بچپن میں انگوٹھا چوسنے اور ناخن چبانے والے افراد الرجی کا کم شکار ہوتے ہیں،ماہرین ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
منگل اگست

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:32:57 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:32:57 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:32:56 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:31:54 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:31:54 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:10:24 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:03:37 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:02:50 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:02:50 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:02:50 وقت اشاعت: 09/08/2016 - 13:02:12
پچھلی خبریں - مزید خبریں

بچپن میں انگوٹھا چوسنے اور ناخن چبانے والے افراد الرجی کا کم شکار ہوتے ہیں،ماہرین صحت

اسلام آباد ۔ 9 اگست (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔09 اگست۔2016ء) نیوزی لینڈ کے ماہرین صحت کا کہناہے کہ بچپن میں انگوٹھا چوسنے اور ناخن چبانے والے افراد الرجی کا کم شکار ہوتے ہیں۔ امریکی تحقیقی جریدے پیڈِیاٹرِکس کے شمارے میں نیوزی لینڈ کی اوگوٹا یونیورسٹی کے ماہرین کی ریسرچ کے حوالے سے کہا گیاہے کہ جن بچوں کو انگوٹھا چوسنے یا ناخن چبانے جیسی عادات کا واسطہ بہت چھوٹی عمر میں ہوتا ہے ان کو جسم سے باہر پائے جانے والے حیاتیاتی جرثوموں سے ابتدائی زندگی میں ہی واسطہ پڑجاتا ہے اور وہ وقت کے ساتھ ساتھ اپنے اندر ایسا مدافعتی نظام تیار کرنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں جو الرجی کی مختلف صورتوں کے خلاف دفاع کا کام کرتا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ جن بچوں کو اوائل عمری میں مائیکروبیئل جرثوموں یعنی عمومی بیکٹیریا یا وائرس کا سامنا نہ رہا ہو، ان میں الرجی کے خلاف جسمانی مدافعت کم ہوتی ہے،

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

09/08/2016 - 13:10:24 :وقت اشاعت