فرانس ،جنگل میں دوکانیں بند نہ کی جائیں، عدالتی فیصلہ
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
ہفتہ اگست

فرانس ،جنگل میں دوکانیں بند نہ کی جائیں، عدالتی فیصلہ

پیرس(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔13 اگست ۔2016ء)فرانس کی ایک عدالت نے شمالی بندرگاہی شہر کیلے میں قائم مہاجرین کے عارضی کیمپ میں واقع بہتر دوکانوں کو بند کرنے کے حکومتی مطالبے کو مسترد کر دیا ہے۔ ان دوکانوں کو اس کیمپ کے سات ہزار مکینوں کے لیے اہم قرار دیا جاتا ہے۔میڈیارپورٹس کے مطابق فرانسیسی حکام نے بتایا کہ لیل کی ایک عدالت نے فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ کیلے کے کیمپ میں واقع ان دوکانوں کو بند نہیں کیا جانا چاہیے۔

تاہم شہری انتظامیہ اس عدالتی فیصلے کے خلاف اپیل دائر کرنے کے لیے پرعزم ہے۔کیلے کے ریجن میں واقع مہاجرین کی اس عارضی بستی میں یہ دوکانیں رفتہ رفتہ معرض وجود میں آئی ہیں۔ ان میں کھانے پینے کی دوکانوں کے علاوہ دیگر بنیادی ضروری سامان فروخت کیا جاتا ہے۔ ساتھ ہی باربر اور دیگر خدمات فراہم کرنے والوں نے بھی اپنی دوکانیں بنا لی ہیں۔

کیلے کی شہری حکومت کے مطابق یہ دوکانیں غیر قانونی ہیں اور اس سلسلے میں کوئی اجازت نہیں لی گئی ہے۔ اس علاقے کی انتظامیہ نے کہا ہے کہ وہ عدالتی فیصلے کو چیلنج کرے گی کیونکہ یہ دوکانیں ملکی اقتصادیات میں ’سیاہ معیشت‘ کے مانند ہیں۔کیلے میں واقع مہاجرین کی اس بستی کو ’جنگل‘ کے نام سے بھی پکارا جاتا ہے۔ اس مہاجر

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

13/08/2016 - 11:41:35 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان