روسی لڑاکا طیارہ مگ۔ 29 بحیرہ روم میں گر کر تباہ،پائلٹ کو بچا لیا گیا
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل نومبر

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:46:41 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:46:41 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:33 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:33 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:32 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:31 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:30 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:28 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:28 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:45:28 وقت اشاعت: 15/11/2016 - 12:24:48
پچھلی خبریں - مزید خبریں

روسی لڑاکا طیارہ مگ۔ 29 بحیرہ روم میں گر کر تباہ،پائلٹ کو بچا لیا گیا

ماسکو ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 15 نومبر2016ء) روس کا لڑاکا طیارہ بحیرہ روم میں گر کر تباہ ہو گیا۔ روس کی وزارتِ دفاع کا کہنا ہے کہ مگ۔ 29 لڑاکا طیارہ بحری بیڑے پر لینڈ کرنے کی کوشش کے دوران بحیرہ روم میں گر کر تباہ ہوا، حادثہ تربیتی پرواز میں تکینکی خرابی کے باعث پیش آیا۔ حکام کا کہنا ہے کہ جنگی طیارہ بحری بیڑے سے چند کلو میٹر دور گرا تاہم امدای ٹیم نے پائلٹ کو بچا لیا۔

روسی وزارت دفاع کے مطابق پائلٹ کی جان کو کوئی خطرہ نہیں ہے اور وہ دوبارہ پرواز کے لیے تیار ہے۔ وزارتِ دفاع کا کہنا ہے کہ فلائٹ آپریشنز کو معطل نہیں کیا گیا۔ واضح رہے کہ یہ بحری بیڑہ روس کی جانب سے حال ہی میں شام کے ساحل کے قریب تعینات روسی جنگی جہازوں کے ایک گروپ کا حصہ ہے۔ نیٹو نے اس بحری بیڑے کی موجودگی پر تشویس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسے شام کے شہر حلب میں عام شہریوں پر حملہ کرنے کے لیے استعمال کیا جائے گا۔
15/11/2016 - 12:45:31 :وقت اشاعت