پانامہ لیکس کیس میں قطری شہزادے کی انٹری، لگتا ہے دال میں کچھ کالا ضرور ہے،خورشید ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:36:11 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:36:06 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:35:59 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:32:07 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:32:05 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:23:38 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:23:35 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:23:28 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 19:02:42 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 18:53:33 وقت اشاعت: 17/11/2016 - 18:49:13
پچھلی خبریں - مزید خبریں

ملکوال

پانامہ لیکس کیس میں قطری شہزادے کی انٹری، لگتا ہے دال میں کچھ کالا ضرور ہے،خورشید شاہ

آئے روز بھارتی در اندازی پر حکومت کی کمزوری اور جاندار موقف نہ اپنانے کے باعث بڑھتی جا رہی ہے،حکومت نے ترک صدر کی آمد پر چھوٹے صوبوں کو نظر انداز کر کے اچھا تاثر نہیں دیا , چوہدری نثار کی کسی بات یاعمل پر یقین نہیں کیا جاسکتا وہ صبح کچھ اور شام کو کچھ بیان دیتے ہیں , گورنر سندھ کی تعیناتی کے حوالہ سے مشورہ نہ سہی تاہم ا وزیراعظم گورنر موصوف کو کم از کم دیکھ ہی لیتے تو ان کی تقرری نہ کرتے , گو بابا گو کی سیاست کے طرز عمل سے حکومتیں نہیں جاتیں ،پارلیمنٹ کو بالا ہونا چاہئے فیصلے کورٹ کی بجائے پارلیمنٹ میں ہونے چاہیئں ،اپوزیشن لیڈر

ملکوال(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 17 نومبر2016ء) پیپلز پارٹی کے مرکزی رہنما اور اپوزیشن لیڈرخورشید شاہ نے کہا ہے کہ پانامہ لیکس سے متعلقہ کیس کے حوالہ سے قطری شہزادے کی طرف سے عدالت میں پیش کئے جانے والے خط سے لگتا ہے کہ دال میں کچھ کالا ضرور ہے،تاہم پانامہ لیکس پر بل پارلیمنٹ سے پاس ہوتا تو بہت اچھا ہوتا، ان خیالات کا اظہار انہوں نے ملکوال پریس کلب میں گفتگو کرتے ہوئے کیاانہوں نے کہا کہ آئے روز انڈیا کی طرف سے پر در اندازی حکومت کی کمزوری اور جاندار موقف نہ اپنانے کے باعث بڑھتی جا رہی ہے۔

خورشید شاہ نے کہا کہ حکومت نے ترک صدر کی آمد پر چھوٹے صوبوں کو نظر انداز کر کے اچھا تاثر نہیں دیا ۔انہوں نے کہا کہ چوہدری نثار کی کسی بات یاعمل پر یقین نہیں کیا جاسکتا وہ صبح کچھ اور شام کو کچھ بیان دیتے ہیں،گورنر سندھ کی تعیناتی کے حوالہ سے مشورہ نہ سہی تاہم اگر وزیراعظم گورنر موصوف کو کم از کم دیکھ ہی لیتے تو ان کی تقرری نہ کرتے۔

انہوں نے کہا کہ گو بابا گو کی سیاست کے طرز عمل سے حکومتیں نہیں جاتیں ،پاکستانی سیاستدان اور پارٹیاں کرپٹ ہیں عوام کو ہی انکا احتساب کرنا ہوگا۔پارلیمنٹ کو بالا ہونا چاہئے فیصلے کورٹ کی بجائے پارلیمنٹ میں ہونے چاہیئں ۔نواز شریف کالا کوٹ اور لال ٹائی لگا کر میمو

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

17/11/2016 - 19:23:38 :وقت اشاعت