پیپلز پارٹی کے دور میں صرف525 ، موجود دور میں دو لاکھ 39ہزار سے زائدغیر قانونی شناختی ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:34:53 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:34:53 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:33:06 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:33:06 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:33:06 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:31:57 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:31:57 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:21:25 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:11:37 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:11:37 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:11:37
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

پیپلز پارٹی کے دور میں صرف525 ، موجود دور میں دو لاکھ 39ہزار سے زائدغیر قانونی شناختی کارڈز بلاک کئے گئے ، تصدیقی مہم میں صرف سوا ماہ کے اندر 3 کروڑ شناختی کارٖڈز کی تصدیق کر لی گئی ہے،یہ کل تعداد کا ایک چوتھائی ہے ، شناختی کارڈ کی تصدیقی مہم کی نگرانی کے لئے پارلیمانی کمیٹی بنائی جائے ،نادرا ہر مہینے کمیٹی کو پیش رفت بارے بریفنگ دینے کے لئے تیار ہے ، ملا منصور کی سفری دستاویز 2005میں تیار ہوئی ،2011میں پیپلز پارٹی دور میں تجدید کرائی گئی،کہ ایف بی آر نے آف شور کمپنیوں کے حوالے سے 440 پاکستانی شہریوں کی نشاندہی کی ، ان کے بارے میں تحقیقات جاری ہیں

قومی اسمبلی میں وفاقی و زراء چوہدری نثار،احسن اقبال ‘ پارلیمانی سیکرٹریز رانا افضل ا ور مریم اورنگزیب کے سوالوں کے جوابات

اسلام آباد(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔10 اگست ۔2016ء )قومی اسمبلی میں وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے آگاہ کیا ہے کہ پیپلز پارٹی کے دور میں صرف525غیر قانونی شناختی کارڈز بلاک کئے گئے جبکہ ہمارے دور میں تین سال کے اندر دو لاکھ 39ہزار سے زائد مشکوک کارڈز بلاک کئے گئے ، شناختی کارڈز کی تصدیقی مہم میں صرف سوا ماہ کے اندر تین کروڑ شناختی کارٖڈز کی تصدیق کر لی گئی ہے جو کل تعداد کا ایک چوتھائی ہے ، شناختی کارڈ کی تصدیقی مہم کی نگرانی کے لئے پارلیمانی کمیٹی بنائی جائے نادرا ہر مہینے کمیٹی کو پیش رفت بارے بریفنگ دینے کے لئے تیار ہے ، ملا منصورکو شناختی کارڈ اور پاسپورٹ ہمارے دور میں نہیں ملا، اس کی سفری دستاویز 2005میں تیار ہوئی اور2011میں پیپلز پارٹی کے دور میں اس کی تجدید کرائی گئی، قومی اسمبلی کو یہ بھی بتایاگیا کہ ایف بی آر نے آف شور کمپنیوں کے حوالے سے 440 پاکستانی شہریوں کی نشاندہی کی ہے جن کے بارے میں تحقیقات جاری ہیں ۔

بدھ کو اسمبلی کے وقفہ سوالات میں وزیرداخلہ چوہدری نثار علی خان ، وفاقی وزیر منصوبہ بندی وترقی احسن اقبال ،پارلیمانی سیکرٹری رانا محمد افضل اور پارلیمانی سیکرٹری برائے داخلہ مریم اونگزیب نے ارکان کے سوالات کے جواب دیئے۔ شیخ صلاح الدین کے سوال کے جواب میں وزیر ترقی منصوبہ بندی احسن اقبال نے کہا کہ سندھ میں واٹر سپلائی پروگرام کے لئے گزشتہ سال 1ارب اور اس سال 2.7بلین فراہم کیا گیا ہے ۔

50فیصد فنڈز صوبائی حکومت نے فراہم کرنے ہیں ، وفاق اپنے فنڈز سندھ حکومت کے حوالے کر چکے ہیں ، حکومت ندھ نے اس منصوبے پر ایف ڈبلیو او کو ٹھیکہ دیا ہے ۔ مراد علی شاہ کے وزیراعلیٰ بننے پر امید ہے کہ منصوبے پر کام جلد شروع ہو جائے گا۔ بیلم حسنین کے سوال کے جواب میں پارلیمانی سیکرٹری خزانہ رانا محمد افضل نے کہا کہ بی آئی ایس پی پروگرام کا بوائلٹ پروگرام کے طور 16اضلاع میں سروے شروع ہو چکا ہے ، اگلے سال مارچ تک پورے پاکستان میں نیا سروے مکمل کر دیا جائے گا۔

1لاکھ25ہزار مشکوک لوگوں کو پروگرام سے نکال دیا گیا ہے ، بجٹ پر قائم کمیٹیوں سے تجاویز لی جاتی ہیں جن میں قابل عمل تجاویز کو بجٹ دستاویزات کا حصہ بنادیا جاتا ہے ۔ ساجدہ بیگم کے سوال کے جواب میں رانا محمد افضل نے کہا کہ مردم شماری 2016مارچ میں کرانے کے لئے تیار تھے لیکن فوجی جوانوں کی نفری نہ ملنے پر ملتوی ہوا ۔دو لاکھ فوجیوں کی ضرورت ہوگی ۔

فنڈز مختص کر دیئے گئے ۔ فوج دستیاب ہونے پر رائے شماری کرائی جائے گی ۔ اگلے سال کے شروع میں مردم شماری کرالی جائے گی ملک میں ضرب عضب کی وجہ سے آرمی فی الحال دستیاب نہیں ہے ۔ بھارت میں مردم شماری 60سال کیلئیفریزکردیا گیا ہے لیکن ہم اگلے سال ضرور کرائیں گے ۔ ساجدہ بیگم کے سوال کے جواب میں پارلیمانی سیکرٹری داخلہ مریم اورنگزیب نے کہا کہ شناختی کارڈز بلالک کرنے کے حوالے سے وزیر داخلہ نے ایک پالیسی بنائی ہے ۔

ماضی میں ایسی کوئی پالیسی نہ تھی۔ نادرا میں تصدیق کے لئے ایک بورڈ بنایاگیا ہے ، ایجنسیوں کو بھی مشکوک کارڈز تصدیق کے لئے بجھوایا جاتا ہے ۔ گزشتہ تین سال

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

10/08/2016 - 21:31:57 :وقت اشاعت