روئی کے آفیشل اسپاٹ ریٹس 6 ہزار 800 روپے اور 7 ہزار 288 روپے پر بند
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل اگست

مزید تجارتی خبریں

وقت اشاعت: 09/08/2016 - 22:13:33 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 21:44:07 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:59:53 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:59:52 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:59:50 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:58:33 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:20:08 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:13:10 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 19:13:09 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 18:55:29 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 17:28:11
- مزید خبریں

کراچی

روئی کے آفیشل اسپاٹ ریٹس 6 ہزار 800 روپے اور 7 ہزار 288 روپے پر بند

کراچی(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔9 اگست ۔2016ء)روئی کے آفیشل اسپاٹ ریٹس برائے 37.324 کلو گرام اور 40 کلوگرام کے بھاؤ میں استحکام رہا۔ ایسوسی ایشن سے جاری کردہ اعداد و شمار کے مطابق منگل کو روئی کی نئی فصل 2016-17ء کے آفیشل اسپاٹ ریٹس برائے 37.324 کلو گرام کے نرخ گذشتہ کاروباری روز کے بھاؤ 6 ہزار 800 روپے اور 40 کلوگرام کے ریٹس 7 ہزار 288 روپے پر مستحکم رہے۔

اسی طرح 37.324 کلوگرام کے بھاؤ 135 روپے اندرون ملک اخراجات کے ساتھ 6 ہزار 935 روپے اور 40 کلوگرام کے ریٹس 145 روپے اندرون ملک اخراجات کے ساتھ 7 ہزار 433 روپے پر بند ہوئے۔ ایسوسی ایشن نے مزید بتایا کہ ملک کے مختلف شہروں سے حاصل کردہ تفصیلات کے مطابق ڈومیسٹک ٹرانزیکشن کے تحت روئی کی نئی فصل برائے 2016-17ء کی 7 ہزار 500 گانٹھوں کے سودے 6 ہزار 900 روپے سے 7 ہزار 100 روپے فی من پر بند ہوئے۔

انہوں نے بتایا کہ سانگھڑ کی روئی کی 1 ہزار 200 گانٹھوں کے سودے سب سے کم بھاؤ 6 ہزار 900 روپے سے 6 ہزار 950 روپے فی من پر بند ہوئے جبکہ حیدرآباد کی روئی کی 400 گانٹھوں کے سودے بھی 6 ہزار 950 روپے فی من رہے۔ اسی طرح شہدادپور، ٹنڈوآدم اور کوٹری کی روئی کی بالترتیب 1 ہزار 400 گانٹھوں، 1 ہزار گانٹھوں اور 800 گانٹھوں کے سودے 6 ہزار 950 روپے سے 7 ہزار روپے فی من پر بند ہوئے۔

ایسوسی ایشن نے بتایا کہ خانیوال اور سمندری کی روئی کی بالترتیب 1 ہزار 200 گانٹھوں اور 300 گانٹھوں کے سودے سب سے زیادہ ریٹس 7 ہزار 100 روپے فی من رہے جبکہ علی پور اور حاصل پور کی روئی کی فی کس 200 گانٹھوں کے سودے 7 ہزار 90 روپے فی من پر بند ہوئے اور چیچہ وطنی کی روئی کی 400 گانٹھوں کے سودے 7 ہزار 50 روپے سے 7 ہزار 75 روپے فی من پر بند ہوئے۔

09/08/2016 - 19:59:50 :وقت اشاعت