دنیا کو بھارتی اشتعال انگیزی کی مذمت کرنی چاہیے ،ْ طارق فاطمی
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل نومبر

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 15/11/2016 - 15:09:38 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:45:48 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:49 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:47 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:44 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:43 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:41 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:44:40 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:35:45 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:40:45 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 14:37:20
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

دنیا کو بھارتی اشتعال انگیزی کی مذمت کرنی چاہیے ،ْ طارق فاطمی

بھارت سرحد پر عام شہریوں کو نشانہ بنانے کے بجائے کشمیریوں کو بنیادی حق دے ،ْ وطن عزیز کے دفاع کیلئے ہماری مسلح افواج مکمل تیار ہیں ،ْ کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا ،ْ امریکی نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بارے میں ابھی سے ہی پیشنگوئیاں کرنا مناسب نہیں ،ْمعاون خصوصی کا انٹرویو

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 نومبر2016ء) وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے خارجہ امور سید طارق فاطمی نے کہا ہے کہ دنیا کو بھارتی اشتعال انگیزی کی مذمت کرنی چاہیے ،ْ بھارت سرحد پر عام شہریوں کو نشانہ بنانے کے بجائے کشمیریوں کو بنیادی حق دے ،ْ وطن عزیز کے دفاع کیلئے ہماری مسلح افواج مکمل تیار ہیں ،ْ کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا ،ْ امریکی نو منتخب صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے بارے میں ابھی سے ہی پیشنگوئیاں کرنا مناسب نہیں۔

ایک انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ بھارتی اشتعال انگیزی کی نہ صرف پاکستان بلکہ پوری دنیا کو مذمت کرنی چاہیے کیونکہ بھارت بلاوجہ اشتعال انگیزی پیدا کر نا چاہتا ہے جس کے منفی اثرات سے پورا خطہ متاثر ہو سکتا ہے، بھارت سرحدوں پر کشیدگی پیدا کر کے کشمیریوں کی پرامن تحریک آزادی پر اثر انداز ہونا چاہتا ہے، کشمیریوں کی پرامن تحریک آزادی نے بھارت کو پاگل کر رکھا ہے، بھارتی جارحیت مقبوضہ کشمیر میں نہ تو پہلے کشمیریوں کو دبانے میں کامیاب ہوئی ہے اور نہ ہی اب ہوگی کیونکہ کشمیری اپنے بنیادی حق حق خود ارادیت کا پختہ عزم لیے اپنی پرامن تحریک کو جاری رکھے ہوئے ہیں اور کشمیری نوجوانوں کی حالیہ شہادتوں نے اس تحریک میں ایک نئی لہر پھونک دی ہے، معاون خصوصی نے کہاکہ پاکستانی افواج بھارتی جارحیت کا منہ توڑ جواب تو دیتی ہیں لیکن اس کے باوجود ہم ایک ذمہ دار ریاست ہیں اورہماری ایک ذمہ دارانہ پالیسی ہے جس پر ہم گامزن ہیں، ہم خطے میں کشیدگی نہیں چاہتے اور بھارت سمیت تمام ہمسائیوں سے بہتر تعلقات کے خواہاں ہیں تا کہ خطہ ترقی کرے اور لوگ خوشحال ہوں، یہی وجہ ہے کہ ہماری اس پالیسی کو دنیا بھر میں سراہا جا رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ بھارت کو چاہیے کہ سرحد پر موجود عام شہریوں کو نشانہ بنانے کی بجائے جو اصل مسئلہ ہے اس کو حل کرے اور مقبوضہ کشمیر کے لوگوں کو ان کا بنیادی حق دے تاکہ وہ بھی آزادی سے اپنی زندگی گذار سکیں، دنیا جانتی ہے کہ مقبوضہ کشمیر ایک متنازعہ علاقہ ہے جس کے متعلق قراردادیں اقوام متحدہ میں بھی موجود ہیں اس مسئلے کا واحد حل باہمی مذاکرات ہی ہیں اس کے علاوہ اس مسئلے کو حل نہیں کیا جا سکتا۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ بھارت پاکستان کی سرحد پر معصوم شہریوں کو نشانہ بنا کر یا مقبوضہ وادی میں ظلم و ستم کر کے مسئلہ کشمیر کو حل نہیں کر سکتا، پاکستانی مسلح افواج دنیا کی بہترین افواج میں سے ایک ہے اوربھارت کی کسی بھی قسم کی جارحیت کامنہ توڑ جواب دینے کی بھرپور صلاحیت رکھتی ہیں اور اس میں پاکستانی حکومت اور قوم اپنی افواج کے ساتھ کھڑی ہیں، ہم امن کے خواہاں ہیں اور کشیدگی نہیں چاہتے تاہم ہماری امن کی اس خواہش کو ہماری کمزوری ہرگز نہ سمجھا جائے کیونکہ وطن عزیز کے دفاع کے لیے ہماری مسلح افواج مکمل تیار ہیں اور اس سلسلے میں کسی بھی قربانی سے دریغ نہیں کیا جائیگا، عالمی سطح پر بھی بھارت کو یہ بار بار کہا جا رہا ہے کہ وہ مقبوضہ کشمیر کے لوگوں پر ظلم و ستم بند کرے اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے باز رہے اور اس مسئلے کے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

15/11/2016 - 14:44:43 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان