حالیہ انتخابات میں کشمیر کی غیور عوام نے ثابت کیا کہ الیکشن کھوکھلے نعروں اور ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 11/08/2016 - 15:29:08 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 15:27:31 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 15:26:12 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 15:14:11 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 15:09:15 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:55:44 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:54:18 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:54:16 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:54:16 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:47:43 وقت اشاعت: 11/08/2016 - 14:37:14
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

حالیہ انتخابات میں کشمیر کی غیور عوام نے ثابت کیا کہ الیکشن کھوکھلے نعروں اور دوسروں پر کیچڑ اچھال کر نہیں جیتے جا سکتے،وہ وقت گزر گیا جب عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکا جا سکتا تھا، آج کی عوام باشعور ہے اور اپنے ووٹ کا استعمال کرنا بخوبی جانتی ہے،جھوٹے دعوؤں اور عملی خدمت میں تفریق کر سکتی ہے

وزیر مملکت برائے صحت سائرہ افضل تارڑ کاکوٹلی میں پرائم منسٹر ہیلتھ انشورنس پروگرام کے افتتاح کے موقع پر خطاب

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔11 اگست ۔2016ء)وزیر مملکت برائے نیشنل ہیلتھ سروسز ، ریگولیشنر اینڈ کوآرڈنیشن سائرہ افضل تارڑ نے کہا ہے کہ حالیہ انتخابات میں کشمیر کی غیور عوام نے ثابت کیا کہ الیکشن کھوکھلے نعروں اور دوسروں پر کیچڑ اچھال کر نہیں جیتے جا سکتے۔ وہ وقت گزر گیا جب عوام کی آنکھوں میں دھول جھونکا جا سکتا تھا۔ آج کی عوام باشعور ہے اور اپنے ووٹ کا استعمال کرنا بخوبی جانتی ہے۔

جھوٹے دعوؤں اور عملی خدمت میں تفریق کر سکتی ہے۔ یہ بات انہوں نے کوٹلی میں پرائم منسٹر ہیلتھ انشورنس پروگرام کے افتتاح کے موقع پر کہی۔ سائرہ افضل تارڑ نے کہا ہے کہ ہم نے وعدہ کیا تھا کہ آزاد جموں و کشمیر کی عوام کی فلاح و بہبود کے لیے کام کرنا ہماری اولین ترجیحات ہونگی۔ یہی وجہ ہے کہ مظفر آباد کے بعد آج ہم پرائم منسٹر ہیلتھ انشورنس پروگرام کے اجراء کے لیے کوٹلی کا انتخاب کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ اس پروگرام کے ذریعے کوٹلی کے 79004 خاندانوں کو یہ سہولت میسر ہو گی۔ یہ پروگرام عام بیماریوں کے داخلی علاج بشمول بچوں کی بیماریاں ، زچگی ، سرجیکل اور دیگر بیماریوں کو کور (Cover) کرے گا جن کی لاگت 50,000روپے فی خاندان سالانہ ہو گی۔ اس پروگرام کے تحت داخلی امراض کے علاج جن میں بائی پاس، انجیو پلاسٹی، جل جانے والے افراد، کینسر اور ذیابیطس کے مریضوں کے لیے انسولین شامل ہے ان افراد کیلئے 250,000روپے فی خاندان سالانہ خرچ کئے جائیں گے۔

ان جملہ بیماریوں کیلئے فنڈ وفاقی حکومت ادا کرے گی۔وزیر قومی صحت نے کہا کہ پرائم منسٹر نیشنل ہیلتھ پروگرام کا بنیادی مقصد کم آمدنی والے عوام کو صحت کی معیاری سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنانا ہے اور ان کو مذید غربت کے اندھیروں میں جانے سے بچانا ہے جس کی وجہ علاج معالجہ پر آنے والے اخراجات ہیں۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی حکومت نے اپنے منشور میں کئے گئے ایک اور وعدے کو حقیقت کا روپ دے دیا ہے اور یہ یقینا غریب اور نادار مریضوں کے لیے ایک خوشی کا لمحہ ہے۔

اس کے تحت غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والے گھرانوں کو علاج کی سہولت فراہم کی جائے گی جس سے وہ جان لیوا اور خطرناک بیماریوں کا علاج بغیر کسی معاوضے کے کرا سکیں گے۔ غربت کی لکیر سے نیچے زندگی گزارنے والے گھرانوں سے مراد ایسے گھرانے ہیں جن کی یومیہ آمدن دوسو پاکستانی روپے سے بھی کم ہے۔

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

11/08/2016 - 14:55:44 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان