سانحہ کوئٹہ حکومت اور وزارت داخلہ کی مکمل ناکامی ہے،سیدخورشیدشاہ
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:50:14 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:49:07 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:49:07 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:49:07 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:44:55 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:44:55 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:41:45 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:41:45 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:31:09 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:31:09 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 18:31:09
پچھلی خبریں - مزید خبریں

کوئٹہ

سانحہ کوئٹہ حکومت اور وزارت داخلہ کی مکمل ناکامی ہے،سیدخورشیدشاہ

وزارت داخلہ نے تنازع کھڑا کیا،ہمارا موقف عوام تک نہیں آنے دیا گیا، سانحے پر حکومت کے ساتھ ہیں، جب تک انسان زندہ ہے وہ سیاست کرتے رہیں گے ، انسانی جانوں کے ضیاع کا ازالہ نہیں ہوسکتا، آج یہ حکومت ہے کل کوئی اور آئے گی،پاکستان ہمارا ملک ہے ،اﷲ اسے قائم و دائم رکھے،اپوزیشن لیڈر , حکومت کا رویہ درست نہیں، ہم خوفزدہ ہیں کہ اسٹیٹ کمزور نہ ہو، حکومت کو انا پرستی سے ہٹنا چاہیے،ایکشن پلان پر مکمل عمل ہوتا تو ایسے سانحات رونمانہ ہوتے، اعتزاز حسن کی میڈیا سے بات چیت

کوئٹہ ( اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 اگست ۔2016ء ) قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈرسید خورشید شاہ نے کہا ہے کہ سانحہ کوئٹہ حکومت اور وزارت داخلہ کی مکمل ناکامی ہے۔ وزارت داخلہ کو چاہیے کہ وہ ان واقعات کے بعد سوچے کہ ان کا سدباب کیسے ہوسکتاہے ۔ آیا اس ناکامی پر وزارت داخلہ شرمسار ہے بھی یا نہیں اور اس شرمساری کا وہ کس طرح ازالہ کرسکتی ہے۔ قائد حزب اختلاف نے کہا کہ اپوزیشن جماعتوں نے سانحہ کوئٹہ کے بعدحکومت کو تعاون کا یقین دلایا ہے اور ہم نے وزیراعظم کی تقریر کی تائید و حمایت کی ۔

انہوں نے یہ بات جمعرات کے روز کوئٹہ میں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہی ۔ اس موقع پر سینٹ میں پیپلز پارٹی کے قائد حزب اختلاف اعتزاز حسن ، ڈاکٹرنفسیہ شاہ، سینیٹر روبینہ خالد اور سندھ کابینہ کے دو وزراء ناصر شاہ اور ممتاز جھکرانی اور پیپلز پارٹی بلوچستان سابقہ صدر صادق عمرانی بھی موجود تھے ۔ سید خورشید شاہ نے کہاکہ سانحہ کوئٹہ یقینا ہماری سیکورٹی ایجنسیوں کی ناکامی نظر آتی ہے، پارلیمنٹ میں بھی اس پر بات ہوئی۔

پارلیمنٹرین صرف بحث کرسکتے ہیں اور تجاوز دے سکتے ہیں۔ ہم نے کل بھی قومی اسمبلی میں کہا کہ نیشنل ایکشن پلان بالکل ناکام ہوگیا ہے۔ حکومت اور خاص طور پر وزارت داخلہ اگر اس وقت صحیح معنوں میں پورے جذبے کے ساتھ اس پلان پر کام کرتی تو یہ نہیں ہوتا۔ نیشنل ایکشن پلان ہم سب نے ملکر بنایا ہے اور تمام جماعتیں اس پر متفق ہیں۔ یقین سے کہتا ہوں کہ اگر ایکشن پلان پر مکمل عمل ہوتا تو ایسے سانحات آئندہ رونمانہیں ہوں گے۔

خورشید شاہ نے کہا کہ ہم نے حکومت کے سامنے یہ تمام باتیں رکھیں لیکن بد قسمتی سے اس پر عملدرآمد نہیں ہوا۔ ، انہوں نے بہتر نکات اٹھائے مگر متعلقہ وزارت جو وزارت داخلہ ہے نے تنازع کھڑا کیا۔ وزیر داخلہ کی تقریر سرکاری ٹی وی پر براہ راست نشر ہوئی جبکہ اپوزیشن کی تقاریر کو نہیں دکھایا گیا۔ ہمارا موقف عوام تک نہیں آنے دیا گیا۔ہم اس سانحے پر حکومت کے ساتھ ہے کیونکہ سیاست ہوتی رہتی ے۔

