھی نہیں بتایا کہ دھاندلی ہوئی اب تیس ہزار 132کاؤنٹر فائل کو قبول کرنا یا نہ کرنا الیکشن ٹربیونل کے اختیار میں ہے۔

کمیشن کے جج ملک غلام حسین کے بیان کے بعد سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق اور عمران خان کے وکلاء نے جراح کی جس میں ایاز صادق کے وکلاء نے تحقیقات جج سے پوچھا کہ این اے 122 پر کتنی دھاندلی سامنے آئی ہے جس پر جج نے کہا کہ الیکشن ٹربیونل میں بیان ریکارڈ کرایا کہ دھاندلی نظر نہیں آئی لیکن بے ضبطگیاں اور عملے کی غفلتیں نظر آئی ہیں ان کو رپورٹ میں بھی پیش کر دیا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

25-01-2015 :تاریخ اشاعت

:متعلقہ عنوان