کوئٹہ بم دھماکہ میں شہید ہونے والے وکلاء کے خاندانوں کی بحالی کیلئے تمام وسائل ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:05:42 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:05:42 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:04:38 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:03:46 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:03:46 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:03:46 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:02:56 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:02:56 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:02:56 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:00:47 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 19:00:02
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

اسلام آباد شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:05 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:06 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:09 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:05:16 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:11:11 وقت اشاعت: 19/01/2017 - 11:11:13 اسلام آباد کی مزید خبریں

کوئٹہ بم دھماکہ میں شہید ہونے والے وکلاء کے خاندانوں کی بحالی کیلئے تمام وسائل بروئے کارلائے جارہے ہیں ٗعلی ظفر

بلوچستان حکومت نے تمام شہید وکلاء کے اہل خانہ کوفی کس ایک کروڑ روپے معاوضہ دینے پرآمادگی ظاہرکردی , قومی ایکشن پلان پرمکمل عملدرآمد چاہتے ہیں جس کیلئے سپریم کورٹ بار نے تھنک ٹینک قائم کرکے تجاویز طلب کرلی ہیں ٗگفتگو

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 اگست ۔2016ء)سپریم کورٹ بارکے صدرسیدعلی ظفرنے کہاہے کہ کوئٹہ بم دھماکہ میں شہید ہونے والے وکلاء کے خاندانوں کی بحالی کیلئے تمام وسائل بروئے کارلائے جارہے ہیں، بلوچستان حکومت نے تمام شہید وکلاء کے اہل خانہ کوفی کس ایک کروڑ روپے معاوضہ دینے پرآمادگی ظاہرکردی ہے تاہم زخمی وکلاء کوعلاج کے بعدان کی حالت کے پیش نظرمعاوضہ فراہم کیاجائے گا، قومی ایکشن پلان پرمکمل عملدرآمد چاہتے ہیں جس کیلئے سپریم کورٹ بار نے تھنک ٹینک قائم کرکے تجاویز طلب کرلی ہیں،سپریم کورٹ میں زیرالتوادہشت گردی سے متعلق مقدمات کاجلد فیصلہ کیاجائے۔

جمعرات کویہاں سپریم کورٹ میں کوئٹہ واقعہ کے حوالے سے ذرائع ابلاغ سے بات چیت کرتے ہوئے سیدعلی ظفرنے کہاکہ کوئٹہ کے دورے کے دوران ہم نے تمام شہید اورزخمی وکلاء کے اہل خانہ سے ملاقات کی ہے اوران کوہرطرح سے تعاون کایقین دلایاہے ان کاکہناتھاکہ وزیر اعلٰی بلوچستان سے ملاقات میں ہم نے مطالبہ کیاکہ شہید وکلاء کے خاندانوں کوایک ایک کروڑروپے معاوضہ دیاجائے ،جوانہوں نے تسلیم کرلیاہے تاہم زخمیوں کے بارے میں فیصلہ کیاگیاہے کہ علاج کی سہولت فراہم کرنے کے بعد ہر متاثر ہ وکیل کی حالت کے پیش نظر اس کی مددکی جائے گی،ان کاکہناتھاکہ ہمارا مطالبہ ہے کہ سپریم کورٹ میں دہشتگردی سے متعلق زیر التوا تمام مقدمات کاجلد فیصلہ کیاجائے جس جس ملزم کاٹرائل شروع ہوچکاہے ان کے مقدمات کے فیصلے فوری کرنے چاہئں، انہوں نے کہاکہ بلوچستان میں وکلاء اورججوں کو اس لئے نشانہ بنایاگیا کیونکہ وہ آسان ٹارگٹ ہوتے ہیں ایسی کارروائی کامقصد پورے معاشرے کو خوف وہراس میں مبتلا کرناہوتاہے ، تاہم یہ بات سراسربے بنیاد ہے کہ قانون نافذکرنیوالیہمارے ادارے ناکام ہوگئے ہیں،ادارے

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/08/2016 - 19:03:46 :وقت اشاعت