مقبوضہ کشمیر میں 33 ویں روز بھی زندگی معمول کی طرف نہ آسکی مقبوضہ وادی کے مختلف ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
بدھ اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:58:17 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:49:20 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:49:20 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:49:20 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:47:58 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:47:57 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:44:38 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:44:37 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:43:30 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:43:30 وقت اشاعت: 10/08/2016 - 14:43:30
پچھلی خبریں - مزید خبریں

مقبوضہ کشمیر میں 33 ویں روز بھی زندگی معمول کی طرف نہ آسکی مقبوضہ وادی کے مختلف شہروں میں کرفیو جاری‘شہداءکی تعداد 70 ہوگئی ‘حریت رہنماوں کی جانب سے دی گئی ہڑتال میں12 اگست تک کی توسیع ‘

کشمیرکامسئلہ نہ تو اقتصادی ہے اور نہ ہی جموں کشمیر کے لوگ کسی اقتصادی پیکج کے لئے تحریک چلا رہے ہیں۔ ہم بھارتی ناجائز فوجی قبوضے کے خلاف جنگ آزادی لڑ رہے ہیں۔سیدعلی گیلانی

سری نگر(اردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین-انٹرنیشنل پریس ایجنسی۔10 اگست۔2016ء) مقبوضہ کشمیر میں 33 ویں روز بھی زندگی معمول کی طرف نہ آسکی مقبوضہ وادی کے مختلف شہروں میں کرفیو نافذ ہے ، شہداءکی تعداد 70 ہوگئی ہے۔ حریت پسند نوجوان برہان وانی کی شہادت کے بعد کشمیر میں آزادی کی لہر ایک نئے ولولے اور عزم کے ساتھ چل نکلی ہے۔کشمیریوں کی آواز دبانے کے لیے کٹھ پتلی حکومت نے کئی روز سے وادی کو چھاو¿نی میں بدل رکھا ہے۔

33 ویں روز بھی وادی میں معمولات زندگی معمول پر نہ آسکے ، آج بھی کرفیو نافذ ہے۔ سری نگر ، اننت ناگ ، شوپیاں ، کلغام ، پلوامہ میں دفعہ 144 نافذ ہے۔ تعلیمی ادارے ، دکانیں ، پبلک ٹرانسپورٹ اور دیگر کاروبار بھی مکمل بند ہے۔ انٹرنیٹ اور موبائل سروس بھی تاحال بحال نہیں کی جاسکی۔ دوسری جانب وادی میں بھارت مخالف مظاہروں کا سلسلہ بھی جاری ہے۔

33 روز میں بھارتی فوج کی فائرنگ سے 70 کشمیری شہید جبکہ 7000 سے زائد زخمی ہوچکے ہیں۔ ادھر حریت رہنماو¿ں کی جانب سے دی گئی ہڑتال میں12 اگست تک کی توسیع کردی گئی ہے۔دوسری جانب کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئر مین سید علی گیلانی نے بھارتی وزیراعظم نریندر مودی بیان پر کہا ہے کہ جموں کشمیرکامسئلہ نہ تو اقتصادی ہے اور نہ ہی جموں کشمیر کے لوگ کسی اقتصادی پیکج کے لئے تحریک چلا رہے ہیں۔

ہم بھارتی ناجائز فوجی قبوضے کے خلاف جنگ آزادی لڑ رہے ہیں۔ انہوں نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ حکومت کی ہمیشہ یہ کوشش رہی ہے کہ وہ جموں کشمیر کے قدرتی ذرائع اور وسائل پر قبضہ کر کے ہمیں دانے دانے کا محتاج بنانا چاہتا ہے ۔ انہوں نے نریندر مودی پر واضح کیا کہ ہماری ریاست کی بہت ساری ریاستوں سے اچھی اقتصادی پوزیشن ہے۔ ہمارے جوانوں کی قربانی اقتصادی خوشحالی کے لئے نہیں بلکہ صرف اور صرف آزادی کے لئے ہے۔

انہوں نے کہا کہ حالیہ دنوں میں آپ کی وحشی فوج کے ہاتھوں کھیلی گئی خون کی ہولی سے 70سے زائد افراد کا قتل، 400سے زائد افراد کو بینائی سے محروم اور 6ہزار سے زائد افراد کے زخمی وہنے پر بات کرنا گوارہ نہیں ہوا جس سے یہ بات عیاں ہوئی ہے کہ بھارت کا وزیراعظم بننے کے باوجود آپ کے اندر ابھی بھی 2002ءکے گجرات کا وحشی چھپا ہوا ہے۔ آپ اور آپ کی فوجوں کو خون کا چسکا لگا

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

10/08/2016 - 14:47:57 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان