تین سالوں میں 2 لاکھ 37 ہزار شناختی کارڈ بلاک کئے گئے‘ 29 ہزار غیر ملکیوں کے جعلی ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:06:10 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 21:05:00 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:57:28 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:55:28 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:55:28 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:50:14 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:46:36 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:46:36 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:45:53 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:44:39 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 20:44:39
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

تین سالوں میں 2 لاکھ 37 ہزار شناختی کارڈ بلاک کئے گئے‘ 29 ہزار غیر ملکیوں کے جعلی پاسپورٹ منسوخ کردیئے گئے ٗ وزیر داخلہ

بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کا دوبارہ سروے کیا جارہا ہے‘ پہلے مرحلے میں نومبر سے 16 اضلاع میں سروے کیا جائیگا ٗ قومی اسمبلی وقفہ سوالات

اسلام آباد (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔10 اگست ۔2016ء) قومی اسمبلی کوبتایاگیا ہے کہ تین سالوں میں 2 لاکھ 37 ہزار شناختی کارڈ بلاک کئے گئے‘ 29 ہزار غیر ملکیوں کے جعلی پاسپورٹ منسوخ کردیئے گئے ٗ بے نظیر انکم سپورٹ پروگرام کا دوبارہ سروے کیا جارہا ہے‘ پہلے مرحلے میں نومبر سے 16 اضلاع میں سروے کیا جائیگا ۔ بدھ کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں وقفہ سوالات کے دوران وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے کہا کہ یہ انتہائی اہم ایشو ہے ٗ جعل سازی دنیا میں ہر جگہ ہے۔

نیشنل ڈیٹا بیس اتھارٹی نے 2013ء سے قبل 525 شناختی کارڈ بلاک کئے ٗہمارے تین سالوں میں دو لاکھ 37 ہزار بلاک ہوئے۔ 29 ہزار پاسپورٹ کینسل ہوئے۔ شناختی کارڈ کی تصدیق سے اب تک ساڑھے تین کروڑ شناختی کارڈ کی تصدیق ہو چکی ہے۔ عوام اور میڈیا نے بھرپور تعاون کیا۔ اپنے پرائے سب نے کہا کہ چھ ماہ میں نہیں ہو سکے گا ہم نے ڈیڑھ ماہ میں بڑی تعداد میں کردیئے ہیں۔

ہزاروں کی تعداد میں فیملی ٹریز میں اجنبی نکلے ہیں۔ ہزاروں غیر ملکی بھی نکلے ہیں۔ یہ پاکستان کے نیشنل ڈیٹا بیس کا ریکارڈ درست کرنا ہے۔ ڈرون حملے میں مارے جانے والے ایک اہم رہنما کا کارڈ پاکستان کا نکلا۔ انہوں نے اس عمل کی نگرانی کے لئے پارلیمانی کمیٹی تشکیل دینے کی تجویز دی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اس حوالے سے سپیکر سے بھی بات کی ہے۔

اس کو تصدیق یا بلاک کئے جانے والے شناختی کارڈ سے آگاہ کیا جائے گا۔ چوہدری نثار نے کہا کہ ہم نے جون 2013ء سے ان ایشوز پر کام شروع کیا ہے۔ اڑھائی سال میں فوکس کیا بہت بہتری آئی ہے۔ ملا منصور کا 2005ء میں پاسپورٹ بنا۔ 2011ء میں اس کو ری نیو کیا گیا۔ اس پاسپورٹ اور شناختی کارڈ پر یہ شخص ایران‘ بحرین‘ متحدہ عرب امارات گیا۔ ایف آئی اے کے دو افسران ملازمت سے گئے۔

تین نادرا اہلکار گرفتار ہوئے۔ پٹواری کے خلاف کارروائی ہوئی تمام ذمہ داران کو پکڑا ہے۔ بلوچستان کی حکومت نے تعاون کیا۔ شناختی کارڈ بلاک کرنے پر تنقید کریں تو ساتھ تجاویز بھی دیں۔ یہ مسلم لیگ (ن) کا ذاتی یا

مکمل خبر پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

10/08/2016 - 20:50:14 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان