پاکستان اور امریکہ کی پارلیمانوں کے مابین وسیع تعلقات علا قائی چیلنجز کو حل کرنے ..
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر اگست

مزید اہم خبریں

وقت اشاعت: 09/08/2016 - 00:14:26 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:56:06 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:56:06 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:55:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:55:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:55:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:45:49 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:44:54 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:44:54 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:44:54 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 22:43:39
پچھلی خبریں - مزید خبریں

اسلام آباد

پاکستان اور امریکہ کی پارلیمانوں کے مابین وسیع تعلقات علا قائی چیلنجز کو حل کرنے میں کلیدی کردار اد ا کر سکتے ہیں

سپیکر قومی اسمبلی سر دار ایاز صادق کی امریکی کانگریس کے رکن کرسپ سٹیوارٹ سے گفتگو

اسلام آباد ۔ 8 اگست (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔8 اگست ۔2016ء) سپیکر قومی اسمبلی سر دار ایاز صادق نے کہا ہے کہ پاکستان اور امریکہ کی پارلیمانوں کے مابین وسیع بنیادوں پر تعلقات علا قائی چیلنجز کو حل کرنے میں کلیدی کردار اد ا کر سکتے ہیں، دونوں ممالک کے مابین دیرینہ دوستانہ تعلقات موجود ہیں جو باہمی اعتماد اور دوستی کی بنیادوں پر استوار ہیں۔

انہوں نے ان خیالات کا اظہار امریکی کانگریس کے رکن کرسپ سٹیوارٹ سے گفتگو کرتے ہوئے کیا جہنوں نے پیر کو پارلیمنٹ ہاؤس میں ان سے ملا قات کی۔ اس موقع پر پاکستان میں تعینات امریکی سفیر ڈیوڈ ہیل بھی موجود تھے۔ سپیکر نے پاک۔امریکہ تعلقات کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ امریکہ نے ابتدا ہی سے پاکستان کی سماجی، معاشی اور افرادی قوت کی تر قی میں شر اکت دار کا کردار ادا کیا ہے۔

انہوں نے 9/11 کے بعد رونما ہونے والی صورت حال کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دونوں ممالک کے مابین تعلقات صر ف سٹرٹیجک مفادات تک ہی محدود نہیں بلکہ دونوں ممالک میں سائنس، اقتصادیات، تعلیم، زراعت انسانی حقوق گڈ گورننس کے شعبوں اور جمہوریت کے استحکام کیلئے وسیع تعاون موجود ہے۔ سر دار ایاز صادق نے کہا کہ دہشت گردی اور انتہا پسندی کا تعلق براہ راست تصفیہ طلب تنازعات سے ہے بین الا قوامی برادری کو ان تنازعات ،جارحیت اور حق خود ارادیت کے انکار جیسے مسائل کے حل پر فوری توجہ دینے کی ضر ورت ہے ۔

انہوں نے دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی کاوشوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستانی عوام کی طر ف سے دی جانے والی قربانیاں رائیگاں نہیں جائیں گی ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کی سیاسی اور فوجی قیادت ملک سے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے پر عزم ہے۔انہوں نے خطے سے دہشت گردی کے خاتمہ کیلئے باہمی تعاون میں اضافے کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے کہا کہ دہشت گردی اور انتہا پسندی عالمی امن اور خوشحالی کیلئے ایک مسلسل خطرہ ہیں جس کے خاتمہ کیلئے مشترکہ کوششوں کی ضرورت ہے تاہم دہشت گردی کو کسی مذہب ثقافت اور معاشر ے سے منسوب نہیں کرنا چاہئے۔ سپیکر نے امریکی رکن کانگریس کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم کا نوٹس لینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق کشمیری عوام کے حق خودارادیت کی حمایت کرتا ہے اور مذاکرات کے ذریعے اس مسئلے کا حل چاہتا ہے۔

سر دار ایاز صادق نے پاکستان میں جمہوریت کے استحکام اور قانون سازی کے شعبہ میں استعداد کا رکے اضافہ کیلئے امریکی تعاون کو سراہا۔ انہوں نے کہا کہ پارلیمانی رابطوں میں اضافہ دونوں اقوام کو قریب لانے میں اہم کردار ادا کرسکتا ہے انہوں نے باہمی ہم آہنگی میں اضافہ کیلئے عوامی سطح پر رابطوں کو بڑھانے کی ضر ورت پر بھی زور دیا ۔ امر یکن کانگر یس کے رکنMr. Christ Stewart نے دونوں ممالک کی پارلیمانوں کے مابین تعلقات کو وسعت دینے کی خواہش کو سراہتے ہوئے سپیکر کو یقین دلایا کہ امریکن کا نگریس پاکستان کی پارلیمان کے ساتھ تعلقات کو فروغ دینے اور عوامی رابطوں میں اضافے کے لیے پر عزم ہے۔

انہوں نے کہا کہ امریکہ جنوبی ایشیا ء میں انسانی وسائل کی تر قی کے لیے پاکستان کو اپنا شر اکت دار سمجھتا ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی قربانیوں کی قدر کرتا ہے ۔انہوں نے دونو ں ممالک کے مفادات کے تحفظ کے لیے باہمی تعاون کو فروغ دینے کی ضرورت پر زور دیا۔

08/08/2016 - 22:55:02 :وقت اشاعت