بھارت اور افغانستان بلوچستان میں حالات خراب کرنے کے پیچھے کارفرما ہیں جن کو اس ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعہ اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:33:41 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:33:41 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:33:41 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:32:54 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:32:54 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:32:06 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:32:06 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:32:06 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:23:26 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:20:41 وقت اشاعت: 12/08/2016 - 16:18:37
پچھلی خبریں - مزید خبریں

کوئٹہ

بھارت اور افغانستان بلوچستان میں حالات خراب کرنے کے پیچھے کارفرما ہیں جن کو اس سلسلے میں شک ہے انہیں ثبوت میں فراہم کروں گا ،ایجنسیوں اورسیکورٹی فورسز پر تنقید درست نہیں، اسے عوام بھی کسی طور پر پسند نہیں کرتے ،نیشنل ایکشن پلان کے جن نکات پرعملدرآمد میں بہتری کی ضرورت ہے اس پر کام کیاجاناچاہئے ،نفرت انگیز تقاریر اوردیگر کیخلاف فوری قانون سازی کی جانی چاہئے ،دشمن قوتوں پر واضح کردیناچاہتے ہیں کہ ان کی سازشوں سے قوم آگاہ ہے،نہیں کسی صورت کامیاب نہیں ہونے دیاجائیگا

سابق وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک کی سی ایم ایچ ہسپتال میں بم دھماکے میں زخمی ہونیوالے وکلا کی عیادت،میڈیا سے گفتگو

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔12 اگست ۔2016ء )پاکستان پیپلزپارٹی کے مرکزی رہنماء وسینیٹر اورسابق وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک نے کہاہے کہ بھارت اور افغانستان بلوچستان میں حالات خراب کرنے کے پیچھے کارفرما ہے جن کو اس سلسلے میں شک ہے انہیں ثبوت میں فراہم کروں گا ایجنسیوں اورسیکورٹی فورسز پر تنقید درست نہیں اس سے عوام بھی کسی طور پر پسند نہیں کرتے ،نیشنل ایکشن پلان کے جن نکات پرعملدرآمد میں بہتری کی ضرورت ہے اس پر کام کیاجاناچاہئے ،نفرت انگیز تقاریر اوردیگر کیخلاف فوری قانون سازی کی جانی چاہئے ،دشمن قوتوں پر واضح کردیناچاہتے ہیں کہ ان کی سازشوں سے قوم آگاہ ہے اورانہیں کسی صورت کامیاب نہیں ہونے دیاجائیگا ۔

وہ سی ایم ایچ ہسپتال میں بم دھماکے میں زخمی ہونیوالے وکلاء کی عیادت اورہائی کورٹ میں شہداء کی فاتحہ خوانی کے بعد میڈیا نمائندوں سے بات چیت کررہے تھے ۔رحمن ملک کاکہناتھاکہ کوئٹہ کو اس سے قبل کبھی بھی اتنا غمزدہ نہیں دیکھا وکلاء پر سول ہسپتال میں کیا جانے والا حملہ دراصل پاکستان پر حملہ ہے ،دہشت گرد منظم اداروں سے وابستہ افراد کو نشانہ بنارہے ہیں وکلاء سے قبل وہ ایف سی ،پولیس ،فوج سمیت دیگر اداروں کے اہلکاروں اور وابستہ اطراد کونشانہ بناتے رہے ہیں ،انہوں نے کہاکہ وکلاء کے تحفظ کیلئے الگ ایلیٹ فورس تشکیل دینی چاہئے تاکہ ان کا تحفظ ممکن بنائی جاسکے اس کے علاوہ شہداء سمیت دیگر وکلاء کے خاندانوں کی کفالت کیلئے ٹرسٹ کا قیام عمل میں لایاجاناچاہئے کیونکہ سارے وکیل امیر نہیں ہوا کرتے بعض جونیئر ہے تو بعض والدین اور دیگر کی خدمت میں بھی لگے رہتے ہیں انہوں نے کہاکہ مجھے پیپلزپارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زردار ی اورکو چیئرمین آصف علی زرداری نے وکلاء سے اظہار ہمدردی کیلئے بھیجا پاکستان پیپلزپارٹی کی لیڈر شپ اور جیالے غمز دہ خاندانوں کیساتھ کھڑی ہے انہوں نے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

12/08/2016 - 16:32:06 :وقت اشاعت