شام میں بشار الاسد نے مشہور عثمانی سلطان کا "فاتح" کا لقب ختم کر ڈالا
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
پیر اگست

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 08/08/2016 - 15:16:36 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 15:16:36 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 15:16:36 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 15:15:54 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 15:15:54 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 14:43:39 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 14:43:39 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 14:38:49 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 14:38:49 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 14:22:59 وقت اشاعت: 08/08/2016 - 13:32:50
پچھلی خبریں - مزید خبریں

شام میں بشار الاسد نے مشہور عثمانی سلطان کا "فاتح" کا لقب ختم کر ڈالا

دمشق(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔08 اگست ۔2016ء)شام میں بشار الاسد کی وزارت تعلیم نے سکول کے طلبہ کے لیے تاریخ کی کتابوں میں بعض اصطلاحات میں بنیادی نوعیت کی تبدیلی کی ہے جس میں خاص طور پر عثمانی دور کو ہدف بنایا گیا ہے۔تعلیم سال 2016-2017 کے لیے تاریخ کی کتاب کے نئے ایڈیشن میں سلطنت عثمانیہ کے سلطان " محمد فاتح" کے نام سے "فاتح" کی صفت کو حذف کر دیا گیا ۔

اس طرح کتاب میں ان کا نام صرف " محمد ثانی" رہ گیا ہے۔آٹھویں جماعت کی تاریخ کی کتاب میں ایک عبارت اس طرح سے تھی "ہم قسطنطنیہ کی فتح کو واضح کریں گے"۔ یہ عبارت تبدیلی کے بعد یوں ہو گئی ہے "ہم قسطنطنیہ پر قبضے کی اہمیت کو واضح کریں گے"۔ اس کے علاوہ "قسطنطنیہ کی فتح" کو بدل کر "قسطنطنیہ کا سقوط" یا "قسطنطنیہ میں داخل ہونے" سے تبدیل کر دیا گیا ہے۔

تاریخ کی کتابوں میں سلطنت عثمانیہ کے لیے استعمال ہونے والے "فتح" کے لفظ کو ہر جگہ سیاق کے برخلاف "داخل ہونے" یا "قبضے" کے الفاظ سے بدل دیا گیا ہے۔ اس طرح یہ صیغہ "عثمانی فتح" سے تبدیل ہو کر "عثمانی داخلے" یا "عثمانی قبضے" سے تبدیل ہو گیا ہے۔ یہ تمام تبدیلیاں بشار الاسد کی وزارت تعلیم کی

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

08/08/2016 - 14:43:39 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان