جرمن حکومت کاجنسی زیادتی کے قانون کومزید سخت کرنے کا اعلان
بند کریں
تازہ ترین ایڈ یشن کے لیے ابھی کلک کریں
جمعرات مارچ

مزید بین الاقوامی خبریں

وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:25:36 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:12:59 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:12:59 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 22:11:46 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:56:57 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:54:42 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:54:41 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:11:22 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 20:11:22 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 19:59:11 وقت اشاعت: 17/03/2016 - 19:59:11
- مزید خبریں

جرمن حکومت کاجنسی زیادتی کے قانون کومزید سخت کرنے کا اعلان

نئے قانون کے تحت کوئی بھی مرد اپنی پارٹنر کسی خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی کا مرتکب ہوا وہ بھی مجرم کہلائیگا

برلن(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔17 مارچ۔2016ء)جرمن حکومت جنسی زیادتی سے متعلق قانون کو مزید سخت بنانے پر متفق ہو گئی ہے۔ چانسلر میرکل کی کابینہ کی طرف سے منظوری کے بعد اس مجوزہ قانون کو حتمی منظوری کے لیے جرمن پارلیمان میں پیش کیا جائے گا۔جرمن میڈیا کے مطابق جرمن چانسلر میرکل کی کابینہ نے ’ریپ لا‘ کو مزید سخت بنانے پر اتفاق کر لیا ہے۔

تجویز دی گئی ہے کہ اب ایسے کیسوں کا بھی احاطہ کیا جائے، جن میں زیادتی کا شکار بننے والی خواتین بے شک جسمانی طور پر کسی وجہ سے مزاحمت نہ کر پائی ہوں لیکن یہ عمل ان کی رضا مندی کے بغیر ہوا ہو سال نو کے موقع پر جرمن شہر کولون میں خواتین کو جنسی طور پر ہراساں کیے جانے کے بعد جرمن حکومت پر دباؤ بڑھ گیا تھا کہ وہ اس حوالے سے ٹھوس اقدامات کرے۔

وفاقی جرمن وزیر انصاف ہائیکو ماس نے مجوزہ قانون کو

اس خبر کی تفصیل پڑھنے کیلئے یہاں پر کلک کیجئے

17/03/2016 - 22:11:46 :وقت اشاعت

:متعلقہ عنوان