جب تک انسان زندہ ہے وہ سیاست کرتے رہیں گے مگر انسانی جانوں کے ضیاع کا ازالہ نہیں ہوسکتا۔ آج یہ حکومت ہے کل کوئی اور آئے گی اورحکومتیں آتی رہیں گی پاکستان ہمارا ملک ہے اﷲ کریں قائم و دائم رہیں۔ مگر ان سارے معاملات پر حکومت کا جو رویہ ہے وہ درست نہیں۔ حکومت کمزور ہوجائے اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ مگر ہم خوفزدہ ہے کہ اسٹیٹ کمزور نہ ہو کیونکہ جب اسٹیٹ کمزور ہو تو ادارے کمزور ہوجاتے ہیں اور ادارے کمزور ہو تو اس کا نقصان عوام کو ہوتا ہے۔

حکومت کو اس پر سوچنا چاہیے اور انا پرستی سے ہٹنا چاہیے۔ یہ کہتے ہیں کہ ہم چھ چھ گھنٹے طویل اجلاس کررہے ہیں یہ تو بندر والی مثال ہوگئی۔ بندر کو شیر نے ایک دن کیلئے جنگل کا بادشاہ بنایا تو بکری بندر کے پاس شکایات لے کر آئی کہ بھیڑیا اس کا بچہ لے کر گیا۔ بندر نے ادھر ادھر چھلانگیں لگانا شروع کردیں۔ جب بکری نے پوچھا کہ یہ کیا کررہے ہیں تو بندر نے کہا کہ آپ نہیں دیکھ رہی کہ میں کوشش کررہا ہوں۔

یہی مثال وزارت داخلہ کی ہے۔ یہ لوگ کہتے ہیں کہ ہم طویل اجلاس ہیں ہم بہت کچھ کررہے ہیں اور پھر بھی کوئی نتیجہ سامنے نہیں آرہا۔خورشید شاہ نے کہا کہ کوئٹہ سانحہ وزارت داخلہ کی اس لیے بھی ناکامی ہے کہ وزیر داخلہ نے اتنے بڑے معاملے پر پہلے روز کوئی بیان دیا اورنہ ٹی وی پر آئے۔ یہاں کے متاثرہ لوگوں کو ترجیح ہی نہیں دی۔ وزیراعظم آیا ، وزیراعلیٰ آئے سب آئے مگر انہوں نے یہاں آنے کی زحمت تک نہیں کی۔

وہ کہتے ہیں یہ ہوتا رہے اور لوگ مرتے رہیں۔ اس سے ان کی غیر سنجیدگی کا اندازہ لگایا جاسکتے ہیں۔ہم اگر کوئٹہ آئے ہیں اور یہاں دعا کی ہے تو کیا ہم ہماری دعاؤں سے شہید زندہ ہوجائیں گے۔یہاں آنے کا مقصد صرف یہ ہے کہ متاثرین کے دکھ میں شریک ہوجں۔ وزیر داخلہ کوئٹہ نہیں آتا تو اس کا مطلب ہے کہ دال میں کچھ کالا ہے۔ وہ خوفزدہ ہیں اور سمجھ رہے ہیں کہ لوگ طعنے دیں گے اور نعرے لگائیں گے۔

ان کو آنا چاہیے اور لوگوں کے غم میں شریک ہونا چاہیے۔ وزیراعظم کو سوچنا ہے کیونکہ اس کے تانے بانے ان تک جاتے ہیں۔ لوگ سوال پوچھتے ہیں اور آج بھی کافی لوگوں نے سوال اٹھایا ہے کہ وزیر داخلہ کا رویہ کیسا ہے۔ انہوں نے کل جو رویہ اختیار کیا ہے اس کے پیچھے کیا نواز شریف نہیں۔ یہ نواز شریف کے ساتھ ملی بھگت ہے۔وزیراعظم نے وزیر داخلہ سے کہا ہے کہ تم سخت بولو میں پیار سے مناتا رہون گا۔

اس رویے سے وزیراعظم سے متعلق شکوک و شبہات جنم لے رہے ہیں۔ ہم نے پہلے بھی کئی دفعہ کہاہے کہ وزیراعظم کو آستین کے سانپ ڈس رہے ہیں جس کا انہیں احساس ہی نہیں۔ یہ زہر میاں صاحب کے جسم کے اندر پھیل رہا ہے اور کسی دن بہت بڑا نقصان ہوگا۔ ایک سوال پر پیپلز پارٹی رہنماء نے کہاکہ سندھ حکومت نے سانحہ کوئٹہ کے زخمیوں کے علاج و معالجے کیلئے اقدامات کئے ہیں۔

وزیراعلیٰ سندھ نے فراخدلی کا مظاہرہ کیا ہے۔سینیٹ میں قائد حزب اختلاف سینیٹر بیرسٹر اعتزاز احسن نے کہا نیشنل ایکشن پلان سب جماعتوں نے ہم خیال ہوکر بنایا تھا۔ اس کے بیس نکات تھے جس پر عملدرآمد ہونا تھا۔ نیکٹا کو فعال ہونا تھااور بہت سے معاملات تھے۔چھبیس مختلف انٹیلی جنس ایجنسیوں کے درمیان مربوط رابطہ قائم کرنا تھا۔ ٹریننگ کیمپس کو ختم کرنا تھا۔

تمام صوبوں اور ایجنسیوں کے درمیان رابطے قائم کرنے کی ذمہ داری کس وزارت کی تھی۔ کس وزارت کی ذمہ داری تھی کہ تمام ایجنسیوں کی کارکردگی بہتر بنائے۔ وزارت داخلہ اپنی یہ ذمہ داریاں پوری کرنے میں ناکام ہوئی ہے۔ اعتزاز احسن نے کہا کہ تین دن قبل بھی کوئٹہ میں دھماکا ہوا اور آج پھر دھماکا ہوا۔ تمام ایجنسیوں کی نظریں اور توجہ کوئٹہ اور بلوچستان پر ہونی چاہیے اس کے باوجود مزیددھماکے ہورہے ہیں اس کا مطلب یہ ہے کہ نیشنل ایکشن پلان پر کوئی عملدرآمد نہیں ہوا۔

ہم یہ بہت عرصے سے کہہ رہے ہیں کہ ایکشن پلان پر عملدرآمد نہیں ہورہا جس کی جتنی مذمت کی جائے وہ کم ہے۔ سینیٹر اعتزاز احسن نے کہا کہ۔سندھ حکومت کی جانب سے بھی ہم تعاون کی مثال دیکھی ہے۔ کوئٹہ دھماکے کے جو زخمی آغا خان اسپتال کراچی منتقل کئے جارہے ہیں ان کے تمام اخراجات کا ذمہ سندھ حکومت نے اپنے سر لیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ کوئٹہ آنے کا مقصد اپنے ساتھی وکلاء سے مشاورت اور ان کے ساتھ سوگ میں شریک ہونا ہے۔

بلوچستان کے سینئر وکلاء علی احمد کرد، ہادی شکیل ، امان اﷲ کنرانی ایاز ظہور اور دیگر وکلاء سے ہم ملے ہیں۔ ہمارا مقصد متاثرین کی مدد کرنا ہے۔ ہم نے یہاں تجاویز دی ہے کہ ہم متاثرین کی کیا مدد کرسکتے ہیں۔ ہم نے زخمی اور معذ ور وکلاء کے علاج اور شہید وکلاء کے بچوں کی کفالت، تعلیم اور صحت کے لئے ایک ٹرسٹ بنانے کی بھی تجویز دی ہے۔ اس ٹرسٹ کو رجسٹرڈ کرکے اکاؤنٹ بنایا جائے۔ حکومتیں بھی اس میں حصہ ڈالیں اور وکلاء بھی کوشش کرینگے کہ زیادہ سے زیادہ مالی مدد کریں تاکہ شہداء کے کم عمر یتیم بچون کی تعلیم کا بندوبست مستقل بنیادوں پر ہوسکے۔ اس موقع پر پیپلز پارٹی کے سابقہ صوبائی صدر میر صادق عمرانی بھی موجود تھے ۔

11/08/2016 - 18:44:55 :وقت اشاعت