ڈنمارک کی حکومت جنوبی وزیرستان اور خیبر ایجنسی میں بے گھر افراد کی بحالی کیلئے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
اتوار جنوری

مزید اہم خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
تاریخ اشاعت: 2015-01-11
- مزید خبریں

لاہور

تلاش کیجئے

ڈنمارک کی حکومت جنوبی وزیرستان اور خیبر ایجنسی میں بے گھر افراد کی بحالی کیلئے ایک اعشاریہ 6 ملین امریکن ڈالرز امداد دیگی،یہ امداد اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کے ذریعے خرچ کی جائے گی، جس میں خواتین پر خصوصی توجہ دی جائے گی، جسپر ایم سورنسن کا میٹ دی پریس میں اظہار خیال

لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔11جنوری۔2015ء)ڈنمارک کی حکومت جنوبی وزیرستان اور خیبر ایجنسی میں بے گھر افراد کی بحالی کیلئے ایک اعشاریہ 6 ملین امریکن ڈالرز امداد دے گی۔ یہ امداد اقوام متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کے ذریعے خرچ کی جائے گی۔ جس میں خواتین پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔ ڈنمارک پاکستان میں امن کے قیام کیلئے اپنی کوشش جاری رکھے گا۔ اس ضمن میں جلد ہی ایک وفد پاکستان کے دورے پر آئے گی جو نئے سال 2016ء کیلئے پروگرام تشلیل دے گا۔

پاکستان میں ہونیوالی دہشت گرد سے بہت متاثر ہوا ہے جس کو ڈنمارک تسلیم کرتا ہے اور دہشت گردی کی روک تھام کیلئے ہر قسم کے تعاون کو جاری رکھے گا۔ ڈنمارک پاکستان میں میڈیا پروگرام شروع کرے گا۔ ان خیالات کا اظہار پاکستان میں ڈنمارک کے سفیر جسپر ایم سورنسن نے گزشتہ روز لاہور پریس کلب میں میٹ دی پریس میں کیا۔ انہوں نے کہا کہ اسوقت مختلف تنازعات کی وجہ سے پاکستان کو غیر معمولی حالات اور سنجیدہ چیلنجز درپیش ہیں، بے گھر افراد کی صورتحال بھی بہت خراب ہے۔

اور ان میں زیادہ تر تعداد بچوں اور خواتین کی ہے۔ آج ایک ملین بچے اور عورتیں بغیر سماجی تحفظ کے زندگی گزار رہے ہیں۔ ڈنمارک کے سفیر جسپر سورنسن نے کہا کہ بے گھر افراد کیلئے ہماری امداد کا مقصد حکومت اور امدادی اداروں کی طرف سے فراہم کردہ مالی امداد میں خصوصی طور پر بچوں اور خواتین کی ضروریات کا خیال رکھنا ہے۔ انہوں نے جنوبی وزیرستان میں آپریشن کے نتیجے میں تقریباً نو لاکھ ترانوے ہزار افراد بے گھر ہوئے۔

جن میں 73% بچے اور خواتین شامل ہیں۔ اس کے علاوہ خیبر ایجنسی اور ملحقہ علاقوں میں آپریشن بے گھر سے تقریباً چھ لاکھ تیس ہزار افراد بے گھر ہوئے ہیں۔ اور خیبر ایجنسی میں اب تک بے گھر ہونے والے افراد میں 81% بچے اور عورتیں ہیں۔ ڈنمارک کے سفیر نے کہا کہ ڈنمارک کی جانب سے دی جانے والی امداد سے بے گھر افراد کو ہنگامی پناہ اور سردی سے بچاؤ کیلئے خیمے ، کھانے، پینے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11-01-2015 :تاریخ اشاعت