بلوچستان: اسلحہ ڈپو سے کروڑوں کا اسلحہ غائب،غبن کے الزام میں چھ پولیس اہلکاروں ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
ہفتہ جنوری

مزید قومی خبریں

تاریخ اشاعت: 2015-01-03
تاریخ اشاعت: 2015-01-03
تاریخ اشاعت: 2015-01-03
تاریخ اشاعت: 2015-01-03
تاریخ اشاعت: 2015-01-03
تاریخ اشاعت: 2015-01-03
پچھلی خبریں -

کوئٹہ

تلاش کیجئے

بلوچستان: اسلحہ ڈپو سے کروڑوں کا اسلحہ غائب،غبن کے الزام میں چھ پولیس اہلکاروں کو گرفتار کر کے ان کے خلاف مقامی تھانے میں ایف آئی آر درج

کوئٹہ ( اُردو پوائنٹ اخبارآن لائن۔3 جنوری۔2015ء )بلوچستان کے دارالحکومت کوئٹہ میں محکمہ پولیس کے اسلحہ ڈپو سے کروڑوں روپے مالیت کا سرکاری اسلحہ غائب ہوا ہے۔ اب غبن کے الزام میں چھ پولیس اہلکاروں کو گرفتار کر کے ان کے خلاف مقامی تھانے میں ایف آئی آر درج کر لی گئی ہے۔ حکام کے مطابق سرکاری اسلحے میں یہ مبینہ غبن بلوچستان پولیس کے ذیلی ونگ بلوچستان کانسٹیبلری کے اسلحہ ڈپو میں کیا گیا ہے، جس کا انکشاف ایک تحقیقاتی رپورٹ میں سامنے آیا ہے۔

صوبائی حکومت کو پیش گئی اس رپورٹ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ گزشتہ سال دسمبر میں بلوچستان کانسٹیبلری کے البدر لائن میں واقع اسلحہ ڈپو میں آتش زدگی کا جو واقعہ پیش آیا تھا، وہ حادثاتی واقعہ نہیں تھا۔ بلکہ اس واقعے میں محکمے کے کچھ اہلکار ملوث تھے، جنہوں نے مبینہ طور پر اسلحہ ڈپو سے کروڑوں روپے مالیت کا اسلحہ چوری کیا اور بعدازاں اسے نجی مارکیٹ میں بھاری ر قم کے عوض بیچ دیا۔رپورٹ کے مطابق تحقیقات کے دوران معلوم ہوا ہے کہ بی سی کے غبن میں ملوث اہلکاروں نے اسلحہ ڈپو کو مبینہ طور پر خود ہی آگ لگائی تھی اور یہ ثابت کرنے کی کوشش کی کہ غائب ہونے والا اسلحہ ڈپو میں آتش زدگی کے دوران تباہ ہوا ہے۔

فورسز نے کوئٹہ کے مختلف علاقوں میں قائم نجی اسلحہ ڈیلروں کی دکانوں پر بھی چھاپے مارے ہیں اور اب تک 14 اسلحہ ڈیلروں کو حراست میں لیا گیا ہیذرائع کے مطابق تحقیقاتی رپورٹ سامنے آنے کے بعد صوبائی محکمہ داخلہ نے اس ضمن میں فوری کارروائی کا حکم دیا ہے۔ اس سلسلے میں تحقیقاتی ٹیموں نے اسلحہ چوری کرنے کے الزام میں چھ نامزد پولیس اہلکاروں عبدالحمید، سائیں بخش مصور علی اور دیگر کو چھاپے مارتے ہوئے گرفتار کر لیا ہے۔

گرفتار اہلکاروں کی نشاندہی پر سکیورٹی فورسز نے کوئٹہ کے مختلف علاقوں میں قائم نجی اسلحہ ڈیلروں کی دکانوں پر بھی چھاپے مارے ہیں اور اب تک 14 اسلحہ ڈیلروں کو حراست میں لیا گیا ہے، جن سے اس حوالے سے تحقیقات کی جا رہی ہیں۔حکام کے مطابق بلوچستان کانسٹیبلزی کے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

03-01-2015 :تاریخ اشاعت

:متعلقہ عنوان