کوئٹہ، خطے میں امن کے بغیر کوئی ترقیاتی کام ممکن نہیں، ایم پی اے آغا رضاء
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر اگست

مزید قومی خبریں

وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:30:33 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:28:58 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:28:58 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:27:17 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:27:17 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:25:05 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:08:27 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:08:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:08:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:08:02 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 19:07:04
پچھلی خبریں - مزید خبریں

ننکانہ صاحب

ننکانہ صاحب شہر میں شائع کردہ مزید خبریں

وقت اشاعت: 21/02/2017 - 16:52:08 وقت اشاعت: 21/02/2017 - 19:45:50 وقت اشاعت: 21/02/2017 - 20:21:32 وقت اشاعت: 18/02/2017 - 18:31:49 وقت اشاعت: 18/02/2017 - 18:41:58 وقت اشاعت: 18/02/2017 - 19:26:09 ننکانہ صاحب کی مزید خبریں

کوئٹہ، خطے میں امن کے بغیر کوئی ترقیاتی کام ممکن نہیں، ایم پی اے آغا رضاء

کوئٹہ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔8 اگست ۔2016ء ) گزشتہ دنوں بلوچستان بار ایسوسیشن کے سابق صدر ایڈوکیٹ بلال انور کاسی پر حملے کے بعد انہیں سول ہسپتال منتقل کر دیا گیااور اس کے بعد سول ہسپتال کو دہشتگردوں نے کاروائی کا نشانہ بنایا۔ سول ہسپتال میں خود کش حملے سے 60 سے زیادہ افراد اپنی جان کی بازی ہار گئے اور معتدد افراد دہشتگردانہ کاروائی کے شکار ہوکر زخمی ہوئے۔

اس افسوسناک واقع میں مختلف میڈیا گروپس سے تعلق رکھنے والے صحافی حضرات بھی متاثر ہوئے اور انکے نمائندے اپنے فرائض سرانجام دیتے ہوئے جہان فانی سے رخصت ہوگئے اور بعض افراد زخمی ہوئے اس واقعے میں وکلاء کے صدر باز محمد کاکڑ، اے این پی کے رہنماء کے بھائی عسکر خان اچکزئی، جہانزیب جمالدینی کے فرزند سنگت جمالدینی ، داود خان کاسی، عدنان خان کاسی، بشیر زہری اور غلام حیدر میرزئی سمیت دیگر اہم شخصیات شہید ہوئے۔

مجلس وحدت مسلمین کوئٹہ ڈویژن کے سیکریٹریٹ سے جاری شدہ بیان میں ترجمان محمد ہادی جعفری نے ان حملوں کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ دہشتگرد ہماری بنیادوں کو کمزور کرنے میں مصروف ہیں۔ کوئٹہ میں یہ دہشتگردی کا پہلا واقعہ نہیں ہے اس سے پہلے بھی ایسے واقعات ہوئے ہیں مگر افسوس کی بات ہے کہ دہشتگرد ابھی تک گرفتار نہیں ہوئے انکے خلاف کاروائی نہیں ہوئی اور وہ مسلسل پاکستانی شہریوں کو نشانہ بنانے اور مزید منصوبہ بندی میں مصروف ہیں۔

ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی رہنماء اورممبر صوبائی اسمبلی آغا رضا نے اس واقعہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے ملک کے گلیوں کو دہشتگردوں نے خون سے رنگین کر دیا ، دہشتگردوں نے نہ بچوں کو بخشا اور نہ عورتیں ان کے شر سے محفوظ رہی۔ دہشتگردوں نے ملک کے مختلف کونوں میں پاکستانیوں پر ظلم کیا ، انکے ساتھ نرمی کی کوئی گنجائش نہیں ہونی چاہئے۔

انکا کہنا تھا کہ جو افراد کھلے عام دوسروں کو مارنے کی باتیں کرتے ہیں اور اپنے ہم خیالوں کو اس کام پر ابھارتے اور اکساتے ہیں ان کے خلاف انتظامیہ کوئی اقدام کیوں نہیں اٹھاتی۔ایک کے بعد ایک دہشتگردی کے واقعات رونماء ہو رہے ہیں اور انتظامیہ ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھے نظر آرہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ خطے میں امن کے بغیر کوئی ترقیاتی کام ممکن نہیں، جو پروفیشنلز ملک کیلئے کام کرتے ہیں انہیں نشانہ بنایا جاتا ہے اور ایسے ہی واقعات میں ملک کو ہزاروں ایسے افراد سے محروم کیا گیا ہے جو ملک کی ترقی میں اپنا کردار ادا کر رہے ہیں اور ملک کو خوشحال بنانے کی کوششوں میں مصروف تھے۔

آج پھر وہی بات آتی ہے کہ اگر دہشتگردوں کے خلاف کاروائی نہیں کی گئی ، قاتلوں اور انکے الہ کاروں کو گرفتار نہیں کیا گیا تو آئندہ پھر قوم کو نقصان کا سامنا کرنا ہوگا۔بیان کے آخر میں شہداء کے بلند درجان کی دعا کی گئی اور تمام متاثرین کو صبر سے کام لینے کی تلقین کی گئی۔

08/08/2016 - 19:25:05 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان